فیس بک کی سینسرشپ سے متعلق ’عجیب‘ پالیسی

فیس بک تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images

برطانوی اخبار گارڈیئن کا کہنا ہے کہ افشا ہونے والی دستاویزات سے ظاہر ہوتا ہے کہ فیس بک اپنے صارفین کے دیکھے گئے مواد کو کیسے سینسر کرتا ہے۔

دستاویزات سے ظاہر ہوتا ہے کہ اس کا پوسٹس کے بارے میں کوئی فیصلہ کرنے کا طریقہ کار یہ ہے کہ کیا وہ بہت زیادہ پرتشدد، جنسی، نسل پرستانہ، نفرت انگیز یا دہشت گردی کے حمایت کرنے والی ہیں۔

گارڈیئن کا کہنا ہے کہ فیس بک کے ماڈریٹرز یا منتظمین بہت زیادہ ’مغلوب رہتے‘ ہیں اور ان کے پاس کسی پوسٹ کو ہذف کرنے یا نہ کرنے کا فیصلہ کرنے لیے چند سیکنڈز کا وقت ہوتا ہے۔

یہ انکشافات ایسے وقت میں سامنے آئے ہیں جب برطانوی ارکان پارلیمان کا کہنا تھا سوشل میڈیا کی بڑی کمپنیاں زہریلے مواد سے نبردآزما ہونے میں ’ناکام ہورہی ہیں۔‘

اخبار کا کہنا ہے کہ ان کے ہاتھ فیس بک کے ماڈریٹرز کی تربیت کے لیے استعمال ہونے والے ایک سو سے زائد کتابچے لگے ہیں جن کے مطابق کیا کچھ ویب سائٹ پر پوسٹ کیا جا سکتا اور کیا نہیں۔

فیس بک نے تسلیم کیا ہے کہ اخبار نے جن دستاویزات کا ذکر کیا ہے وہ اندرونی طور پر اسی قسم کے دستاویزات استعمال کرتے ہیں۔

ان کتابچوں میں مختلف نوعیت کے حساس موضوعات شامل ہیں جن میں نفرت انگیز مواد، بدلے کے لیے پورن، خود کو نقصان پہنچانا، خودکشی، انسانی گوشت خوری اور تشدد کی دھمکیاں شامل ہیں۔

اخبار کو انٹرویو دینے والے فیس بک ماڈریٹرز کا کہنا تھا کہ مواد کے بارے میں فیس بک کی پالیسیاں ’غیرموافق‘ اور ’عجیب‘ ہیں۔

ان کا کہنا تھا کہ جنس سے متعلق مواد کے بارے میں فیصلہ کرنا کہ رہنے دینا چاہیے یا ہذف کر دینا چاہیے سب سے زیادہ ’پیچیدہ‘ عمل ہے۔

ڈیجیٹل حقوق کے لیے کام کرنے والی تنظیم اوپن رائٹس گروپ کا کہنا ہے کہ اس رپورٹ سے ظاہر ہوتا ہے کہ فیس بک کا اپنے دو ارب سے زائد صارفین پر کس قدر اثر و رسوخ قائم ہوسکتا ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ Reuters

اوپن رائٹس گروپ کی جانب سے جاری کردہ بیان میں کہا گیا ہے کہ ’فیس بک کی جانب سے یہ فیصلے کہ کیا ہونا چاہیے اور کیا ناقابل قبول ہے، اس کا آزادی اظہار رائے پر بہت زیادہ اثر ہوسکتا ہے۔ لیکس سے ظاہر ہوتا ہے کہ یہ فیصلے پیچیدہ اور مشکل ہیں۔‘

تنظیم کا مزید کہنا تھا کہ ’فیس بک شاید اس کو کبھی درست نہ کر سکے لیکن کم از کم انھیں اس عمل کو مزید شفاف بنانا چاہیے۔‘

قتل کی لائیو ویڈیو پر فیس بک کی پریشانی

جرمنی میں فیس بک پر جھوٹی خبروں کی نشاندہی ممکن

فیس بک خودکشی کا سوچنے والوں کی نشاندہی کرے گا

فیس بک کی گلوبل پالیسی مینجمنٹ کی سربراہ مونیکا بکرٹ کا کہنا ہے کہ ’ہم فیس بک کو کس حد تک ممکن ہے محفوظ بنانے کے لیے سخت محنت کر رہے ہیں جبکہ آزادی رائے بھی قائم رہے۔ اس کے لیے بہت زیادہ سوچ اور اکثر مشکل سوالات کا سامنا ہوتا ہے۔ اور اسے درست رکھنا ایک ایسا کام ہے جس پر ہم بہت زیادہ توجہ دیتے ہیں۔‘

متعلقہ عنوانات

اسی بارے میں