کینسر کی وجہ بدقسمتی نہیں بلکہ ماحولیاتی عوامل

تصویر کے کاپی رائٹ SPL
Image caption کینسر کا مرض جسم کے سٹم سیلز میں پیدا ہونے والی خرابی اور ان خراب سیلز کی بےقابو افزائش کے باعث ہوتا ہے

ایک نئی تحقیق کے مطابق کینسر کا مرض لاحق ہونے کے پیچھے بدقسمتی نہیں بلکہ ماحولیاتی عوامل کہیں زیادہ کارفرما ہیں۔

رواں سال کے اوائل میں اس دعوے کے بعد کہ دوتہائی کینسروں کی اقسام کے پیچھے بیرونی عوامل مثلاً تمباکو نوشی کے بجائے قسمت کا دخل زیادہ ہے، سائنس دانوں میں ایک بحث کا آغاز ہوگیا تھا۔

زیادہ تر سرطانوں کی وجہ ’بری قسمت‘

کینسر کے40 فیصد کیسوں کا تعلق طرزِ زندگی سے

سائنسی جریدے جرنل نیچر میں شائع ہونے والی تحقیق میں چار مختلف زاویوں کے ذریعے یہ نتیجہ اخذ کیا گیا ہے کہ دس سے 30 فیصد کینسروں کی وجہ یا تو جسم کا قدرتی نظام کا طریقہ ہے یعنی ’قسمت‘ ہے۔

ماہرین کا کہنا ہے کہ یہ تجزیہ ’بڑی حد تک قائل‘ کرنے والا ہے۔

کینسر کا مرض جسم کے سٹیم سیلز میں پیدا ہونے والی خرابی اور بےقابو تقسیم کے باعث ہوتا ہے۔

اس کے پیچھے اندرونی عوامل ہو سکتے ہیں جو جسمانی نظام اور اس کی فعالیت کا حصہ ہیں، مثلاً سٹیم سیل سے نئے سیل بننے کے عمل کے دوران تبدیلیاں عمل میں آتی ہیں جنھیں میوٹیشن یا تقلیب کہا جاتا ہے۔ اس کی دوسری وجہ بیرونی عوامل بھی ہو سکتے ہیں، جیسے تمباکو نوشی، الٹرا وائلٹ تابکاری، اور دیگر کئی ایسی وجوہات جن کی اب تک شناخت نہیں ہو سکی ہے۔

اس موضوع پر جاری بحث میں توجہ کا مرکز یہ اندرونی اور بیرونی عوامل ہیں۔

امریکی شہر نیویارک میں واقع سٹونی بُروک کینسر سینٹر کے ڈاکٹروں کی ایک ٹیم نے اس مسئلے کے حل تک پہنچنے کے لیے اسے مختلف زاویوں سے دیکھنے کی کوشش کی ہے۔ ان میں کمپیوٹر ماڈلنگ، لوگوں اور مریضوں کے بارے میں حاصل کردہ معلومات، اور جینیاتی تحقیق شامل ہیں۔

ان سائنس دانوں کا کہنا ہے کہ سامنے آنے والے نتائج کے مطابق کینسر کا مرض لاحق ہونے کے پیچھے 70 سے 90 فیصد بیرونی عوامل پائے گئے ہیں۔

سٹونی بروک کے ڈائریکٹر ڈاکٹر یوسف حنون نے بی بی سی نیوز کی ویب سائٹ کو بتایا کہ ’بیرونی عوامل بڑا کردار ادا کرتے ہیں، لوگ بدقسمتی کا بہانہ نہیں بنا سکتے۔ ایسا نہیں ہو سکتا کہ وہ تمباکو نوشی کریں اور کہیں کہ انھیں کینسر ہونے کے پیچھے بدقسمتی کا عمل دخل ہے۔‘

تصویر کے کاپی رائٹ Science Photo Library
Image caption سائنس دانوں کا کہنا ہے کہ تحقیق کے نتائج کے مطابق کینسر کا مرض لاحق ہونے کے پیچھے 70 سے 90 فیصد بیرونی عوامل پائے گئے ہیں

’یہ ایک پستول کی طرح ہے، جس میں ایک گولی ہونا اس کے اندرونی عوامل میں شامل ہے۔ اور اگر آپ رشین رولیٹ (چیمبر کے ایک خانے میں گولی ڈال کے کھیلنے والے باری باری ٹریگر دبا کر اپنی قسمت آزمانے کا) کھیل رہے ہوں تو ممکن ہے کہ چھ میں سے ایک کو کینسر ہوجائے۔ اس کو بدقسمتی کہا جا سکتا ہے۔‘

ڈائریکٹر ڈاکٹر یوسف حنون کہتے ہیں کہ ’عوام کی صحت کے نقطہ نظر سے دیکھا جائے تو ہم پستول کے چیمبر سے اتنی گولیاں نکال دینا چاہتے ہیں جتنی نکال سکتے ہیں۔‘

تاہم ایک مسئلہ یہ بھی ہے کہ تمام بیرونی عوامل کی نہ تو شناخت ہو سکی ہے اور نہ ہی تمام عوامل سے احتراز برتا جا سکتا ہے۔

برطانیہ کی اوپن یونیورسٹی میں اطلاقی اعداد و شمار (اپلائیڈ سٹیٹسٹکس) کے پروفیسر کیون میک کونوے کہتے ہیں: ’وہ اس بات پہ قائل کرنے کے لیے بڑے اچھے ثبوت پیش کرتے ہیں کہ کینسر کی کئی اقسام کے لاحق ہونے کے پیچھے بیرونی عوامل کا بڑی حد تک عمل دخل ہوتا ہے۔ جن میں عام طور پر پائے جانے والی کئی اقسام شامل ہیں۔

’اگر کوئی شخص اثرانداز ہونے والے اہم بیرونی عوامل کی بہت زیادہ زد میں آتا ہے تو یہ یقینی تو نہیں ہے کہ انھیں کینسر ہو جائے گا، تاہم پھر بھی ممکنات بہرحال موجود رہتے ہیں۔

’اس تحقیق سے یہ ضرور واضح ہو جاتا ہے کہ اس مرض کو سمجھنے اور اس کا تدارک کرنے کے لیے ہمیں قسمت اور اتفاق پر توجہ دینے کے بجائے اس سے آگے دیکھنا ہوگا۔‘

اسی بارے میں