انڈیا کی خلائی شعبے میں بڑھتی سرمایہ کاری کی چار وجوہات

تصویر کے کاپی رائٹ Reuters

انڈیا کا ایک تاریخی دن تھا جب اس کے خلائی ادارے اسرو نے مقامی طور پر تیار کردہ 640 ٹن کے سب سے طاقتور راکٹ کی مدد سے انڈیا کا سب سے بھاری مواصلاتی مصنوعی سیارہ خلا میں بھیجا۔

اس راکٹ کی لمبائی 140 فٹ ہے اور وزن تقریباً 200 ہاتھیوں جتنا یعنی 640 میٹرک ٹن ہے جبکہ خلا میں بھیجے جانے والے مواصلاتی مصنوعی سیارے کا وزن بھی 3136 کلو گرام ہے۔

٭ دو سو ہاتھیوں جتنے وزنی انڈین راکٹ کا کامیاب تجربہ

خلائی ادارے اسرو نے راکٹ کی تیاری میں مقامی سطح پر تیار کردہ ٹیکنالوجی کا استعمال کیا اور اس راکٹ کو خلا میں بھیجنے کی دہائیوں سے منصوبہ بندی کی جا رہی تھی۔

انڈیا پر اکثر خلائی منصوبوں پر بھاری رقم خرچ کرنے پر تنقید کی جاتی ہے کیونکہ اس کی ایک تہائی آبادی غربت کی لکیر سے نیچے زندگی بسر کر رہی ہے۔

تو انڈیا کی خلائی پروگرام میں اتنی دلچسپی کیوں ہے؟ بی بی سی تمل سروس کے شیوراما کرشنن پرامیسواران نے ان سوالات کے جواب جاننے کی کوشش کی ہے۔

خلائی پروگرام سستا ہے

تصویر کے کاپی رائٹ AFP

انڈیا کا موقف ہے کہ اس کے حالیہ خلائی مشن پر بین الاقوامی معیار کے مطابق زیادہ خرچ نہیں آیا ہے اور اس منصوبے پر صرف پچاس لاکھ ڈالر خرچ ہوئے جبکہ اس راکٹ کی متوقع عمر 10 برس ہے جبکہ آئندہ ہر برس اس کی آپریشنل لاگت مزید کم ہو جائے گی اور اس وجہ سے انڈیا کی خلائی صعنت کا دعویٰ ہے کہ وہ بہت کم خرچ ہے۔

انڈیا تسلسل سے سائنسی تحقیق کے بجٹ میں اضافہ کر رہا ہے جس میں خاص کر خلائی تحقیق شامل ہے۔

حقیقت میں کسی حد تک یہ اس تنقید کا جواب ہے جس میں کہا جاتا ہے کہ یہ ضرورت کے مطابق سائنس کے شعبے میں سرمایہ کاری نہیں کی جا رہی ہے۔

تیزی سے فروغ پاتی صعنت

امریکہ، فرانس اور روس کے پاس اس وقت منصوعی سیاروں کو خلا میں بھیجنے کے چھ ارب ڈالر کے کاروبار کا 75 فیصد حصہ ہے اور یہ کاروبار تیزی سے منافع بخش بنتا جا رہا ہے جبکہ انڈیا امید کر رہا ہے اس میں ایک بڑا حصہ حاصل کرے۔

خلائی معیشت میں ایک کلوگرام وزن سے لے کر سینکڑوں کلوگرام ورزن کے مصنوعی سیاروں کو خلا میں بھیجنا شامل ہے۔

سٹیلائٹ انڈسٹری ایسویسی ایشن کے مطابق اربوں ڈالر کی اس صعنت میں اس وقت انڈیا کا شیئر صفر اشارہ پانچ فیصد ہے جبکہ چین کا حصہ تین فیصد ہے۔

ماضی میں انڈیا خلائی راکٹ کے شعبے میں مجبوریوں کی وجہ سے مصنوعی سیاروں کو خلا میں بھیجنے کا کاروبار حاصل نہیں کر سکا اور اس کا اپنا زیادہ تر انحصار فرانس کے ذریعے مصنوعی سیاروں کو خلا میں بھیجنے پر تھا لیکن اب یہ ماضی بن چکا ہے۔

مارکیٹ کو تبدیل کرنا

زیادہ تر موسمیاتی اور مواصلاتی مصنوعی سیاروں کا ورزن تقریباً چار ٹن کے قریب ہوتا ہے اور انھیں خلا میں بھیجنے کے لیے ایک بڑے طاقتور راکٹ کی ضرورت ہوتی ہے۔

انڈیا نے اپنے حالیہ لانچ کے ذریعے بین الاقوامی برادری کو ایک بااثر پیغام بھیجاہے کہ ایک کم قیمت متبادل موجود ہے۔

انڈیا کی جانب سے کچھ عرصہ پہلے ایک ساتھ مختلف سائز کے 104 مصنوعی سیاروں کو خلا میں بھیجنے سے اس کی ساکھ میں اضافہ ہوا ہے۔

سٹیلائٹ کی عالمی مارکیٹ کی مجموعی مالیت ایک سو بیس ارب ڈالر ہے جس میں مصنوعی سیاروں کی تیاری، ان کو خلا میں بھیجنا اور ان کے درمیان مواصلاتی رابطوں کو قائم کرنا شامل ہے جبکہ حالیہ برسوں میں رابطوں کے نظام کی مانگ میں اضافے کی وجہ سے یہ کارباری تیزی سے ترقی کر رہا ہے۔

ماہرین کا کہنا ہے کہ کم قیمت کی وجہ سے انڈیا مصنوعی سیاروں کو خلا میں بھیجنے کی انڈسٹری کا مرکز بن سکتا ہے۔

دوسروں کی حوصلہ افزائی کرنا

تصویر کے کاپی رائٹ Reuters

ناقدین کا کہنا ہے کہ انڈیا سائنس میں ترقی پر بھاری سرمایہ خرچ کر رہا ہے جبکہ ملک میں سماجی ترقی کے شعبے میں ضرورت کے مطابق سرمایہ کاری نہیں کی جا رہی۔

انڈیا میں اس وقت لاکھوں افراد کو پینے کا صاف پانی دستیاب نہیں ہے، بجلی کی کمی کا سامنا ہے، ٹوائلٹ کی سہولیات کا فقدان ہے اور اس کے علاوہ ریل اور سڑک کے ذریعے رابطوں کی کمی ہے لیکن حکومتوں کا کہنا ہے کہ سائنس اور ترقی پر خرچ کرنا سماجی ترقی کے تمام شعبوں میں ترقی کا راستہ ہے۔

انڈیا میں حالیہ راکٹ لانچ میں اسے امید ہے کہ ترقی پذیز ممالک کی حوصلہ افزائی ہو گی کہ وہ مغربی ممالک کی بجائے اس کی صلاحیتوں کو استعمال کریں اور تنقید سے بلاتر انڈیا اس شعبے میں مزید سرمایہ لگا رہا ہے۔ بجٹ میں اضافہ کیا گیا ہے اور اب اس کا منصوبہ سارہ زہرہ پر مشن بھیجنے کا ہے۔

متعلقہ عنوانات

اسی بارے میں