ایک بڑے سیارچے کا زمین کے قریب سے سفر

تصویر کے کاپی رائٹ Thinkstock
Image caption امریکی خلائی ادارے ناسا کا کہنا ہے کہ سیارچے سے زمین کو کوئی خطرہ نہیں ہے

سائنسدانوں کے مطابق ایک بڑا سیارچہ سنیچر کو زمین کے قریب سے گزرے گا۔

یہ سیاچہ رواں ماہ ہی ماہر فلکیات نے دریافت کیا تھا اور اسے 2015 ٹی بی 145 کا نام دیا گیا ہے۔

یہ زمین سے چار لاکھ اسی ہزار کلومیٹر کے فاصلے پر گزرے گا، یہ فاصلہ چاند کے زمین کے فاصلے سے زیادہ ہے لیکن خلائی تناسب سے اسے بہت کم فاصلہ سمجھا جاتا ہے۔

اس کا سائز فٹبال کے چار گراؤنڈوں کے برابر ہے۔

سائنسددانوں کے مطابق سنیچر کو برطانوی وقت کے مطابق شام پانچ بجے یہ زمین کے قریب ترین ہوگا۔

امریکی خلائی ادارے ناسا کا کہنا ہے کہ اس سے زمین کو کوئی خطرہ نہیں ہے۔

زمین سے کم فاصلے پر اپنا سفر طے پر کرنے بھی خلائی سائنسددانوں کو اس کی قریب سے تصاویر بنانے اور اس کا معائنہ کرنے کا نادر موقع بھی مہیا ہوگا۔

خبررساں ادارے روئٹرز نے ماہر فلکیات کے حوالے سے بتاتا کہ کسی سیارچے کے زمین سے اس قدر قریب سے گزرنے کے عمل سے اس کے بارے میں معلومات اکٹھی کرنے کا موقع برسوں بعد ملتا ہے۔

ایک اندازے کے مطابق اس کا قطر 1300 فٹ ہے اور یہ زمین کے قریب سے 35 کلومیٹر فی سکینڈ کی رفتار سے گزرے گا۔

اسی بارے میں