ناسا کی خلائی دوربین کیپلر میں خرابی

امریکی خلائی ادارے ناسا کے سائنسدانوں کا کہنا ہے کہ خلائی دوربین کیپلر کا ایک پہیہ ٹوٹ جانے کے بعد اب یہ رک رک کر کام کر رہی ہے۔

سائنسدانوں کے مطابق خلائی دوربین کیپلر کے چار میں سے اب دو پہیوں میں خرابی پیدا ہو گئی ہے جبکہ دوربین کو مقررہ سمت میں رکھنے کے لیے کم از کم تین پہیوں کی ضرورت ہوتی ہے۔

منگل کو ناسا کی جانب سے جاری ہونے والے ایک بیان میں کہا گیا ہے کہ کیپلر دوربین میں خرابی کا اس وقت پتہ چلا جب پہلے سے تیار کردہ پروگرام ’سیف موڈ‘یعنی احتیاطی پروگرام میں چلا گیا۔

ناسا کے اعلیٰ اہلکار جان گرنسفیلڈ نے خبر رساں ایجسنی اے ایف پی کو بتایا کہ کیپلر میں ایسا سسٹم موجود ہے کہ اس میں کسی بھی قسم کی خرابی پیدا ہونے سے وہ احتیاطی پروگرام میں چلی جاتی ہے۔

جان گرنسفیلڈ کا کہنا ہے کہ وہ نہیں سمجھتے کہ کیپلر خراب اور ناکارہ ہو گئی ہے اور سائنسدان خرابی دور کرنے کے لیے کام کر رہے ہیں۔

ناسا کا کہنا ہے کہ خلائی دور بین کیپلر نےگزشتہ برس نومبر میں اپنا ساڑھے تین سال کا مشن مکمل کر لیا ہے اور اب اس کے مشن میں توسیع کی جا رہی ہے۔

خیال رہے کہ خلائی دوربین کیپلر کو سنہ 2009 میں لانچ کیا گیا تھا اور اب تک اس نے ہمارے نظام شمسی سے باہر سو سے زائد نئے سیاروں کی موجودگی کا کھوج لگایا ہے۔

گزشتہ ہفتے ماہرین فلکیات نے خلائی دوربین کیپلر کی مدد سے دو ایسے سیارے دریافت کیے جو اب تک دریافت ہونے والے سیاروں میں زمین سے سب سے زیادہ مماثلت رکھتے ہیں۔

اسی بارے میں