’انکرپٹڈ پیغامات سکیورٹی اداروں کے لیے بڑا مسئلہ‘

تصویر کے کاپی رائٹ
Image caption یورپول کے سربراہ نے انکرپٹڈ پیغامات پولیس اور خفیہ ایجنسیوں کے لیے بڑا مسئلہ بتایا ہے

یورپی پولیس کے سربراہ نے کہا ہے کہ پیچیدہ آن لائن مراسلے دہشت گردی سے نمٹنے میں سکیورٹی ایجنسیوں کے لیے سب سے بڑے مسائل ہیں۔

یوروپول کے سربراہ راب وین رائٹ نے کہا ہے کہ انٹرنیٹ کے پوشیدہ حصے اور انکرپٹڈ مراسلات یعنی اشاروں میں دیے جانے والے پیغامات مشتبہ دہشت گردوں کی نشاندہی کرنے میں مشکلات پیدا کرتے ہیں۔

انھوں نے کہا کہ ٹیکنالوجی کی کمپنیوں کو یہ خیال کرنا چاہیے کہ پیچیدہ انکرپشن کے سافٹ ویئر قانون نافذ کرنے والے اداروں پر کیا اثرات ڈالتے ہیں۔

مسٹر وین رائٹ فائیو لائیو کے انویسٹیگیٹ پروگرام سے بات کر رہے تھے۔

برطانیہ میں ٹیکنالوجی تجارت کی تنظیم ٹیک یوکے کے ایک ترجمان نے کہا: ’سکیورٹی ایجنسیوں اور ٹیکنالوجی کمپنیوں کے درمیان بہتر وسائل اور تعاون کے ساتھ واضح قانونی فریم ورک سے ہم قومی سلامتی اور معاشی سکیورٹی کی یقین دہانی کر سکتے ہیں۔‘

تصویر کے کاپی رائٹ Reuters
Image caption ایڈورڈ سنوڈن کے راز افشا کرنے کے بعد یہ سامنے آیا کہ برطانیہ کے جی سی ایچ کیو میں بھی بڑے پیمانے پر مواصلات کی نگرانی کی جاتی ہے

مسٹر وین رائٹ نے کہا کہ تازہ ترین جانچ میں یہ پایا گیا ہے کہ دہشت گردوں کے کام کرنے کے طریقوں میں علامتی مراسلات انتہائی اہمیت کے حامل ہیں۔

انھوں نے وضاحت کرتے ہوئے کہا: ’یہ پولیس اور خفیہ ایجنسیوں کے لیے دہشت گردوں کی جانب سے لاحق خطرات سے نمٹنے میں سب سے بڑے مسائل ہیں۔‘

ان کا کہنا تھا کہ ’اس نے انسداد دہشت گردی کے کام کی شکل ہی بدل کر رکھ دی ہے کیونکہ کبھی پیغامات کو حاصل کرنے کے لیے نگرانی کی اچھی صلاحیت پر بھروسہ کیا جاتا تھا لیکن اب وہاں سے کوئی اہم معلومات نہیں مل پاتی ہیں۔‘

رائٹ کا کہنا ہے کہ دہشت گرد انٹرنیٹ کے ’تاریک گوشوں‘ کا استعمال کر رہے ہیں جہاں وہ پولیس اور سکیورٹی ایجنسی کی نظروں سے دور رہ سکتے ہیں۔

تصویر کے کاپی رائٹ Getty
Image caption راب وین رائٹ نے انٹرنیٹ کے تاریک گوشوں کو انسداد دہشت گردی کی کوششوں میں رخنہ بتایا ہے

اس کے ساتھ انھوں نے ایپل جیسی ٹکنالوجی کمپنیوں کے اقدامات پر بھی تشویش کا اظہار کیا جو صارفین کو اپنے ڈیٹا سمارٹ فونز پر انکرپٹ کرنے کی سہولیات فراہم کرتے ہیں۔

انھوں نے کہا کہ انکرپٹڈ پیغامات کی بہت زیادہ اپلیکیشنز بھی تشویش کا باعث ہیں۔

انھوں نے کہا کہ اس کے ذریعے لوگ صوتی یا دیگر پیغامات بھیج سکتے ہیں جنھیں پولیس کے لیے حاصل کرنا انتہائی مشکل یا ناممکنات میں سے ہے۔

انھوں نے کہا: ’ان ٹیکنالوجی کمپنیوں نے جو حیثیت حاصل کرلی ہے ہم اس سے ناامید ہو رہے ہیں کیونکہ اس سے ہمیں ان انتہائی خطرناک افراد کے پیغامات حاصل کرنے میں دقتوں کا سامنا ہے جو انٹرنیٹ کا غلط فائدہ اٹھاتے ہیں۔

تصویر کے کاپی رائٹ BBC World Service
Image caption انکرپشن نے نگرانی کے کام کو مشکل بنا دیا ہے

’میرے خیال میں ٹیکنالوجی کمپنیاں صارفین کی رازداری کی مانگ کے تحت ایسا کر رہی ہیں۔‘

انھوں نے یہ اعتراف کیا کہ امریکی نیشنل سکیورٹی ایجنسی میں کام کرنے والے ایڈورڈ سنوڈن کے نگرانی کے بارے میں راز افشا کرنے کے بعد یہ بات سامنے آئی کہ پولیس اور سکیورٹی ایجنسیاں کس قدر مراسلات کی نگرانی کرتی ہیں۔

انھوں نے کہا کہ سکیورٹی ایجنسیوں کو ٹیکنالوجی کمپنیوں اور حکام کے ساتھ اعتماد کی بحالی کے لیے کام کرنا ہوگا۔

اسی بارے میں