سلک روڈ ویب سائٹ کے بانی البرخت کو عمر قید

تصویر کے کاپی رائٹ Reuters
Image caption البرخت نے اپنے کیے پر ندامت کا اظہار کرتے ہوئے جج سے عمرقید نہ دینے کی یہ کہتے ہوئے اپیل کی تھی کہ یہ سزائے موت سے کم نہیں ہے

غیر قانونی طور پر آن لائن منشیات فروخت کرنے والے بازار ’دا سلک روڈ‘ کے بانی روس البرخت کو عمر قید کی سزا ہوئی ہے۔

استغاثہ کا کہنا ہے کہ اس غیرقانونی کاروبار کرنے والی ویب سائٹ نے 20 کروڑ امریکی ڈالر کی منشیات گم نام طور پر فروخت کی ہے۔

انھیں منشیات کی سمگلنگ، غیرقانونی طور پر پیسے کے لین دین اور کمپیوٹر ہیک کرنے کے جرم کا مرتکب پایا گيا۔

خیال رہے کہ البرخت کو حراست میں لیے جانے کے بعد اس ویب سائٹ کو سنہ 2013 میں بند کر دیا گیا تھا۔

فروری میں نیویارک کی ایک وفاقی عدالت نے انھیں سنہ 2011 سے تقریباً تین سال تک اس ویب سائٹ کو چلانے کا مرتکب پایا۔

اس کے استعمال کرنے والے ہیروئن، کوکین اورایل ایس ڈی جیسی منشیات کو خریدنے کے لیے آن لائن کرنسی بٹ کوائن استعمال کرتے تھے۔

ایک اندازے کے مطابق اس نہ پتہ چلائے جانے والے کاروبار سے انھیں تقریبا پونے دو کروڑ امریکی ڈالر کی کمائی ہوئی۔

استغاثہ نے بتایا کہ جن چھ افراد کی موت منشیات کی زیادہ مقدار لینے سے ہوئی تھی انھوں نے وہ منشیات اسی ویب سائٹ کے ذریعے خریدی تھی۔

تصویر کے کاپی رائٹ AP
Image caption استغاثہ نے عبرت کے طور پر البرخت کے خلاف سخت سزا کا مطالبہ کیا تھا

سلک روڈ ویب سائٹ صرف ویب سائٹ کے لیے ٹور (Tor) سافٹ ویئر کا استعمال کرنے والے ماہرین کی ضرورت تھی۔

ٹور کی ایجاد امریکی حکومت نے رضاکاروں کی شناخت پوشیدہ رکھنے کے لیے کی تھی لیکن اس کا اکثر استعمال غیرقانونی لین دین میں ہورہا تھا۔

منشیات کے علاوہ سلک روڈ ہیکنگ کے سامان اور چوری کیے ہوئے پاسپورٹ بھی فراہم کراتا تھا۔

استغاثہ نے عبرت کے طور پر البرخت کے خلاف سخت سزا کا مطالبہ کیا تھا۔

امریکہ کی ضلعی جج کیتھرن فورسٹ نے البرخت سے کہا کہ وہ ’کسی دوسرے منشیات کا کاروبار کرنے والے سے مختلف نہیں ہے۔‘

انھوں آبدیدہ البرخت سے کہا کہ ’اس بات میں کوئی شبہہ نہیں ہونا چاہیے کہ لاقانونیت برداشت نہیں کی جائے گی۔‘

البرخت نے اپنے کیے پر ندامت کا اظہار کرتے ہوئے جج سے عمرقید نہ دینے کی یہ کہتے ہوئے اپیل کی تھی کہ یہ سزائے موت سے کم نہیں ہے۔

انھوں نے لکھا تھا: ’میں جانتا ہوں کہ آپ ہماری درمیانی عمر لے لیں گے لیکن برائے مہربانی مجھے میرا بڑھاپا دے دیجیے۔‘

اسی بارے میں