چین میں ’ایپل سمارٹ واچ‘ 2500 نہیں 250 یوان میں

تصویر کے کاپی رائٹ apple taobao
Image caption ان گھڑیوں کے بارے میں مزید معلومات پڑھنے سے معلوم چلتا ہے کہ یہ گھڑیاں ایپل کے آپریٹنگ سسٹم پر نہیں بلکہ گوگل کے اینڈروئڈ سسٹم پر چلتی ہیں

چین کی مشہور آن لائن شاپنگ ویب سائٹ پر امریکی کمپنی ایپل کی سمارٹ گھڑیوں سے مشابہت رکھنی والی گھڑیاں فروخت کی جا رہی ہیں۔

علی بابا تابو ویب سائٹ پر ان سمارٹ گھڑیوں کو AW08 اور آئی واچ کہا جا رہا ہے۔

تاہم ان گھڑیوں کے بارے میں مزید معلومات پڑھنے سے معلوم چلتا ہے کہ یہ گھڑیاں ایپل کے آپریٹنگ سسٹم پر نہیں بلکہ گوگل کے اینڈروئڈ سسٹم پر چلتی ہیں۔

دیگر تفصیلات جن سے معلوم چلتا ہے کہ یہ اصل ایپل کی گھڑیاں نہیں ہیں ان میں:

  • ایپل کی سمارٹ گھڑیوں کی چین میں قیمت 2588 یوان ہے جبکہ یہ گھڑیاں آن لائن سائٹ پر 250 یوان میں بک رہی ہیں۔
  • ان گھڑیوں کے پچھلے حصے میں دل کی دھڑکن مانیٹر کرنے کا آلا نہیں ہے۔
  • ان گھڑیوں کی بیٹری ایپل کی گھڑیوں سے کہیں زیادہ چلتی ہیں۔

اس ویب سائٹ پر ایک جگہ لکھا ہے ’ایپل گھڑیوں کی شاندار آفر‘۔

علی بابا تابو ویب سائٹ کا کہنا ہے کہ انھوں نے اپنی ویب سائٹ سے نقلی اشتہارات ہٹا دیے ہیں۔

یاد رہے کہ چند روز قبل ایپل نے اپنی سمارٹ واچ متعارف کروائی تھیں جن کی قیمتیں 349 ڈالر سے لے کر 17 ہزار ڈالر تک ہوں گی۔ اس قیمت کا انحصار گھڑی میں استعمال ہونے والی دھات اور اس کے پٹے پر ہو گا۔

گھڑی دو مختلف سائز میں دستیاب ہو گی، 42 ملی میٹر والے ماڈل کی قیمت 38 ملی میٹر والے ماڈل سے 50 ڈالر زیادہ ہو گی۔

ایپل نے اعلان کیا ہے کہ یہ گھڑیاں 24 اپریل کو فروخت کے لیے پیش کر دی جائیں گی۔

اس وقت بازار میں کئی سمارٹ گھڑیاں موجود ہیں لیکن انھیں صارفین میں کوئی خاص پذیرائی حاصل نہیں ہو سکی۔

سان فرانسسکو میں منعقد ہونے والی ایک تقریب کے دوران گھڑی کی تفصیلات پیش کی گئیں جو زیادہ تر پہلے ہی سے معلوم تھیں۔

ایپل کی ویب سائٹ پر گھڑی کے 38 مختلف ڈیزائن دکھائے گئے ہیں۔ بعض ماہرین کا خیال ہے کہ اس سے ایپل کو گھڑی کی مارکیٹنگ میں مشکلات کا سامنا ہو سکتا ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ APPLE WATCH
Image caption دیکھنا یہ ہے کہ کیا ایپل ایک نئے میدان میں قدم رکھنے کے بعد ایک نیا شعبہ متعارف کروا سکتا ہے یا نہیں

اسی بارے میں