جیٹ طیاروں کے پرزوں کی تھری ڈی پرنٹنگ

تصویر کے کاپی رائٹ AP
Image caption ذرائع کا کہنا ہے کہ ان پرزوں کی وجہ سے فضائیہ نے اس سال تین لاکھ 21 ہزار ڈالر کی بچت کی ہے

جنوبی کوریا کی فضائیہ تھری ڈی پرنٹنگ ٹیکنالوجی سے فائدہ اٹھا کر اپنے جیٹ طیاروں کی مرمت پر آنے والی لاگت کا 90 فیصد بچا رہی ہے۔

کوریا ٹائمز کے مطابق جنوبی کوریا کی فضائیہ ایف 15 کے انجن کے لیے ہائی پریشر ٹربائنز کی پلیٹیں امریکہ سے حاصل کرنے کے بجائے تھری ڈی پرنٹرز کے ذریعے تیار کر رہی ہے۔

طیاروں کے پرزوں کے لیے تھری ڈی پرنٹنگ کا منصوبہ

جنوبی کوریا کی خبر رساں ایجنسی کے مطابق ایک پرزے کے لیے 34 ہزار ڈالر امریکہ کو دینے اور 60 روز انتظار کرنے کے بجائے فضائیہ یہی پرزہ 2550 ڈالر میں 30 روز کے اندر تیار کر لیتی ہے۔

جنوبی کوریا کے فوجی ذرائع کا کہنا ہے کہ تھری ڈی پرنٹنگ سے تیار کیے گئے پرزوں کی منظوری جنرل الیکٹرک نے دی ہے۔

جنرل الیکٹرک امریکی جیٹ طیارے ایف 15 کے انجن تیار کرتی ہے۔

ذرائع کا کہنا ہے کہ ان پرزوں کی وجہ سے فضائیہ نے اس سال تین لاکھ 21 ہزار ڈالر کی بچت کی ہے۔

واضح رہے کہ امریکی فضائیہ کے جریدے یو ایس ایئر فورس نیوز کے مطابق تھری ڈی سے تیار کیے گئے پرزے جلد ہی بشمول بی 52 جہازوں کے پرانے جہازوں میں لگائے جانے لگیں گے۔

ان جہازوں میں ان پرزوں کی ضرورت پڑتی ہے جو اب تیار نہیں کیے جاتے۔

اسی بارے میں