’یاہو‘ کے شریک بانی کا استعفٰی

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption جیری یینگ کو چیف یاہو کے نام سے جانا جاتا تھا

انٹرنیٹ کمپنی ’یاہو‘ کے شریک بانی جیری یینگ نے کمپنی کے بورڈ کی رکنیت سے مستعفی ہوگئے ہیں۔

یینگ نے سنہ 1995 میں ڈیوڈ فِلو کے ہمراہ یہ آن لائن کمپنی قائم کی تھی اور وہ جون 2007 سے جنوری 2009 تک اس کمپنی کے چیف ایگزیکٹو بھی رہے۔

ان کا استعفیٰ ایسے وقت آیا ہے جب دو ہفتے قبل کمپنی نے پے پال کے ایگزیکٹو سکاٹ تھامسن کو کمپنی کا نیا چیف ایگزیکٹو مقرر کیا ہے۔

یاہو کمپنی کی اس وقت بازارِ حصص میں مالیت بیس ارب ڈالر کے لگ بھگ ہے۔

اپنے بیان میں جیری یینگ کا کہنا تھا کہ ’وقت آ گیا ہے کہ میں یاہو سے باہر دیگر مفادات پر دھیان دوں‘۔ انہوں نے اس بیان میں کمپنی کی موجودہ انتظامیہ کی بھی حمایت کی۔

کچھ تجزیہ کار جیری یننگ کو یاہو کی فروخت یا اس کے کاروبار کی تشکیلِ نو میں رکاوٹ کے طور پر دیکھتے ہیں اور ان کے استعفے کی اطلاعات کے بعد کمپنی کے حصص میں تین فیصد سے زائد کا اضافہ ہوا۔

گبلیو اینڈ کو کے بریٹ ہیرس کا کہنا ہے کہ ’یہ ایک مثبت چیز ہے۔ یہ نئے چیف ایگزیکٹو کے لیے بھی بہتر ہے اور اس کے نظریے سے اختلاف رکھنے والا بورڈ کا ایک رکن اب نہیں رہا‘۔

یاہو کے چیئرمین رائے بوسٹوک نے کہا ہے کہ ’میں اور بورڈ کے تمام اراکین اس فیصلے کا احترام کرتے ہیں۔ ہم اس دانا مشیر کی قابلِ قدر نظرشناسی کو یاد کریں گے‘۔

اسی بارے میں