سیلفی لیتے سائبیرین شیر

سائبیرین شیر تصویر کے کاپی رائٹ LAND OF THE LEOPARD NATIONAL PARK
Image caption سائبیرین شیروں کی تعداد ایک وقت کم ہو کر تقریبا دو درجن رہ گئی تھی لیکن اب ان کی تعداد تقریبا 600 بتائی جاتی ہے

روس کے نیشنل پارک نے سائبیرین شیروں کی قربتوں اور بوس و کنار والی تصاویر جاری کی ہیں۔

ان تصاویر میں شیروں کے کنبے اور بچے کھیل کود کرتے اور کیمرے کے لیے پوز کرتے نظر آتے ہیں۔

٭ روس کے ساحل پر برف کے قدرتی گولے

٭ ’برفانی چیتے انسانی انتقام کا نشانہ‘

دو لاکھ 60 ہزار ہیکٹر کی وسیع اراضی پر پھیلے پارک میں تقریباً 22 بالغ سائبیرین شیروں اور ان کے سات بچے ہیں۔

ایک وقت ایسا بھی آیا تھا جب شیروں کی یہ نسل شکار کی وجہ سے ناپید ہونے کے دہانے پر پہنچ گئی تھی لیکن ان کی تعداد میں اب بہتری نظر آ رہی ہے۔

'خاندانی زندگی'

تصویر کے کاپی رائٹ LAND OF THE LEOPARD NATIONAL PARK
Image caption روسی پارک میں تقریبا 22 بالغ شیر اور ان کے سات بچے رہتے ہیں

نیشنل پارک کے مطابق، زمین کی سطح پر لگے آٹومیٹک کیمرے سے یہ تصاویر لی گئی ہیں اور سب سے پہلے اس طرح سے سائبیرین شیروں کے خاندان کی زندگی کو ریکارڈ کیا گیا ہے۔

'دی سائبیرين ٹائمز' کے مطابق، یہ کیمرے شیروں اور ایسے دوسرے ناپید ہونے والے جانوروں کی نگرانی کے لیے لگائے گئے تھے۔

ویڈیو اور تصاویر میں شیروں کے بچوں کو زمین پر لوٹ پوٹ کرتے دیکھا جا سکتا ہے۔

کیمرے میں تاک جھانک

تصویر کے کاپی رائٹ LAND OF THE LEOPARD NATIONAL PARK
Image caption ان تصاویر میں انھیں کھیلتے ہوئے دیکھا جا سکتا ہے

ان بچوں کی ماں کی تصویر پہلے بھی سامنے آ چکی ہے جسے سائنسداں 'ٹی 7 ایف' نام سے جانتے ہیں۔ سنہ 2014 میں اس کی تین بچوں کے ساتھ تصویر سامنے آئی تھی۔ یہ خیال ظاہر کیا جاتا ہے کہ ان میں سے دو اب بڑے ہو گئے ہیں اور سائبیریا سے پڑوسی ملک چین چلے گئے ہیں۔

ایک دوسری تصویر میں شیروں کے بچے کیمرے کی طرف بڑھتے اور پھر اس میں جھانکتے ہوئے نظر آتے ہیں۔ اس کی وجہ سے کیمرے کا میموری کارڈ باہر آ جاتا ہے اور ویڈیو کٹ جاتا ہے۔

یہ نیشنل پارک روس کے پریمورسكی کرائی صوبے کے جنوب مغرب حصے میں پھیلا ہوا ہے۔

سائبیرین ٹائیگر

تصویر کے کاپی رائٹ LAND OF THE LEOPARD NATIONAL PARK
Image caption یہ کیمرے کے اتنے قریب ہیں گویا سیلفی رے رہے ہوں

اسے امر ٹائیگر بھی کہتے ہیں اور اس کا قدرتی علاقہ روس میں ہے۔

وہ ناپید ہوتے جا رہے ہیں اور روس میں ان کے شکار پر مکمل طور پابندی ہے۔ وہاں کم سہولیات اور کم تنخواہ کے مارے رینجرز انھیں شکاریوں سے بچانے کے لیے جدوجہد کر رہے ہیں۔

سنہ 1930 کی دہائی میں جب یہ نسل ختم ہونے کے دہانے پر تھی تو ان کی تعداد گھٹ کر 20 سے 30 کے درمیان ہی رہ گئی تھی۔

آج ایک اندازے کے مطابق، سائبیریا میں تقریباً 600 سائبیرین شیر ہیں۔

ماخذ: ڈبلیوڈبلیو ایف

متعلقہ عنوانات

اسی بارے میں