ماؤنٹ ایورسٹ کے قریب جھیلوں کا’خطرناک‘حد تک پھیلاؤ

ماہرین کا کہنا ہے کہ اگر ماؤنٹ ایورسٹ کے قریب ایک گلیشیئر میں نئی پیدا ہونے والی جھیلیں بھرنے کے بعد اگر بہنے لگیں گي تو نیچے بسنے والے لوگوں کی زندگی خطرے میں پڑ سکتی ہیں۔

ماہرین کے مطابق کوہ ہمالیہ کے کھومبو گلیشیئر میں پائے جانے والے تالاب عالمی حدت میں اضافے کے سبب بڑھ کر جھیل کی شکل اختیار کرتے جا رہے ہیں۔

تیزی سے پگھلتے گلیشیئرز پر تشویش کا اظہار ہوتا رہا ہے اور ماہرین کے مطابق عالمی حدت میں اضافے کے سبب ہی یہ متاثر ہو رہی ہیں۔

کوہ پیماؤں کو ہمالیہ کی چوٹی سر کرنے کے لیے کو کھومبو کی اس گلیشیئر سے گزرنا پڑتا ہے جو اب تیزی سے پگھل رہا ہے۔

سائنس دانوں کی ایک ٹیم نے اس پر تحقیق کے لیے کھومبو کا دورہ کیا اور خبردار کیا ہے کہ تیزی سے پگھلتے گلیشیئر سے بننے والی جھیلوں سے اگر پانی بہہ نکلا تو اس کے نیچے کے علاقوں میں بسنے والی آبادی کی زندگی کو خطرہ لاحق ہو سکتا ہے۔

گذشتہ اپریل میں شدید زلزلے کے بعد سے کسی بھی ٹیم نے اس علاقے کا پہلی بار دورہ کیا ہے۔

یہ ٹیم شیفیلڈ اور لیڈز یونیورسٹی کے افراد پر مشتمل تھی جس کی قیادت کرنے والے این راؤان نے کہا ’تقریباً ایک دہائی قبل تک کھومبو کی گلیشیئر پر اکا دکا تالاب پائے جاتے تھے لیکن گذشتہ پانچ برس سے یہ بڑھنے لگے اور ایک دوسرے میں ملنے لگے ہیں۔‘

Image caption کوہ پیماؤں کو ہمالیہ کی چوٹی سر کرنے کے لیے کو کھومبو کی اس گلیشیئر سے گزرنا پڑتا ہے جو اب تیزی سے پگھل رہا ہے

این راؤن نے بی بی سی کو بتایا ’خاص طور پر،گلیشیئر کے نچلی سطح کی بائیں طرف، تقریباً سات یا آٹھ تالابوں کا سلسلہ ہے۔ جن کے آپس میں ملنے سے تالابوں کا ایک نیا سلسلہ بنتا جا رہا ہے۔‘

ان کے مطابق ’فی الوقت ایسا لگتا ہے کہ گلیشیئر بظاہر بکھر رہا ہے اور اس سے اس کی سطح پر ایک بڑی اور خطرناک جھیل کے بننے کا خطرہ ہے۔‘

ڈاکٹر راؤن کی ٹیم نے سیٹلائٹ سے لی گئي کھومبو گلیشیئرز کی تقریباً 15 برس پرانی تصویروں کا مطالعہ کیا ہے اور 2009 سے اب تک اس کے تین سروے بھی کیے ہیں۔

اس ٹیم کی گذشتہ 15 برس کی تحقیق کے مطابق جو چٹانیں گلیشیئر کو ڈھانپتی ہیں ان کی سطح دو میٹر سالانہ کے حساب سے ختم ہوتی جا رہی ہے۔

پرانے ریکارڈز کے مطابق ماضی میں بھی گلیشیئرز اس طرح کی تبدیلیاں آئی ہیں اور تالاب خود بخود بنتے رہے ہیں۔ لیکن سائنسدانوں کا کہنا ہے کہ حالیہ برسوں میں عالمی حدت میں اضافے کے سبب یہ عمل بہت تیزي سے ہو رہا ہے اور یہ تشویش کا باعث ہے۔

اسی بارے میں