دنیا کی ’وزنی ترین خاتون‘ کی انڈیا میں سرجری ہوگی

آتی تصویر کے کاپی رائٹ COURTESY: DR MUFFAZAL LAKDAWALA
Image caption ایمان احمد العبدآتی کے خاندان کا کہنا ہے وہ 25 سال سے گھر سے باہر نہیں نکلیں

ایک مصری خاتون جلد ہی وزن کم کرنے کے لیے سرجری کے لیے انڈیا جائیں گی۔ ان کا وزن 500 کلوگرام ہے اور خیال ہے کہ وہ دنیا کی وزنی ترین خاتون ہیں۔

36 سالہ ایمان احمد العبدالآتی چارٹرڈ طیارے کے ذریعے ممبئی پہنچیں گی جہاں سرجن ڈاکٹر مضفل لکڑاوالا ان کا آپریشن کریں گے۔

ابتدائی طور پر قاہرہ میں انڈین سفارتخانے نے ان کے ویزے کی درخواست مسترد کر دی تھی کیونکہ وہ خود سفر کرنے کے قابل نہیں تھیں۔

سرجن کی جانب سے ٹوئٹر پر پیغام جاری کرنے کے بعد انڈیا کی وزیرخارجہ کی جانب سے فیصلہ تبدیل کر دیا گیا۔

انڈیا کے خارجہ امور کی وزیر سشما سوراج نے جلد ہی جواب دیتے ہوئے مدد کی پیشکش کی۔ خیال رہے کہ وہ آج کل خود بھی ہسپتال میں گردے کی پیوندکاری کے لیے زیرعلاج ہیں۔

ایمان احمد العبدآتی کے خاندان کا کہنا ہے وہ 25 سال سے گھر سے باہر نہیں نکلیں اور ان کا دعویٰ ہے کہ ان کا وزن 500 کلوگرام ہے۔

اگر ان کے وزن کے بارے میں دعویٰ درست ہے تو وہ دنیا کی وزنی ترین خاتون ہوں گی۔ سب سے زیادہ وزنی خاتون کا موجودہ گیئنس ورلڈ ریکارڈ امریکی خاتون پولین پوٹر کے پاس ہے جس کا وزن 292 کلوگرام ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ COURTESY: DR MUFFAZAL LAKDAWALA
Image caption عبدالآتی کی خاندان کا کہنا ہے کہ پیدائش کے وقت ان کا وزن پانچ کلوگرام تھا

ڈاکٹر لکڑاوالا اس سے قبل وزن کم کرنے کے لیے انڈین وزرا نتن گدکاری اور وینکائیا کے آپریشنز کر چکے ہیں۔ انھوں نے بی بی سی کو بتایا کہ عبدالآتی کی میڈیکل رپورٹس اور تصاویر دیکھ کر ان کے خیال میں ان کا وزن کم از کم 450 کلوگرام ہے۔

عبدالآتی کی خاندان کا کہنا ہے کہ پیدائش کے وقت ان کا وزن پانچ کلوگرام تھا ہے اور ان میں ایلیفنٹیاسس کی تشخیص ہوئی تھی، اس بیماری میں بازو اور جسم کے دوسرے حصے انفیکشن کی وجہ سے سوج جاتے ہیں۔

ڈاکٹر لکڑوالا کے مطابق ان کے خاندان کے بتایا کہ جب وہ 11 سال کی تھیں تو ان کا اتنا زیادہ وزن تھا کہ وہ کھڑی نہیں ہوسکتی تھیں اور رینگ کر چلتی تھیں۔

'اور اس کے بعد ان فالج کا حملہ ہوا جس کے بعد وہ بستر پر پڑی رہیں اور تب سے گھر سے باہر نہیں نکلیں۔'

عبدالآتی کی دیکھ بھال ان کی والدہ اور بہن کرتی ہیں۔

متعلقہ عنوانات