گوگل کا جانوروں کی آوازوں والا سرچ انجن متعارف

تصویر کے کاپی رائٹ AFP

گوگل نے ایک نیا سرچ آپشن متعارف کروایا ہے جس کے ذریعے صارفین 19 جانوروں کی آوازیں سن سکیں گے۔

سرچ انجن میں ’اینیمل ساؤنڈز‘ یعنی ’جانوروں کی آوازیں‘ ٹائپ کرنے سے تقریباً 19 جانوروں کی آوازوں کے آڈیو کلپس سامنے آ جائیں گے۔

ان آڈیو کلپس میں ہاتھی، گھوڑے اور بلی کی آوازیں شامل ہیں۔ یہ آوازیں اینڈروئڈ موبائل، آئی او ایس اور ویب سائٹس پر بھی موجود ہیں۔

گوگل آپ کو یہ بھی سکھاتا ہے کہ کچھوے، اور زیبرے کی آوازیں کیسی نکالی جا سکتی ہیں۔

ان کلپس میں ببر شیر، سؤر، ہرن، الو، مرغے، بھیڑ ، شیر، فیل مرغ، اور کوہانی وہیل کی آوازیں بھی شامل ہیں۔

گوگل کی نمائندہ کمپنی ایلفابیٹ کے ماتحت کام کرنے والی دیگر کمپنیاں بھی بچوں کی مصنوعات کی مارکیٹ کو متوجہ کرنے کے لیے کوشاں ہیں۔

خاص طور پر بچوں کے لیے بنائی گئی ویڈیوز پر مبنی ایپ یو ٹیوب کڈز میں مورف، ٹیلی ٹبیز، والس اینڈ گرومیّ اور دی میجک راؤنڈ اباؤٹ جیسے پروگرام شامل ہیں۔

اسی بارے میں