’بھتیجے کی فیس کے علاوہ سب خیرات کر دوں گا‘

تصویر کے کاپی رائٹ Getty
Image caption ٹم کک کی سالانہ تنخواہ تقریباً دس کروڑ ڈالر ہے

ایپل کمپنی کے سربراہ ٹِم کُک نے اعلان کیا ہے کہ مرنے سے پہلے وہ اپنی دولت کا زیادہ تر حصہ خیراتی اداروں کے نام کر دیں گے۔

خیال رہے کہ ایپل دنیا کی سب سے زیادہ منافع بخش کمپنی ہے اور ٹم کُک تقریباً 80 کروڑ ڈالر کے مالک ہیں۔

’فارچون‘ میگزین سے بات کرتے ہوئے ان کا کہنا تھا کہ وہ اپنے بھتیجے کے تعلیمی اخراجات پورے کرنے کے بعد اپنی دولت فلاحی سرگرمیوں کے لیے وقف کردیں گے۔

اس اعلان کے ساتھ ان کا نام بھی ان انتہائی امیر لوگوں کی فہرست میں شامل ہوگیا ہے جنھوں نے اپنی دولت فلاحی سرگرمیوں کے لیے وقف کرنے کا اعلان کیا ہے۔

فیس بک کے بانی مارک زکربرگ بھی اس فہرست میں شامل ہیں۔

پانچ سال قبل ارب پتی کاروباری شخصیت وارن بیفٹ اور مائیکرو سافٹ کے بانی بل گیٹس نے ’دی گوِنگ پلیج‘ یعنی فلاحی سرگرمیوں کے لیے اپنی دولت وقف کرنے کی مہم کا آغاز کیا تھا۔

اس مہم کا مقصد دنیا کی امیر ترین شخصیات کو اپنی دولت فلاحی اداروں کے لیے وقف کرنے پر قائل کرنا ہے۔ اب تک مارک زُکر برگ اور سو سے زیادہ دیگر امیر افراد نے اس عزم کا اعادہ کیا ہے۔

ٹم کُک کی سالانہ تنخواہ تقریباً دس کروڑ ڈالر ہے اور فارچون میگزین کے مطابق وہ 12 کروڑ ڈالر مالیت کے ایپل کمپنی کے حصص کے مالک ہیں اور اس کے علاوہ وہ ایسے 60 کروڑ حصص کے مالک بھی ہیں جن کو کمپنی سے باہر فروخت نہیں کیا جاسکتا۔

خیال رہے کہ امریکہ میں یونیورسٹی کی تعلیم پر اوسط خرچ تقریباً 30 ہزار ڈالر ہے، تو امید کی جاسکتی ہے کہ اپنے بھتیجے کے تعلیمی اخراجات ادا کرنے کے بعد بھی ٹم کُک کے پاس فلاحی کاموں پر خرچ کرنے کے لیے کافی رقم بچ جائے گی۔

اسی بارے میں