گوگل کے سرچ نتائج انسانی سوچ کے مطابق

Image caption گوگل چاہتا ہے کہ ان کے نتائج زیادہ با معنی ہوں۔

گوگل کمپنی نے اپنے سرچ انجن سے سوالات کے فوری اور زیادہ مؤثر جوابات دینے کے لیے ایک اور نئی کوشش کی ہے۔

’نالج گراف‘ نامی اس نئے فنکشن کے ذریعے گوگل کی کوشش ہے کہ اس کے سرچ انجن سے ملنے والے نتائج انسانوں کی بات چیت سے قریب تر ہو جائیں گے۔

یہ فنکشن پہلے صرف امریکہ میں صارفین کے لیے متعارف کیا جائے گا اور پھر دنیا بھر میں مہیا ہوگا۔

یہ اقدام حریف سرچ انجن بِنگ کی جانب سے ملتی جلتی کاوش کی جانے کے بعد کیا گیا ہے۔

مائیکروسافٹ کمپنی کے سرچ انجن بِنگ نے گزشتہ ہفتے ’سنیپ شاٹ‘ نامی فنکشن اپنے صارفین کے لیے شروع کیا تھا جو کہ عام لنکس سے ہٹ کر مزید مواد فراہم کرتا ہے۔

گوگل کے انجنیئرنگ کے سینیئر نائب صدر امت سینگال کا کہنا تھا اب تک سرچ انجن صرف الفاظ کے ملنے سے نتائج پیش کرتے تھے مگر اب وہ ان کے مطلب کا بھی خیال کریں گے۔

امت سینگال نے مثال دی کہ الفاظ تاج محل سے مختلف لوگوں کی مختلف مراد ہو سکتی ہے۔

ان الفاظ سے آپ کا مطلب دنیا کا ایک خوبصورت مقبرہ، ایک گریمی ایوارڈ یافتہ موسیقار، اٹلانٹک سٹی میں موجود کیسینو بلکہ یہاں تک کے آپ کا قریبی بھارتی کھانوں والا ریسٹورنٹ میں سے کچھ بھی ہو سکتا ہے۔

گوگل کا کہنا ہے کہ نالج گراف ساڑے تین ارب مختلف خصوصیات کو مدِ نظر رکھ کر نتائج مرتب کرتا ہے جس کا مطلب ہے کہ اب وہ ان مختلف معنوں کو علیحدہ علیحدہ پیش کر سکے گا۔

معروف شخصیات کے بارے میں سوالات آتے ہی گوگل ان کے بارے میں چند چیدہ چیدہ تفصیلات دکھانے لگے گا۔

امت سینگال کا کہنا تھا کہ یہاں سے اگلا قدم ہوگا کہ سرچ انجن زیادہ پیچیدہ سوالات کے جواب دے سکے جیسے کے ’افریقہ کی دس گہری ترین جھیلیں کونسی ہیں؟‘ ایسے سوالات میں سرچ انجن کو مختلف ذرائع سے معلومات لے کر اسے مختلف بنیادوں پر مرتب کرنا ہوگا۔

اس طرز کی سرچ صلاحیت اس وقت صرف ’ولفریم ایلفا‘ نامی ویب سائٹ میں ہے جو کہ تصدیق شدہ ذرائع کی معلومات کو جمع کر کے اعداد و شمار دکھاتی ہے۔

کمپنیوں کی بہت عرصے سے یہی کوشش رہی ہے کہ ان کے سرچ انجن انسانی انداز میں کیے گئے سوالات کا قدرتی انداز میں جواب دے سکیں۔

اسی بارے میں