ٹوئٹر کے غیر مہذب رویہ کے خلاف قوانین

Image caption ٹوئٹر کا کہنا ہے کہ اس نے اپنے قوانین کی تجدید کی ہے تاکہ یہ واضع ہو کہ بے ہودہ اور غیر مہذبانہ رویہ ٹوئٹر پر برداشت نہیں کیا جائے گا

مائکرو بلاگنگ ویب سائٹ ٹوئٹر نے نئے قوانین جاری کیے ہیں جس کا مقصد غیر مہذب اور توہین آمیز رویے کی حوصلہ شکنی کرنا ہے۔

ٹوئٹر کا کہنا ہے کہ اس نے اپنے قوانین کی تجدید کی ہے تاکہ یہ واضع ہو کہ بے ہودہ اور غیر مہذبانہ رویہ ٹوئٹر پر برداشت نہیں کیا جائے گا۔

ٹوئٹر نے اس طرح کی شکایات سے نمٹنے کے لیے اضافی اہلکاروں کو تعینات کیا ہے تاکہ وہ اس طرح کی شکایات پر کارروائی کر سکیں۔

اس اقدام کی وجہ برطانوی پولیس کی جانب سے آٹھ افراد کے خلاف تحقیقات کا آغاز ہے جن کے خلاف شکایات تھیں کہ انہوں نے ٹوئٹر پر دھمکی آمیز رویہ اختیار کر رکھا ہے۔

سکاٹ لینڈ یارڈ کا کہنا ہے کہ ان کا انٹرنیٹ پر جرائم کے خلاف کارروائی کرنے والا شعبہ لندن سے باہر سے کی جانے والی ان شکایات کی تحقیقات کر رہا ہے۔

تین خواتین صحافیوں کا کہنا ہے کہ انہیں ٹوئٹر پر بم حملوں کی دھمکیاں دی گئیں جبکہ برطانوی دارلعوام کی ایک خاتون ممبر اور ایک مہم پر کام کرنے والی خاتون کو ریپ کی دھمکیاں دی گئیں۔

Image caption ڈیل ہاروی جو ٹوئٹر کے اعتماد اور تحفظ سے متعلق معاملات دیکھتی ہیں نے ٹوئٹر بلاگ پر ان اقدامات کا اعلان کیا

ان انکشافات نے انٹرنیٹ پر ایک شدید رد عمل کا آغاز کیا اور ٹوئٹر پر ایک پٹیشن جاری ہوئی جس میں یہ مطالبہ کیا گیا کہ ’غیر مہذبانہ رویے کی شکایت کا ایک بٹن لگایا جائے‘۔ اس پٹیشن پر ایک لاکھ بیس ہزار افراد نے دستخط کیے۔

ٹوئٹر کے سینئر ڈائریکٹر ڈیل ہاروی اور برطانیہ کہ جنرل مینیجر ٹونی وانگ نے ٹوئٹر کے بلاگ پر شائع کی گئی ایک تحریر میں لکھا کہ کمپنی نے صارفین کی جانب سے رد عمل کے بعد اپنے قوانین کی تجدید کی ہے۔

ڈیل ہاروی جو ٹوئٹر کے اعتماد اور تحفظ سے متعلق معاملات دیکھتی ہیں اور ٹونی وینگ نے لکھا کہ ’بات جہاں ختم ہوتی ہے وہ یہ ہے کہ لوگوں کو ٹوئٹر پر حفاظت کا احساس ہونا چاہیے۔‘

کمپنی نے غیر مہذبانہ رویے اور سپیم کے خلاف اپنی ہدایات کو واضع کیا ہے اور صارفین سے کہا ہے کہ ’وہ غیر مہذبانہ رویے یا ہراس کے معاملات میں بالکل نہ الجھیں۔‘

اگلے مہینے سے ٹویٹ کے اندر ایک ’غیر مہذبانہ رویے کے خلاف شکایت‘ کا بٹن جو اب چند موبائلز پر دستیاب ہے اسے اب ٹوئٹر کی ویب سائٹ اور ایپلیکیشنز پر جاری کیا جائے گا۔

Image caption ٹوئٹر جلد ہی رپورٹ ٹویٹ کا ایک بٹن انٹرنیٹ اور موبائل ایپس پر جاری کرے گا

ہاروی اور وینگ نے اپنے بلاگ میں لکھا کہ ’ہم چاہتے ہیں کہ لوگ ٹوئٹر پر اپنے آپ کو محفوظ سمجھیں اور ہم چاہتے ہیں کہ ٹوئٹر کے قوانین ایسے لوگ جو سمجھتے ہیں کہ ایسا رویہ قابل برداشت ہو گا یا کبھی برداشت کیا جائے گا ایک واضع پیغام دیں۔‘

انہوں نے یہ بھی کہا کہ اضافی اہلکاروں کو ٹوئٹر پر اس نوعیت کی شکایات پر کارروائی کے لیے تعینات کیا گیا ہے۔

ہاروی اور وینگ نے مزید کہا کہ ’ہم یہاں موجود ہیں اور ہم آپ کی آواز سن رہے ہیں۔‘

ٹوئٹر کیا ہے اور اس سے متعلقہ اصطلاحات کا مطلب کیا ہے اس کے بارے میں یہاں پڑھیے۔

اسی بارے میں