’آسٹریلیا ہارا نہیں پر ہم جیتنے آئے ہیں‘

وہاب ریاض تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption وہاب ریاض آسٹریلوی بلے باز شین واٹسن کے خلاف اپنے تیز اور جارحانہ بولنگ سپیل کو دہرانے کی خواہش رکھتے ہیں

پاکستان کرکٹ ٹیم کے فاسٹ بولر وہاب ریاض کا کہنا ہے کہ پاکستان ٹیم آسٹریلیا کے خلاف ٹیسٹ سیریز جیتنے کے لیے میدان میں اترے گی جہاں وہ اب تک ایک بار بھی سیریز جیتنے میں کامیاب نہیں ہو پائی ہے۔

اپنی جارحانہ اور تیز رفتار بولنگ کے لیے مشہور وہاب ریاض کا کہنا تھا کہ ’کوچز اپنا کام کر چکے ہیں اور اب کچھ کر دکھانے کی ہماری باری ہے‘۔

برسبین کی تیز وکٹ پر پاکستانی بیٹسمینوں کا کڑا امتحان

ایک عہد ختم ہو سکتا ہے

دورۂ آسٹریلیا کے لیے پاکستانی کرکٹ ٹیم کا اعلان

واضح رہے کہ پاکستان اور آسٹریلیا کے درمیان تین ٹیسٹ میچوں پر مشتمل سیریز کا آغاز کل یعنی جمعرات کو برسبین میں کھیلے جانے والے پہلے ٹیسٹ میچ سے ہو رہا ہے۔

برسبین میں صحافیوں سے بات کرتے ہوئے وہاب ریاض کا کہنا تھا کہ برسبین کی وکٹ کافی تیز ہے اور وہ اسی وجہ سے تیز اور جارحانہ بولنگ کرنے کی کوشش کریں گے۔

ان کا کہنا تھا کہ آسٹریلین بلے بازوں کو آوٹ کرنے کا واحد طریقہ ان پر اٹیک کرنا ہے۔ وہاب نے کہا کہ وہ عالمی کپ 2015 میں آسٹریلوی بلے باز شین واٹسن کے خلاف اپنے تیز اور جارحانہ بولنگ سپیل کو دہرانے کی خواہش رکھتے ہیں۔

آئی سی سی کی جانب سے جاری ہونے والے ایک بیان کے مطابق پاکستان ٹیم آسٹریلیا کو ٹیسٹ سیریز میں شکست دے کر عالمی ٹیسٹ رینکنگ میں دوسری پوزیشن حاصل کر سکتی ہے۔

آئی سی سی کے مطابق اگر پاکستان یہ سیریز تین صفر سے جیتتا ہے تو اس کے پوائنٹس 108 ہو جائیں گے جو کہ اس وقت 102 ہیں۔ دو صفر سے سیریز جیتنے کے صورت میں یہ پوائنٹس 107 اور ایک صفر سے جیت کی صورت میں 105 ہو جائیں گے۔

تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images
Image caption زیادہ تر فاسٹ بولرز پر انحصار کرنے کی وجہ ان کے مطابق بھی برسبین کی وکٹ کا تیز ہونا ہے

دوسری جانب اگر آسٹریلیا پاکستان کو تین صفر سے شکست دینے میں کامیاب ہوتا ہے تو اس کے پوائنٹس 109 ہو جائیں گے جو کہ اس وقت 105 ہیں۔ دو صفر اور ایک صفر سے کامیابی کی صورت میں اس کے پوائنٹس بلترتیب 108 اور 107 تک پہنچ سکتے ہیں۔

خیال رہے کہ آسٹریلوی ٹیم گذشتہ 28 سالوں سے برسبین کے میدان پر کوئی میچ نہیں ہاری ہے۔

اس بارے میں وہاب ریاض نے کہا کہ ’ویسے تو یہاں کوئی ایشیئن ٹیم بھی نہیں جیت پائی ہے لیکن ریکارڈ بنتے ہی ٹوٹنے کے لیے ہیں اور ہم آسٹریلیا سیریز جیتنے کے لیے آئے ہیں۔‘

پاکستانی بولرز کے بارے میں ان کا کہنا تھا کہ زیادہ تر کرکٹ متحدہ عرب امارات میں کھیلنے کی وجہ سے ’ہماری بولنگ میں وہ تسلسل نہیں دکھائی دیتا ہے کیونکہ وہاں کی وکٹیں سلو ہوتی ہیں اور فاسٹ بولرز کے لیے مواقع کم ہوتے ہیں۔‘

دوسری جانب آسٹریلین کرکٹ ٹیم کے کپتان سٹیون سمتھ نے پاکستان کے خلاف پہلے ٹیسٹ میچ کے لیے ٹیم میں تمام فاسٹ بولرز کو شامل کرنے کا امکان ظاہر کیا ہے۔

زیادہ تر فاسٹ بولرز پر انحصار کرنے کی وجہ ان کے مطابق بھی برسبین کی وکٹ کا تیز ہونا ہے۔

اسی بارے میں