سورج کی حیرت انگیز تصویر

تصویر کے کاپی رائٹ v
Image caption نسٹر نامی ایک دوربین نے سورج کی ایک حیرت انگیز تصویر کھینچی ہے

دور دراز کہکشاؤں اور ’بلیک ہولز‘ کا مطالعہ کرنے کے لیے بنائی گئی نسٹر نامی ایک دوربین نے جو تصاویر بھی کھینچ سکتی ہے، سورج کی ایک حیرت انگیز تصویر کھینچی ہے۔

امریکی خلائی ادارے ناسا نے اس دور بین کو سنہ 2012 میں مدار میں چھوڑا تھا اور یہ کائنات کا مشاہدہ ایکسرے شعاؤں سے کرتی ہے۔

یہ پہلا موقع ہے کہ اس نے سورج کی تصویر لی ہو اور اس سے ثابت ہوتا ہے کہ یہ سورج کے بارے میں اعداد و شمار جمع کر سکتی ہے۔

اس کی یہ صلاحیت سورج کے موسم کے بارے میں کچھ دیرینہ پہیلیاں جیسا کہ اس کا بیرونی ماحول اس کی سطح سے کئی گنا زیادہ گرم کیوں ہے، سلجھانے میں مدد کر سکتی ہے۔

ماہرین طبیعیات نے نسٹر کو سورج کا مطالعہ کرنے کے لیے استعمال کرنے کے بارے میں اس وقت سوچا تھا جب یہ زیر تعمیر تھی۔

تصویر کے کاپی رائٹ NASAJPLCATTECHdss
Image caption ماہرین کا خیال ہے کہ یہ سورج کے علاوہ دور دراز موجود کائنات کے دیگر حصوں کا مطالعہ کرنے میں بھی مدد ملے گی

اس دوربین کے مشن پر کام کرنے والی کیلی فورنیا انسٹی ٹیوٹ آف ٹیکنالوجی کی پروفیسر فیونا ہیریسن کا کہنا ہے کہ وہ پہلے اس بات سے متفق نہیں تھیں کہ اتنی حساس اور اعلٰی توانائی والی ایکسرے دوربین کو جسے کائنات کی گہرائیوں کے مشاہدے کے لیے بنایا گیا ہے سورج کے مطالے کے لیے استعمال کیا جائے۔ مگر پھر انہیں شمسی طبیعیات کے ماہر یونیورسٹی آف کیلی فورنیا کے پروفیسر ڈیوڈ سمتھ نے ایسا کر نے پر راضی کیا۔

پروفیسر سمتھ کا کہنا ہے کہ نسٹر ہمیں سورج کے ماحول کو سمجھنے میں مدد دے گی۔

نسٹر کا مشن سنہ 2016 تک جاری رہے گا اور ماہرین کا خیال ہے کہ یہ سورج کے علاوہ دور دراز موجود کائنات کے دیگر حصوں کا مطالعہ کرنے میں بھی مدد فراہم کرے گا۔

اسی بارے میں