شیروں کو ٹیگ کر کے مانیٹر کرنے والی آئی پیڈ ایپ

ایپ تصویر کے کاپی رائٹ BBC World Service
Image caption ایپ سے شیروں کو مانیٹر کرنے میں مدد ملے گی اور ان کا ڈیٹا رکھا جا سکے گا

ایک نئی آئی پیڈ ایپ صارفین کو کہہ رہی ہے کہ وہ شیروں کو ٹیگ کریں تاکہ ان جانوروں کو گننے اور ان کا پتہ رکھنے والے تحقیق کاروں کی مدد ہو سکے۔

انٹرنیٹ سے لی گئی تصاویر اس ایپ میں ڈالی جاتی ہیں جو کہ ایک انٹرنیٹ گیم کی طرز پر بنائی گئی ہے۔

کھلاڑی جب تصاویر کو ٹیگ کرتے ہیں تو انھیں پوائٹس ملتے ہیں، اس کے علاوہ کھلاڑی شیروں کے ارد گرد کے ماحول اور وہ اس وقت کیا کر رہے ہیں کے متعلق بتا کر پوائنٹس حاصل کر سکتے ہیں۔

اس ایپ کی مدد سے ٹیم چہرے کو پہچاننے والے سافٹ ویئر کی مدد سے ڈیٹا اکٹھا کرتی ہے تاکہ انفرادی طور پر جانوروں کو تلاش کرنے میں مدد ملے۔

اس پروجیکٹ کو ’وائلڈ سینس‘ کہا جا رہا ہے اور یہ یونیورسٹی آف سرے میں کمپیوٹر کے ان سائنس دانوں نے تیار کیا ہے جو وائلڈ لائف کی حفاظت کا جذبہ رکھتے ہیں۔ اور وہ اسے عام لوگوں کے ساتھ بھی شیئر کرنا چاہتے ہیں۔

تصویر کے کاپی رائٹ BBC World Service
Image caption کیا یہ اصلی شیر ہے؟
تصویر کے کاپی رائٹ BBC World Service
Image caption اگر یہ اصلی شیر ہے تو اسے ٹیگ کریں

ان سائنس دانوں نے یہ ایپ انٹرنیٹ کی تصاویر کے خزانے کو آئی پیڈ کے صارفین کی مدد سے جانوروں کی حفاظت کے مفید ڈیٹا میں تبدیل کرنے کے لیے تشکیل دی ہے۔

پی ایچ ڈی کے طالب علم آرون میسن نے بی بی سی کو بتایا: ’یہ انٹرنیٹ سے وہ تصاویر لے لیتی ہے جن میں لفظ شیر ہوتا ہے، لیکن اس کا مطلب ہے کہ شیروں کی سب تصاویر خواہ وہ اس نام کی بیس بال ٹیم کی ہوں، کھلونے ہوں، یا بلی یا کوئی اور پالتو جانور ہوں، وہ بھی اس میں شامل ہو جاتی ہیں۔

اس کے پیچھے جنگل کے اصلی شیروں کی بھی تصاویر، جن میں سے کئی سیاحوں نے فلکر جیسی سائٹوں پر اپ لوڈ کی ہیں، اور یہ جانوروں کو مانیٹر کرنے کے لیے ایک ایسا ذریعہ ہے جس کو ابھی استعمال نہیں کیاگیا۔

سو سب سے پہلے صارفین سے پوچھا جائے گا کہ کیا یہ اصلی شیر کی تصویر ہے۔ اس کے بعد وہ اس کے چہرے کی طرف اشارہ کریں گے اور تصویر کے متعلق مزید کچھ سادہ تفصیلات دیں گے۔

میسن نے کہا کہ لوگ تصاویر سے انٹرایکٹ کر کے مزید معلومات بھی دے سکتے ہیں۔

اس میں شامل ہو گا کہ آس پاس کا ماحول کیسا ہے، موسم کیسا ہے اور تصویر میں جانور کیا کر رہا ہے۔ مثال کے طور وہ بھاگ رہا ہے، سو رہا ہے یا کھا رہا ہے۔

فوٹو سے حاصل ہونے والا ڈیٹا اکٹھا کر کے اس سے معلومات حاصل کی جاتی ہیں جیسا کہ اس کا محل وقوع، وغیرہ۔

اس کے بعد ان نتائج کا تجزیہ کرنا ہوتا ہے جو میسن اور اس کے ساتھیوں کا کام ہے۔ وہ امید کرتے ہیں کہ ایپ یا جو بھی یہ گیم کھیلے گا وہ جنگل میں جانوروں کی تعداد، تقسیم اور عمل کے متعلق مفید معلومات مہیا کرے گا۔

یقیناً انٹرنیٹ پر وسائل کی کمی نہیں ہے اور یہ تصاویر سے بھرا پڑا ہے۔

میسن کہتے ہیں کہ ’انٹرنیٹ پر اتنی زیادہ تصاویر ہیں اور ہم نے ابھی تک انھیں پراسیس نہیں کیا ہے۔‘

تصویر کے کاپی رائٹ BBC Bangla
Image caption انٹرنیٹ پر ٹائیگروں کی بے شمار تصاویر موجود ہیں

اسی بارے میں