دنیا کا سب سے بڑا قدرتی پریشر ککر

ابشرا جزیرہ نما تصویر کے کاپی رائٹ KIT YENG CHAN
Image caption یہ علاقہ وسطی ایشیائی ملک آذربائیجان کے ابشرا جزیرہ نما کا ہے

آج آپ کو لے چلتے ہیں دنیا کے سب سے بڑے پریشر ککر کی سیر پر۔

آپ حیرت زدہ نہ ہوں۔ یہ پریشر ککر کوئی عام پریشر ککر نہیں بلکہ یہ تو قدرتی ہے اور ایک بڑے علاقے میں پھیلا ہوا ہے۔

یہ علاقہ وسطی ایشیائی ملک آذربائیجان کے ابشرا جزیرہ نما کا ہے۔

ابشرا جزیرہ نما، دنیا کی سب سے بڑی جھیل کہی جانے والی بحیرہ کیسپیئن سے لگا ہوا ہے۔ اسی میں آذربائیجان کے دارالحکومت اور وسطی ایشیا کا خوبصورت شہر باکو بھی واقع ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ KIT YENG CHAN
Image caption کسی بھی ریستوراں میں تندور سے تازی تازی پکنے والی روٹیوں کی سوندھی خوشبو آتی رہتی ہے

باکو کے اچیری علاقے میں طرح طرح کے ریستوران ہیں۔ یہاں روز شام کے وقت گھر سے باہر کھانے کا کلچر ہے۔ عام طور پر لوگ بکری کے گوشت کے کباب کے ساتھ نان کھاتے ہیں۔

کسی بھی ریستوران میں تندور سے تازی تازی پکنے والی روٹیوں کی سوندھی خوشبو آتی رہتی ہے۔

لیکن باکو شہر یا ابشرا جزیرہ نما کی یہ کوئی خاص خوبی نہیں ہے۔ اصل بات تو یہ ہے کہ یہاں کے لوگ اس بات سے بے خوف ہیں کہ وہ دنیا کے سب سے بڑے پریشر ککر کہے جانے والے علاقے کے باشندے ہیں۔

یہاں کبھی بھی زمین کے اندر سے چنگاری پھوٹ نکلتی ہے۔ کیچڑ کے آتش فشاں پھٹ جاتے ہیں۔

تصویر کے کاپی رائٹ KIT YENG CHAN
Image caption ابشرا جزیرہ نما میں زمین کے نیچے بڑی تعداد میں قدرتی گیس کے ذخائر ہیں

ابشرا جزیرہ نما میں زمین کے نیچے بڑی تعداد میں قدرتی گیس کے ذخائر ہیں۔ جب میتھین گیس کا دباؤ بڑھ جاتا ہے تو وہ کہیں بھی زمین کی ملائم سطح سے باہر آنے لگتی ہے، تیز رفتار سے گیس یوں زمین سے نکلتی ہے جیسے مٹی کا کوئی آتش فشاں پھٹ گیا ہو۔

آذربائیجان میں 400 سے بھی زیادہ مٹی کے آتش فشاں ہیں۔ دنیا کے کل تقریبا ایک ہزار ایسے آتش فشانوں میں سے سب سے زیادہ یہاںپر پائے جاتے ہیں۔

تصویر کے کاپی رائٹ KIT YENG CHAN
Image caption آج سے 70 برس قبل کسی نے پہاڑی پر سگریٹ پھینک دی تھی۔ اس کے بعد سے لگنے والی آگ یہاں آج تک جل رہی ہے

اس علاقے میں اکثر ایسے دھماکے ہوتے رہتے ہیں۔ یہ عام طور پر تو خطرناک نہیں ہوتے ہیں لیکن کئی بار خوفناک مناظر بھی دیکھنے کو ملتے ہیں۔

سنہ 2001 میں باکو سے 15 کلومیٹر کے فاصلے پر لوکبطن نامی آتش فشاں میں اتنا زبردست دھماکہ ہوا تھا کہ آسمان میں سینکڑوں میٹر بلند چنگاریاں دیکھی گئی تھیں۔ وہاں کی فضا مکمل طور پر کیچڑ اور دھوئیں سے بھر گئی تھی۔ ایک دھماکہ 6 فروری 2017 کو بھی ہوا تھا۔

