پاکستان کا ویسٹ انڈیز کے خلاف ون ڈے میں بھی کلین سوئپ

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption پاکستان کی جانب سے پہلی وکٹ فاسٹ بولر سہیل خان نے حاصل کی

پاکستان نے ویسٹ انڈیز کو تیسرے اور آخری ایک روزہ میچ میں 136 رنز سے شکست دے کر ایک روزہ میچوں کی سیریز میں بھی کلین سوئپ کر دیا ہے۔

ابو ظہبی میں کھیلے جانے والے تیسرے ایک روزہ میچ میں 309 رنز کے تعاقب میں ویسٹ انڈیز کی پوری ٹیم 44 اوروں میں 172 رنز ہی بنا سکی۔

پاکستان نے اس سے قبل تین ٹی ٹوئنٹی میچوں کی سیریز میں بھی ویسٹ انڈیز کے خلاف کلین سوئپ کیا تھا۔

٭ تازہ ترین سکور کارڈ کے لیے کلک کریں

نوجوان بلے باز بابر اعظم کو تیسرے ایک روزہ میچ میں بھی سنچری سکور کرنے پر میچ اور سیریز کا بہترین کھلاڑی قرار دیا گیا۔

ویسٹ انڈیز کے بلے باز گذشتہ دو میچوں کی طرح اس میچ میں بھی ناکام رہے۔ ویسٹ انڈیز کی جانب سے کیرگ بریتھویٹ نے سب سے زیادہ 32 رنز بنائے۔

پاکستان کی جانب سے محمد نواز نے تین اور وہاب ریاض نے دو وکٹیں حاصل کیں اور ایک روزہ میچوں میں اپنی 100 وکٹیں بھی پوری کر لیں۔

تصویر کے کاپی رائٹ AFP

اس سے قبل پاکستان نے ٹاس جیت کر پہلے بیٹنگ کرتے ہوئے ویسٹ انڈیز کو جیت کے لیے 309 رنز کا ہدف دیا۔

پاکستان کی اننگز کی خاص بات بابر اعظم کی مسلسل تیسرے میچ میں تیسری سنچری اور آؤٹ آف فارم اظہر علی کی سنچری تھی۔

پاکستان تین ایک روزہ میچوں کی سیریز کے دو میچ جیت چکا ہے۔ اگر پاکستانی ٹیم تیسرا ون ڈے بھی جیت گئی تو اس صورت میں وہ ایک روزہ میچوں کی عالمی رینکنگ میں نویں سے آٹھویں نمبر پر آ جائے گی۔

تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images

پاکستان کے آؤٹ ہونے والے کھلاڑیوں میں شرجیل ِخان 38، اظہر علی 101، بابر اعظم 117 شعیب ملک 5، محمد رضوان 4 اور عماد وسیم 4 رنز بنا کر آؤٹ ہوئے۔

سرفراز احمد پچیس گیندوں پر 24 بنا کر ناٹ آؤٹ رہے ہیں۔

پاکستان نے اس میچ میں ٹاس جیت کر پہلے بیٹنگ کا فیصلہ کیا اور پاکستان کی پہلی وکٹ 85 کے مجموعی سکور پر گری جب شرجیل خان 38 رنز بنا کر آؤٹ ہوئے۔ کپتان اظہر علی اور بابر اعظم کے مابین 147 رنز کی شراکت اس وقت ٹوٹی جب اظہر علی 101 رنز بنا کر آؤٹ ہو گئے۔

ویسٹ انڈیز نے آخری اوروں میں عمدہ بولنگ کا مظاہرہ کیا اور پاکستان کو کھل کر کھیلنے کا موقع نہیں دیا۔ آخری تیرہ اوروں میں پاکستانی بیٹسمین کوشش کے باوجود صرف دو چوکے لگانے میں کامیاب ہوئے۔

پاکستان نے اس میچ کے لیے ٹیم میں ایک تبدیلی کی ہے اور فاسٹ بولر محمد عامر کی جگہ سہیل خان کو ٹیم میں شامل کیا ہے جو اپنی والدہ کی بیماری کے سبب وطن واپس لوٹ چکے ہیں۔

پاکستان کو اس سیریز میں دو صفر کی ناقابلِ شکست برتری حاصل ہے۔ اس نے شارجہ میں کھیلے جانے والے میچ 111 اور 59 رنز سے جیتے تھے۔

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption شرجیل خان اور اظہر علی نے پاکستان کو عمدہ آغاز فراہم کیا

اگر پاکستانی ٹیم تیسرا ون ڈے بھی جیت گئی تو اس صورت میں وہ ایک روزہ میچوں کی عالمی رینکنگ میں نویں سے آٹھویں نمبر پر آ جائے گی۔

ویسٹ انڈیز کی ٹیم سنہ 2008 کے بعد ابوظہبی میں پہلی بار ون ڈے میچ کھیل رہی ہے۔

سنہ 2008 میں کھیلی گئی سیریز کے تینوں میچوں میں اسے شکست ہوئی تھی لیکن اس سیریز میں کرس گیل نے شاندار بیٹنگ کرتے ہوئے دو سنچریاں سکور کی تھیں۔

پاکستان نے ابوظہبی میں 29 ون ڈے انٹرنیشنل کھیلے ہیں جن میں اس نے 13 جیتے اور 16 میچوں میں اسے شکست کا سامنا کرنا پڑا ہے۔

پاکستانی ٹیم: اظہر علی، شرجیل خان، بابر اعظم، شعیب ملک، محمد رضوان، سرفراز احمد، عماد وسیم، محمد نواز، وہاب ریاض، سہیل خان اور حسن علی۔

ویسٹ انڈیز کی ٹیم: گریک بریتھویٹ، ایون لیوس، ڈیرین براوؤ، مارلن سیموئل، دنیش رام دین، کیرن پولارڈ، جیسن ہولڈر، سنیل نارائن، سلیمان بین، الزاری جوزف اور شینن گیبریئل۔

اسی بارے میں