پاکستان کی ویسٹ انڈیز کے خلاف پہلے ون ڈے میں 111 رنز سے کامیابی

پاکستان تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images

پاکستان نے ویسٹ انڈیز کو شارجہ میں کھیلے گئے پہلے ون ڈے انٹرنیشنل میں 111 رنز سے شکست دے دی۔

٭ میچ کا تفصیلی سکور کارڈ دیکھنے کے لیے کلک کریں

٭ شارجہ میں ویسٹ انڈیز اور پاکستان مدِمقابل

تین میچوں کی سیریز کے کامیاب آغاز کا سہرا بابراعظم اور محمد نواز کے سرجاتا ہے۔

بابراعظم نے اپنے ون ڈے کریئر کی پہلی سنچری اسکور کی جبکہ لیفٹ آرم اسپنر محمد نواز نے اپنے کریئر کی بہترین بولنگ کرتے ہوئے بیالیس رنز دے کر چار وکٹیں حاصل کیں۔

پاکستان نے ٹاس ہارنے کے بعد پہلے بیٹنگ کرتے ہوئے 49 اوورز میں 9 وکٹوں پر 284 رنز بنائے۔

پاکستان کی اننگز کے دوران اسٹیڈیم کے لائٹس ٹاور کی بجلی منقطع ہونے کے سبب میچ ایک گھنٹے سے بھی زیادہ وقت دیر رکا رہا جسے بعد میں49 اوورز کا کردیا گیا جس کی وجہ سے ویسٹ انڈیز کو ڈک ورتھ لوئس قانون کے تحت اوورز میں جیتنے کا ہدف 287 رنز کا دیا گیا۔

ویسٹ انڈین ٹیم انتالیسویں اوور میں 175 رنز بناکر آؤٹ ہوگئی۔

تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images

پاکستان کی اننگز مایوس کن انداز میں شروع ہوئی۔ کپتان اظہرعلی کو شینن گیبرئیل نے میچ کی پہلی ہی گیند پر وکٹ کیپر رام دین کے ہاتھوں کیچ کرادیا۔

شرجیل خان اور بابراعظم نے دوسری وکٹ کی شراکت میں 82 رنز کا اضافہ کیا۔ یہ شراکت شرجیل خان کی وکٹ گرنے پر ختم ہوئی جنہوں نے اپنے مخصوص جارحانہ انداز میں بیٹنگ کرتے ہوئے 54رنز اسکور کیے جن میں سے بیالیس رنز باؤنڈریز کی مدد سے بنے تھے۔

شعیب ملک کے جلد آؤٹ ہونے کے بعد بابراعظم نے سرفراز احمد کے ساتھ بھی اہم شراکت قائم کی جس میں 99 رنز بنے۔

سرفراز احمد جو پانچ رنز پر سلیمان بین کی گیند پر اسٹمپڈ ہونے سے بچے تھے 35 رنز بناکر آؤٹ ہوئے ۔

محمد رضوان صرف گیارہ رنز بناکر اپنی آخری پانچ اننگز میں تیسری بار رن آؤٹ ہوئے ۔

نام میچ عمر
اظہر علی 40 31
شرجیل خان 18 27
بابر اعظم 16 21
شعیب ملک 238 34
محمد رضوان 18 24
سرفراز احمد 65 29
محمد نواز 6 22
عماد وسیم 12 27
محمد عامر 23 24
وہاب ریاض 73 31
حسن علی 6 22

بابر اعظم ایک سو اکتیس گیندوں پر تین چھکوں اور آٹھ چوکوں کی مدد سے 120 رنز بناکر اپنا پہلا ون ڈے انٹرنیشنل کھیلنے والے کریگ بریتھ ویٹ کی پہلی وکٹ بنے تاہم اس وکٹ کا کریڈٹ پولارڈ کو جاتا ہے جنہوں نے لانگ آن باؤنڈری پر گیند کو اچھالنے کے بعد بڑی خوبصورتی سے کیچ کیا ۔یہ مہارت وہ آئی پی ایل میں بھی دکھاچکے ہیں ۔

کریگ بریتھ ویٹ نے عماد وسیم اور محمد نواز کی وکٹیں بھی حاصل کیں اور اپنے دس اوورز کا اختتام چون رنز کے عوض تین وکٹوں پر کیا۔

پاکستان کی آخری تین وکٹیں صرف گیارہ گیندوں پر گریں ۔

ویسٹ انڈیزکی ہدف تک پہنچنے کی کوششوں کو وقفے وقفے سے گرنے والی وکٹوں نے نقصان پہنچایا۔ دونوں اوپنرز جانسن چارلس اور کریگ بریتھ ویٹ کو محمد عامر اور حسن علی نے وکٹ کیپر سرفراز احمد کی مدد سے پویلین کی راہ دکھائی جس کے بعد محمد نواز کی اسپن بولنگ ویسٹ انڈیز کی مایوسی میں اضافہ کرتی چلی گئی۔

تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images
Image caption شینن اظہر علی کی وکٹ لینے کے بعد

محمد نواز جو اس سے قبل کسی بھی ون ڈے میں ایک سے زیادہ وکٹ نہیں لے سکے تھے اس مرتبہ چار وکٹیں حاصل کرنے میں کامیاب ہوگئے جن میں ڈیرن براوو۔ کیرن پولارڈ ۔ رام دین اور کارلوس بریتھ ویٹ کی وکٹیں شامل تھیں ۔ یہ چاروں ایسے بیٹسمین تھے جن سے ویسٹ انڈین ٹیم ہدف تک پہنچنے کی امیدیں لگائے بیٹھی تھیں۔

مارلن سیمیولز دو چھکوں اور ایک چوکے کی مدد سے چھیالیس رنز بناکر وہاب ریاض کی گیند پر بولڈ ہوئے جس کے بعد یہ میچ محض رسمی کارروائی کی صورت اختیار کرچکا تھا۔

محمد نواز کی چار وکٹوں کے بعد دوسری سب سے اچھی کارکردگی حسن علی کی طرف سے دیکھنے میں آئی جنہوں نے اپنی عمدہ بولنگ کے سلسلے کو جاری رکھتے ہوئے صرف چودہ رنز کے عوض تین وکٹیں حاصل کیں۔

تین میچوں کی سیریز کا دوسرا میچ شارجہ میں اتوار کو کھیلا جائے گا۔

تصویر کے کاپی رائٹ AFP

متعلقہ عنوانات

اسی بارے میں