’نیپال اور بھارت میں بڑا زلزلہ آنے کا خدشہ‘

Image caption نیپال میں اپریل 2015 میں آنے والے زلزلے سے نو ہزار افراد ہلاک اور ہزاروں زخمی اور بےگھر ہوئے تھے

سائنسدانوں نے خبردار کیا ہے کہ مغربی نیپال اور شمالی بھارت میں مستقبل میں ایک بڑا زلزلہ آنے کا خدشہ بڑھ رہا ہے۔

نئے اعداد و شمار سے یہ بات سامنے آئی ہے کہ رواں برس اپریل میں نیپال میں آنے والے زلزلے سے وہ تمام توانائی خارج نہیں ہوئی جو کہ زیرِ زمین جمع ہے بلکہ یہ دباؤ مغرب کی جانب منتقل ہوگیا ہے۔

یہ تحقیق جیو سائنس اور سائنس نامی رسالوں میں شائع ہوئی ہے اور اس کے مصنفین کا کہنا ہے کہ اس دریافت کے بعد اب مذکورہ علاقے کی زیادہ نگرانی کی ضرورت ہے۔

کیمبرج یونیورسٹی سے تعلق رکھنے والے پروفیسر ژاں فلیپ ایوویک نے بی بی سی سے بات کرتے ہوئے کہا: ’یہ وہ علاقہ ہے جو توجہ کا طالب ہے۔ اگر آج کوئی زلزلہ آتا ہے تو وہ صرف مغربی نیپال ہی نہیں شمالی بھارت کےگنجان آباد علاقوں کی وجہ سے تباہ کن ہو گا۔‘

نیپال میں رواں برس س7.8 شدت کے زلزلے سے نو ہزار افراد ہلاک اور ہزاروں زخمی اور بےگھر ہوئے تھے۔

یہ زلزلہ اس علاقے میں آیا جہاں انڈین ٹیکٹونک پلیٹ شمال کی جانب یوریشیئن پلیٹ میں دھنستی ہے اور اس کی وجہ سے یہاں زمین سالانہ دو سنٹی میٹر کی شرح سے حرکت کر رہی ہے۔

ان دونوں پلیٹوں کا سرحدی علاقہ آپس میں دھنسنے کی وجہ سے بند ہو چکا ہے اور یہاں جمع ہونے والی توانائی کسی بڑے زلزلے کے نتیجے میں ہی خارج ہو سکتی ہے۔

25 اپریل کو آنے والے زلزلے سے اس توانائی کا جزوی اخراج ہی ہوا ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption یہ زلزلہ اس علاقے میں آیا جہاں انڈین ٹیکٹونک پلیٹ شمال کی جانب یوریشیئن پلیٹ میں دھنستی ہے

پروفیسر ایوویک کا کہنا ہے کہ ’اگر زلزلے سے اس بند حصے میں دراڑیں پڑتیں جو ہمالیہ کے دامن تک جاتیں تو نیپال کے زلزلے کی شدت کہیں زیادہ ہوتی۔‘

تاہم ان کا کہنا ہے کہ چونکہ ایسا نہیں ہوا اس لیے کچھ دباؤ مغرب کی جانب منتقل ہو گیا ہے اور یہ علاقہ نیپال میں پوکھرا کے مغرب سے بھارت میں دہلی کے شمالی علاقوں تک پھیلا ہوا ہے۔

انھوں نے کہا کہ ’فی الوقت تو ہم مغربی نیپال کے بارے میں زیادہ فکرمند ہیں۔‘

ماہرین کے مطابق اس علاقے میں ایک بڑا زلزلہ آنے کا وقت آ چکا ہے۔ یہاں 1505 میں بڑا زلزلہ آیا تھا جس کی شدت 8.5 سے زیادہ تھی۔

محققین کا کہنا ہے کہ اب جبکہ دباؤ بھی اسی علاقے کی جانب منتقل ہوا ہے تو وہ پانچ سو برس سے جمع ہونے والی توانائی میں شامل ہو کر تباہی لا سکتا ہے۔

ان کے مطابق اگرچہ زلزلے کی آمد کا درست اندازہ لگانا ناممکن ہے لیکن اب مغربی نیپال کے مذکورہ علاقے کی مسلسل نگرانی کی جانی چاہیے۔

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption زلزلے سے اس بند حصے میں دراڑیں پڑتیں جو ہمالیہ کے دامن تک جاتیں تو نیپال کے زلزلے کی شدت کہیں زیادہ ہوتی

پروفیسر ایوویک کے مطابق ’ہم لوگوں کو خوفزدہ نہیں کرنا چاہتے لیکن ضروری ہے کہ انھیں خبر ہو کہ وہ اس علاقے میں مقیم ہیں جہاں توانائی کا بڑا ذخیرہ موجود ہے۔‘

ان کا کہنا تھا کہ ’نیپال میں بہت سے خاندان اپنے مکانات تعمیر کر رہے ہیں جن میں زلزلے کا خیال نہیں رکھا جا رہا۔ ضروری ہے کہ ایسے چھوٹے مکانات بنائے جائیں جو بڑے زلزلوں کو سہار سکیں۔‘

اس تحقیق پر تبصرہ کرتے ہوئے اوپن یونیورسٹی کے پروفیسر ڈیوڈ رودری کا کہنا ہے کہ ’نگرانی کا طریقہ اب اتنا جدید ہو چکا ہے جہاں ہم ایک بڑے زلزلے کے آنے سے چند منٹ قبل یہ جان سکتے ہیں کہ کیسے پہلے سے بند فلاٹ لائن کھل گئی۔‘

پروفیسر ایوویک کا کہنا ہے کہ ’جب میں نے نیپال میں کٹھمنڈو کے قریب 7.8 شدت کے زلزلے کا سنا تو میں تین سے چار لاکھ افراد کی ہلاکت کی خبر سننے کے لیے تیار تھا۔ تاہم اس زلزلے نے اتنی توانائی خارج نہیں کی جو کٹھمنڈو کی چھوٹی عمارتوں کے لیے تباہ کن ہوتی۔‘

اسی بارے میں