یوگینڈا کے 400 مریضوں کو مفت علاج کی پیشکش

تصویر کے کاپی رائٹ UCI
Image caption یوگینڈا میں خراب ہونے والی مشین ٹھیک نہیں ہو سکتی

کینیا کے ایک ہسپتال نے یوگینڈا سے تعلق رکھنے والےسرطان کے چار سو مریضوں کے مفت علاج کی پیشکش کی ہے۔

ہپستال کی جانب سے یہ پیشکش گذشتہ ماہ یوگینڈا میں ملک کی واحد ریڈیوتھیراپی کی مشین خراب ہونے کے بعد کی گئی ہے۔

دارالحکومت کینیا میں قائم آغا خان یونیورسٹی ہسپتال میں دو ریڈیوتھیراپی یونٹس قائم ہیں اور ہسپتال کا کہنا ہے کہ بہت سے لوگوں کو طبی معائنے اور علاج کی ضرورت ہے۔

یوگینڈا کی حکومت کا کہنا ہے کہ علاج کے لیے نیروبی جانے والوں کا سفری اور دیگر اخراجات برداشت کرے گی۔

آغا خان یونیورسٹی ہسپتال کے سی ای او شان بولوک نے ایک بیان میں کہا ہے کہ ’ہم سرطان کے مریضوں کی جان بچانے کے لیے اس موقعے پر یوگینڈا کی حکومت کے ساتھ کام کرنے لیے پرعزم ہیں، ایک ایسے وقت میں جب وہ ریڈی ایشن تھیراپی کی سہولت دوبارہ حاصل کرنے کے لیے اقدامات کر رہی ہے۔‘

یوگینڈا کی حکومت کا کہنا ہے کہ انھیوں نے ریڈیو تھراپی مشین خرید لی ہے اور وہ اگلے چھ مہینوں میں کام کرنا شروع کر دے گی۔

ریڈیوتھیراپی مشین کے لیے یوگینڈا کے شہر کمپالا کے مولاگو ہسپتال میں ایک خصوصی بنکر بھی تیار کیا جا رہا ہے۔

یوگینڈا کا سرطان کا یونٹ ہر سال 40 ہزار نئے مریضوں کا معائنہ کرتا ہے جنھیں ریڈیوتھراپی کی ضرورت درپیش ہوتی ہے۔

خیال رہے کہ روانڈا، برونڈی اور جنوبی سوڈان سے بھی مریضوں کو ریڈیوتھیراپی کے لیے مولاگو ہسپتال لایا جاتا ہے۔

یوگینڈا میں خراب ہونے والی مشین ٹھیک نہیں ہو سکتی اور خدشہ ظاہر کیا جا رہا ہے کہ مریضوں کو نئی مشین کے لیے شاید ایک سال تک انتظار کرنا پڑے۔

اسی بارے میں