کابل کے بازار میں آگ لگنے سے کروڑوں کا نقصان

آخری وقت اشاعت:  اتوار 23 دسمبر 2012 ,‭ 03:54 GMT 08:54 PST

افغانستان کے دارالحکومت کابل کے مرکزی بازار میں لگنے والی آگ سے خدشہ ہے کے کروڑوں ڈالر کا سازوسامان جل کر راکھ ہو گیا ہے۔

اسی بازار کے ساتھ موجود کابل کی مرکزی کرنسی اور صرافہ مارکیٹ کو بھی جلدی میں تاجروں کو خالی کرنا پڑا جنہیں بڑی مقدار میں کرنسی نوٹ اور سونا اٹھائے بھاگتے ہوئے دیکھا گیا۔

اب تک کسی بھی ہلاکت کی اطلاع نہیں ہے مگر خدشہ ظاہر کیا جا رہا ہے کہ اس آگ سے کروڑوں کا سامان اور جائداد تباہ ہو گئی ہے۔

کابل پولیس کے سربراہ جنرل ایوب سلانگی نے بتایا کہ حفاظت پر مامور چوکیدار غائب ہو گیا ہے اور پولیس اس کو ڈھونڈ رہی ہے۔

BBC © 2014 بی بی سی دیگر سائٹوں پر شائع شدہ مواد کی ذمہ دار نہیں ہے

اس صفحہ کو بہتیرن طور پر دیکھنے کے لیے ایک نئے، اپ ٹو ڈیٹ براؤزر کا استعمال کیجیے جس میں سی ایس ایس یعنی سٹائل شیٹس کی سہولت موجود ہو۔ ویسے تو آپ اس صحفہ کو اپنے پرانے براؤزر میں بھی دیکھ سکتے ہیں مگر آپ گرافِکس کا پورا لطف نہیں اٹھا پائیں گے۔ اگر ممکن ہو تو، برائے مہربانی اپنے براؤزر کو اپ گریڈ کرنے یا سی ایس ایس استعمال کرنے کے بارے میں غور کریں۔