سولر امپلس بحرالکاہل کو عبور کرنے کے سفر پر روانہ

تصویر کے کاپی رائٹ Reuters
Image caption سولر امپلس نامی تجرباتی طیارہ مقامی وقت کے مطابق چین کے شہر نانجینگ سے نصف رات کے بعد 02:39 بجے روانہ ہوا

بغیر ایندھن کے شمشی قوت سے چلنے والا طیارہ سولر امپلس بحرالکاہل کو عبور کرنے کے لیے پرواز کر چکا ہے۔

سوئٹزلینڈ کے پائلٹ آندرے بورشبرگ اسے چین سے امریکی ریاست ہوائی لے جا رہے ہیں۔

تجرباتی طیارہ جس کے بازو کی لمبائی جمبو جیٹ سے زیادہ ہے لیکن اس کا وزن صرف ایک موٹر کار سے قدرے زیادہ ہے مقامی وقت کے مطابق چین کے شہر نانجینگ سے شب کے بعد دو بجکر 39 منٹ پر روانہ ہوا۔

اطلاعات کے مطابق مسٹر بورشبرگ کو اپنی منزل پر پہنچنے کے لیے پانچ سے چھ دن کا عرصہ لگ جائے گا اور اس دوران زیادہ تر وہ جاگتے رہیں گے اور بس تھوڑی بہت نیند لے سکیں گے۔

موناکو میں قائم سنٹرل روم سے ان کے پورے سفر کی نگرانی کی جائے گی۔

موسم کی اطلاعات دینے والے اور پرواز کی حکمت عملی بنانے والے ماہرین انھیں مسلسل تازہ معلومات فراہم کرتے رہیں گے کہ ان کے لیے کون سا راستہ بہتر ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ EPA
Image caption دونوں پائلٹ سوئٹزرلینڈ سے تعلق رکھتے ہیں بائیں برٹرینڈ ہیں تو دائیں لمبے قد کے آندرے بورشبرگ ہیں

اس پراجیکٹ کا مقصد اس طیارے کے ذریعے پوری دنیا کا چکر لگانا ہے جبکہ ابھی یہ سنگل سیٹڈ پروپیلر کے ذریعے چلنے والا طیارہ اپنے ساتویں مرحلے میں ہے۔

مکمل طور پر شمسی توانائی پر چلنے والے اس طیارے کے سفر کا آغاز مارچ میں ابوظہبی سے ہوا تھا لیکن ایک ماہ تک چین کے ساحل پر اسے موسم کے مناسب ہونے کے لیے انتظار کرنا پڑا۔

اس سولر امپلس نامی جہاز کو نہ صرف موافق ہوا کی ضرورت ہے بلکہ اسے صاف موسم کی بھی ضرورت ہوگی تاکہ اس کے پروں پر لگے 17 ہزار سیلز اپنی بہترین کارکردگی حاصل کر سکیں۔

اس کے پینل پر لگی بیٹریاں اس قدر چارج ہوں کہ رات بھر طیارے کو پرواز میں مدد کرتی رہیں۔

یہ فلائٹ دو حصوں میں مکمل ہوگی۔ پہلے یہ طیارہ ہوائی پہنچے گا جو کہ نانجینگ سے 8000 کلومیٹر کے فاصلے پر ہے۔ اس طیارے کی رفتار کم ہونے کی وجہ سے اسے بہت سی راتیں اور دن فضا میں ہی گزارنے پڑیں گے۔

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption برٹرینڈ پیکارڈ نے اس سے قبل کے مرحلے پر اسے کامیابی کے ساتھ چلایا

مسٹر بورشبرگ انتہائی تجربہ کار پائلٹ ہیں اور ایک تربیت یافتہ انجینیئر ہونے کے سبب وہ طیارے کے تمام قسم کے نظام سے پوری طرح واقف ہیں۔

اس کے باوجود وہ اس بات سے پوری طرح واقف ہیں کہ یہ مشن کس قدر مشکل ہے۔

انھوں نے ہوائی کے لیے پرواز بھرنے سے پہلے بی بی سی کو بتایا: ’یہ سفر بہت حد تک میرے خود کے بارے میں ہے یہ ایک اندرونی (روحانی) سفر ہونے جا رہا ہے۔

’یہ میری خود کی بازیافت ہوگی کہ اس پانچ چھ دنوں کے دوران جب میں ہوا میں ہوں گا تو میں کسیا محسوس کرتا ہوں اور میں کس طرح خود کو رکھتا ہوں۔‘

اور برٹرینڈ پیکارڈ جنھوں نے اس سے قبل کے مرحلے کے دوران اس سولر امپلس کو چلایا ہے انھوں نے بی بی سی کو بتایا: ’وہاں ایک وقت میں ایک ہی پائلٹ ہو سکتا ہے اس لیے پائلٹ کو خود ہی سب کچھ کرنا ہے۔ اور یہ بہت بڑا طیارہ ہے، اس کے بازو بہت لمبے ہیں، یہ پریشانیوں کے متعلق حساس ہے اور بہت سست رفتار اس کی پرواز ہے۔

’جب ہوا تیز ہو تو اس کا کنٹرول کرنا بعض اوقات مشکل ہو جاتا ہے۔ لیکن اس میں ایک خود کار پائلٹ کا نظام بھی ہے۔ طیارے پر ٹوائلٹ موجود ہے، کئی دن کے لیے کھانا ہے، پانی اور سب کچھ ہے اور ہم لوگ تربیت یافتہ بھی ہیں۔‘

تصویر کے کاپی رائٹ Getty
Image caption اس سولر امپلس نامی جہاز کو نہ صرف باد موافق کی ضرورت ہے بلکہ صاف موسم کی بھی اسے ضرورت ہوگی تاکہ اس کے پروں پر لگے 17 ہزار سیلز اپنی بہترین کارکردگی حاصل کر سکیں

اگر ابتدا میں کوئی پریشانی ہوتی ہے یا موسم خراب ہو جاتا ہے تو مسٹر بورشبرگ چین یا جاپان کے لیے واپسی کا فیصلہ کر سکتے ہیں۔

لیکن سفر میں وہ مرحلہ بھی آئے گا جب ان کے پاس یہ سہولت نہیں رہے گي اور اگر واقعی کوئی چیز بہت خراب ہو جاتی ہے تو پھر ان کی سپورٹ ٹیم کو ان کے لیے تیار رہنا ہوگا۔

پائلٹ خود سے نیچے نہیں جاسکتا ہے کیونکہ پانی پر اترتے ہی بجلی کے جھٹے لگیں گے اس کے برعکس انھیں کسی پانی والے جہاز کا انتظار کرنا ہوگا جو آئے اور انھیں اترنے کی سہولت فراہم کرے۔

اگر وہ کلائیولا ایئرپورٹ پہنچنے میں کامیاب ہو جاتے ہیں تو وہ ہوا بازی کے کئی ریکارڈز قائم کریں گے جن میں کسی سنگل سیٹ والے طیارے میں سب سے طویل دورانیے کے سفر کا ریکارڈ بھی شامل ہوگا۔

اس سولر امپلس پراجیکٹ کا مقصد کسی خاص قسم کی ہوا بازی کا مستقبل پیش کرنا نہیں بلکہ صاف ستھرے ایندھن کے استعمال کا مظاہرہ کرنا ہے۔

اسی بارے میں