روشنی اور ذرات پر تحقیق پر نوبیل انعام

آخری وقت اشاعت:  منگل 9 اکتوبر 2012 ,‭ 14:27 GMT 19:27 PST

فرانس کے سرج ہروش اور امریکہ کے ڈیوڈ وائن لینڈ نے مشترکہ طور پر طبیعات کا نوبیل انعام جیت لیا ہے۔

ان سائنسدانوں کو یہ انعام روشنی اور ذرات پر بنیادی تحقیق کرنے پر ملا ہے۔

یہ دونوں سائنسدان بارہ لاکھ امریکی ڈالر کا انعام آپس میں تقسیم کریں گے۔

ان دونوں سائنسدانوں کے کام سے مواصلات اور حساب میں مستقبل میں بہت مدد ملے گی۔

انعام ملنے پر جب سرج ہروش سے رابطہ کیا گیا تو انہوں نے کہا ’مجھے جب بتایا گیا ہے تو میں اس وقت سڑک پر تھا اور قریب ہی ایک بینچ تھا۔ میں فوراً اس وقت بینچ پر بیٹھ گیا۔ میں اپنی اہلیہ کے ساتھ واپس گھر جا رہا تھا جب فون آیا۔ میں نے فون پر سویڈن کا کوڈ دیکھا تو میں سمجھ گیا۔‘

یاد رہے کہ نوبیل انعام سنہ 1901 سے ہر سال دیے جاتے ہیں۔ یہ انعام میڈیسن، طبیعات، کیمیا، لٹریچر، امن اور معیشت کے شعبہ جات میں دیے جاتے ہیں۔

اس سال افواہیں تھیں کہ اس سال ہگز بوسن کی دریافت پر پیٹر ہگز اور ان کے ساتھیوں کو طبیعات کا نوبیل انعام دیا جا سکتا ہے۔

اسی بارے میں

متعلقہ عنوانات

BBC © 2014 بی بی سی دیگر سائٹوں پر شائع شدہ مواد کی ذمہ دار نہیں ہے

اس صفحہ کو بہتیرن طور پر دیکھنے کے لیے ایک نئے، اپ ٹو ڈیٹ براؤزر کا استعمال کیجیے جس میں سی ایس ایس یعنی سٹائل شیٹس کی سہولت موجود ہو۔ ویسے تو آپ اس صحفہ کو اپنے پرانے براؤزر میں بھی دیکھ سکتے ہیں مگر آپ گرافِکس کا پورا لطف نہیں اٹھا پائیں گے۔ اگر ممکن ہو تو، برائے مہربانی اپنے براؤزر کو اپ گریڈ کرنے یا سی ایس ایس استعمال کرنے کے بارے میں غور کریں۔