’سائبر حملے کا توڑ صرف ایک فائل‘

سائبر حملہ تصویر کے کاپی رائٹ Thinkstock

کمپیوٹر اور انٹرنیٹ کی سکیورٹی کے ماہرین نے اس بڑے سائبر حملے کا توڑ دریافت کرنے کا دعویٰ کیا ہے جس نے منگل کو دنیا بھر میں اداروں کو متاثر کیا تھا۔

ماہرین کا کہنا ہے کہ یہ توڑ ایک فائل ہے جو وائرس کو کسی مشین کو متاثر کرنے سے روک سکتی ہے۔

دنیا بھر کی کمپنیاں ایک بار پھر سائبر حملے کی زد میں

وانا کرائی وائرس کے پیچھے ’ممکنہ طور پر شمالی کوریا‘

کیا آپ کا کمپیوٹر خطرے میں ہے؟

تاہم ماہرین ابھی تک وہ 'کِل سوئچ' تلاش کرنے میں ناکام رہے ہیں جو اس رینسم ویئر کے پھیلاؤ کو مکمل طور پر روک سکے۔

وہ تاحال یہ بھی نہیں جان سکے ہیں کہ یہ سائبر حملہ کہاں سے شروع ہوا اور اس کا اصل مقصد کیا ہے۔

سائبر حملہ کرنے والوں نے لاک کی گئی مشینیں کھولنے کے لیے فی مشین 300 ڈالر کی رقم طلب کی ہے جس سے یہ خیال بھی گردش کر رہا ہے کہ یہ حملہ کسی بڑی کارروائی کا پیش خیمہ ہے۔

اس سائبر حملے کے متاثرین میں یوکرین کا مرکزی بینک، انڈیا کا جواہر لعل نہرو ہوائی اڈہ، روسی کمپنی راسنیفٹ اور برطانوی اشتہاری کمپنی ڈبلیو پی پی سمیت کئی بڑے ادارے بھی شامل ہیں۔

اب ماہرین نے کہا ہے کہ اس حملے کو صرف ایک فائل تشکیل دے کر روکا جا سکتا ہے تاہم یہ رکاوٹ صرف اسی مشین تک محدود ہو گی جس پر یہ فائل بنائی جائے گی۔

تصویر کے کاپی رائٹ SCREENSHOT

ماہرین کے مطابق اگر کمپیوٹر کے ونڈوز فولڈر میں 'perfc' کے نام سے ایک 'ریڈ اونلی' فائل بنا کر رکھ دی جائے تو اس سے یہ حملہ رک جائے گا۔

یہ خیال انٹرنیٹ سکیورٹی کی ویب سائٹ بلیپنگ کمپیوٹر کی جانب سے پیش کیا گیا ہے اور کئی ماہرین نے اس کی تصدیق کی ہے۔

کمپیوٹر سائنسدان پروفیسر ایلن وڈورڈ کا کہنا ہے کہ اس فائل سے وہ کمپیوٹر اپنی حد تک تو وائرس سے محفوظ رہے گا تاہم اس سے وائرس کے نیٹ ورک پر موجود دیگر کمپیوٹرز تک پھیلاؤ کو روکا نہیں جا سکتا۔

اس نئے رینسم ویئر وائرس کے پھیلاؤ کی شرح گذشتہ ماہ کے 'وانا کرائی' وائرس کے مقابلے میں بہت سست ہے کیونکہ اس کے کوڈ کے تجزیے سے معلوم ہوتا ہے کہ یہ نیا وائرس اس نیٹ ورک سے باہر پھیلاؤ کی صلاحیت نہیں رکھتا جس میں اسے انسٹال کیا گیا ہو۔

اسی وجہ سے ماہرین کا کہنا ہے کہ تاوقتیکہ اسے بہتر بنایا جائے اس کے مزید پھیلاؤ کا خدشہ نہیں ہے۔

متعلقہ عنوانات

اسی بارے میں