انڈیا کا شہر احمدآباد عالمی ثقافتی ورثے میں شامل

احمدآباد کا قلع بند شہر تصویر کے کاپی رائٹ AMC
Image caption احمدآباد کو سلطان احمد شاہ نے 15ویں صدی میں آباد کیا تھا

اقوام متحدہ کے تعلیمی، سائنسی اور ثقافتی ادارے یونیسکو نے انڈیا کے معروف شہر احمدآباد کو عالمی ثقافتی ورثے کی فہرست میں شامل کر لیا ہے۔

یونیسکو کی کمیٹی نے گذشتہ روز احمد آباد کے علاوہ کمبوڈیا میں سمبور پیری کک کے ٹمپل زون کے علاوہ چین کے کلانگسو کو بھی عالمی ورثے کی فہرست میں شامل کیا ہے۔

خیال رہے کہ احمدآباد انڈیا کا پہلا شہر ہے جسے عالمی ثقافتی ورثے کی فہرست میں شامل کیا گیا ہے۔ اس دوڑ میں ہندوستانی دارالحکومت دہلی اور اقتصادی دارالحکومت کہا جانے والا شہر ممبئی بھی شامل تھا۔

٭ کیا آپ نے ایران میں غاروں والا گاؤں دیکھا ہے؟

٭ ’موئنجودڑو کو دفنانا کیوں ضروری؟

ادارے نے اپنی سائٹ پر اس بارے میں لکھا ہے کہ 'احمدآباد کے قلع بند شہر کو سلطان احمد شاہ نے 15ویں صدی میں دریائے سابرمتی کے کنارے بسایا تھا۔ یہ شہر عہد سلطنت کے زمانے کی فن تعمیر کا اعلیٰ نمونہ پیش کرتا ہے جس میں بھدر کا چھوٹا قلع، قلع بند شہر کی دیواریں اور دروازوں کے ساتھ بہت سی مساجد اور مقبرے اہمیت کے حامل ہیں۔'

اس میں مزید کہا گیا ہے کہ 'اس میں بعد میں تعمیر شدہ ہندو اور جین مذہب کے منادر بھی شامل ہیں۔ یہ شہر چھٹی صدی سے اب تک گجرات کے دارالحکومت کے طور پر آباد ہے۔'

تصویر کے کاپی رائٹ DD
Image caption احمدآباد کی تعمیرات مسلم عہد کی فن تعمیر کا عمدہ نمونہ پیش کرتے ہیں

دارالحکومت دہلی میں نیشنل میوزیم کے نائب کیوریٹر خطیب الرحمان نے بی بی سی کو بتایا کہ احمدآباد کے قلع بند شہر کو یونیسکو کی فہرست میں شامل کیا جانا عہد وسطی کی مسلم تعمیرات کو محفوظ کرنے میں انتہائی اہمیت کا حامل ہوگا۔

انھوں نے یہ بھی بتایا کہ اس کی عدم موجودگی میں دہلی میں عہد وسطی کی بہت ساری عمارتیں ماضی کا حصہ ہو گئیں ہیں اور بہت سی دوسری عمارتیں رفتہ رفتہ ختم ہوتی جا رہی ہیں جو کہ عالمی ثقافت کے ورثے کے طور پر محفوظ کی جا سکتی تھیں۔

ان کے خیال میں دہلی کو بھی عالمی ثقافت کی وراثت میں شامل کیا جانا چاہیے۔ ایک دوسرے شخص نے سوشل میڈیا پر لکھا کہ انڈیا کے جنوبی شہر میسور کو بھی عالمی وارثت میں شامل کیا جا سکتا ہے۔

بی جے پی کے صدر امت شاہ نے ٹویٹ کے ذریعے اس خبر پر اپنی خوشی کا اظہار کیا اور اسے 'ہندوستانیوں کے لیے لمحۂ افتخار قرار دیا۔'

سوشل میڈیا پر اس کے بارے میں باتیں ہو رہی ہیں اور لوگ احمدآباد کی تصویریں پوسٹ کر رہے ہیں اور اس خبر پر ایک دوسرے کو مبارک باد پیش کر رہے ہیں۔

وزیر اعظم نریندر مودی نے اس خبر کو ری ٹویٹ کرتے ہوئے کہا کہ 'یہ انڈیا کے لیے انتہائی خوشی کا مقام ہے۔'

متعلقہ عنوانات

اسی بارے میں