تصویر کے کاپی رائٹ KIT YENG CHAN
Image caption باکو سے تقریبا 64 کلو میٹر کے فاصلے پر واقع 'گوبستاں راک آرٹ کلچرل لینڈ سکیپ ہے

پورے علاقے کا یہی حال ہے۔ کبھی بھی، کہیں بھی گیس کے نکلنے سے دھماکہ ہوسکتا ہے۔ آگ لگ سکتی ہے۔ لیکن پھر بھی اس علاقے میں ہزاروں سال سے لوگ آباد ہیں۔

باکو سے تقریبا 64 کلو میٹر کے فاصلے پر واقع 'گوبستاں راک آرٹ کلچرل لینڈ سکیپ' اس کی ایک مثال ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ KIT YENG CHAN
Image caption آج سے تقریبا دو ہزار سال پہلے اسی سر زمین پر پارسی مذہب پروان چڑھا تھا

یہ یونیسکو کے عالمی ورثے کی فہرست میں شامل ہے۔ یہاں آپ پتھروں پر کنندہ پینٹنگ بھی دیکھ سکتے ہیں۔ یہ پانچ سے 40 ہزار سال تک کی پرانی ہیں۔

اس سے واضح ہوتا ہے کہ تمام طرح کے خطرات کے باوجود یہاں ہزاروں سال سے انسان آباد ہیں۔

آج سے تقریباًدو ہزار سال پہلے اسی سر زمین پر پارسی مذہب پروان چڑھا تھا۔ پارسی آگ کو خدا کی علامت سمجھتے ہیں۔

تصویر کے کاپی رائٹ KIT YENG CHAN

وہ سمجھتے ہیں کہ آگ سب سے زیادہ مقدس چیز ہے۔ اس علاقے میں اس دور میں بھی خود بہ خود زمین میں آگ لگ جایا کرتی تھی۔ اسی قدرتی عمل نے دنیا کے پہلے توحیدی مذہب کو پھیلنے کی جگہ مہیا کرائی۔

آذربائیجان کو اپنا نام بھی اسی وجہ سے ملا ہے۔ آذر کا مطلب آگ ہوتا ہے۔ یہاں کا مشہور آتش گاه مندر اس بات کی ایک مثال ہے۔

اس دور میں ابشرا جزیرہ نما آگ لگنے اور مٹی کے آتش فشانوں کی اپنی قدرتی خوبیوں کی وجہ سے دنیا بھر میں مشہور ہے۔ دور دور سے سیاح انھیں دیکھنے آتے ہیں۔

آج سے 70 برس قبل کسی نے پہاڑی پر سگریٹ پھینک دی تھی۔ اس کے بعد سے لگنے والی آگ یہاں آج تک جل رہی ہے۔ تقریبا دس مربع میٹر کے دائرے میں یہاں ہمیشہ آگ لگی رہتی ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ KIT YENG CHAN

اپنے قدرتی وسائل کی وجہ سے آذربائیجان تیزی سے ترقی کر رہا ہے۔ قدرتی گیس اور تیل کے ذخائر یہاں پر کافی تعداد میں پائے جاتے ہیں۔ یہاں 1846 سے خام تیل نکالا جا رہا ہے جو کافی خطرناک بھی ہے۔

لیکن مقامی لوگ مانتے ہیں کہ جب تک وہ کیچڑ والے آتش فشاں سے دور آباد ہیں، اس وقت تک انہیں کوئی نقصان نہیں ہو گا۔

تیل اور گیس کی برآمد سے ملنے والی رقم سے آذربائیجان تیزی سے ترقی کر رہا ہے۔ آج باکو شہر قدیم تہذیب اور جدیدیت کے میل کی ایک مثال ہے۔ شہر میں بنے آگ کے ٹاور، جو شعلوں کی طرح نظر آتے ہیں، جدیدیت کی مثال ہیں۔ جبکہ اسی کے آس پاس واقع پرانی عمارتیں آذربائیجان کی قدیم ثقافت اور روایت کی گواہی دیتی ہیں۔

اسی بارے میں