اہرامِ مصر کے رازوں کی کھوج کا آغاز

تصویر کے کاپی رائٹ D
Image caption ماہرین یہ بھی پتہ لگائیں گے کہ اہراموں کو بنایا کیسے گیا تھا

اہرامِ مصر کے راز جاننے کے لیے ایک پیمانے پر سائنسی تحقیق کا آغاز کر دیا گیا ہے۔

خلائی سروے سے اہرام مصر کی دریافت

فرانس، جاپان، کینیڈا اور مصر کے ماہرین اس تحقیق میں حصہ لے رہے ہیں۔ چار مقبروں کی جانچ پڑتال کے لیے انتہائی طاقت ور انفرا ریڈ لہروں سمیت جدید آلات کا استعمال کر رہے ہیں۔

ماہرین یہ بھی پتہ لگائیں گے کہ اہراموں کو بنایا کیسے گیا تھا۔

خیال رہے کہ مصری حکام نے حال ہی میں اسی قسم کی ٹیکنالوجی کا استعمال کر کے ملکہ نفرتیتی کی گمشدہ قبر کی کھوج لگانے کی اجازت دی تھی۔ اس قبر کے بارے میں یہ خیال کیا جاتا ہے کہ یہ طوتن خامن کے مقبرے کی دیوار کے پیچھے موجود ہے۔

Image caption زیرِ تحقیق اہرام ساڑھے چار ہزار سال قدیم ہیں

خبر رساں ادارے اے پی کے مطابق سائنس دان چاروں اہراموں کی سکینگ کا آغاز اگلے ماہ سے کریں گے جس سے پتہ چلایا جائے گا کہ وہاں اہراموں کی سطح کے نتیجے کیا ہے۔

آثارِ قدیمہ کے وزیر ممدوح المیتے کا کہنا ہے کہ یہ منصوبہ قاہرہ کے جنوب میں شروع ہو رہا ہے۔ سب سے پہلے داشور میں بینٹ نامی اہرام کی سکینگ کی جائے گی اس کے بعد اس کے قریب ہی واقع اہرام جو سرخ رنگ سے موسوم ہے کا جائزہ لیا جائے گا جبکہ بعد میں سطح مرتفع غزا میں موجود دو وسیع ترین اہراموں کیوپس اور کیفرین کی سکینگ کی جائے گی۔

یہ اہرام ساڑھے چار ہزار سال قدیم ہیں۔

اسی بارے میں