اظہر علی کپتانی سے دستبردار، سرفراز احمد ون ڈے ٹیم کے نئے کپتان مقرر

کرکٹ تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images
Image caption پاکستان کی ایک روزہ ٹیم کے نئے کپتان سرفراز احمد

پاکستان کرکٹ بورڈ نے وکٹ کیپر سرفراز احمد کو ایک روزہ طرز کی کرکٹ کے لیے پاکستان کی قومی ٹیم کا کپتان مقرر کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔

پی سی بی کے چیئرمین شہریارخان کا کہنا ہے کہ اظہر علی نے ون ڈے ٹیم کی قیادت سے دستبردار ہونے کا فیصلہ کیا ہے اور ان کی جگہ سرفراز احمد کو اب ٹی 20 کے ساتھ ساتھ ون ڈے ٹیم کا بھی کپتان مقرر کر دیا گیا ہے۔

’مصباح کی کپتانی، پاکستانی کرکٹ کے بڑوں میں اختلاف‘

’یہ ابتدا ہے لیکن سخت امتحان ابھی باقی ہیں‘

ادھر اس اعلان کے کچھ دیر بعد اظہر علی نے قومی ٹیسٹ ٹیم کی نائب کپتانی سے بھی دستبرداری کا اعلان کیا ہے۔

شہریارخان نے جمعرات کے روز دبئی میں بی بی سی اردو کے عبدالرشید شکور سے بات کرتے ہوئے کہا کہ اظہرعلی نے ان سے ملاقات کے دوران ون ڈے کی کپتانی چھوڑنے کے بارے میں مطلع کیا۔

انھوں نے بتایا کہ اظہرعلی نے بتایا کہ کپتانی کی وجہ سے بطور بلے باز ان کی کارکردگی متاثر ہورہی ہے اور وہ چاہتے ہیں کہ اپنی بیٹنگ پر مکمل توجہ دیں۔

شہریارخان نے کہا کہ انھوں نے ہیڈ کوچ مکی آرتھر کے ساتھ مشورے کے بعد سرفراز احمد کو ون ڈے کا کپتان مقرر کرنے کا فیصلہ کیا۔

تصویر کے کاپی رائٹ Twitter

اس اعلان کے کچھ گھنٹے بعد اظہرعلی نے پاکستان کی ٹیسٹ ٹیم کی نائب کپتانی سے بھی دستبردار ہونے کا اعلان کیا۔ انھوں نے یہ اعلان ٹوئٹر پر ایک پیغام میں کیا۔

عام خیال یہی ظاہر کیا جارہا تھا کہ مصباح الحق کی ریٹائرمنٹ کے بعد اظہرعلی کو ٹیسٹ ٹیم کی کپتانی سونپی جا سکتی ہے جو ویسٹ انڈیز کے خلاف سیریز سے نائب کپتان چلے آ رہے تھے تاہم بتایا جاتا ہے کہ چیف سلیکٹر انضمام الحق تینوں فارمیٹس میں ایک ہی کپتان کی تقرری کے حق میں ہیں۔

اظہر علی ورلڈ کپ کے بعد مصباح الحق کی جگہ پاکستان کے ون ڈے کپتان مقرر کیے گئے تھے لیکن ان کی قیادت میں ٹیم مطلوبہ نتائج دینے میں ناکام رہی۔

تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images
Image caption اظہر علی نے بورڈ کے چیئرمین کو اپنی کپتانی سے دستبرداری کے بارے میں آگاہ کیا

آسٹریلیا کے حالیہ دورے میں شکست کے بعد انھیں کپتانی سے ہٹائے جانے کا مطالبہ شدت اختیار کر گیا تھا۔

اظہرعلی نے 31 ون ڈے انٹرنیشنل میچوں میں پاکستانی ٹیم کی قیادت کی جن میں سے ٹیم نے 12 میچ جیتے، 18 میں اسے شکست کا سامنا کرنا پڑا جبکہ ایک میچ کا نتیجہ برآمد نہ ہوسکا۔

ان کی قیادت میں پاکستانی ٹیم نے سری لنکا، زمبابوے، آئرلینڈ اور ویسٹ انڈیز کے خلاف سیریز جیتیں جبکہ نیوزی لینڈ، انگلینڈ اور آسٹریلیا جیسی بڑی ٹیموں کے خلاف وہ فتح حاصل کرنے میں کامیاب نہ ہوسکے۔

چیئرمین پی سی بی نے یہ بھی بتایا کہ ٹیسٹ ٹیم کے کپتان مصباح الحق نے ان سے اپنے مستقبل کے بارے میں فیصلہ کرنے کے لیے کچھ وقت مانگا ہے تاہم انہیں بتایا گیا ہے کہ وہ دو، تین ہفتے میں اپنے مستقبل کے بارے میں کرکٹ بورڈ کو مطلع کر دیں۔

واضح رہے کہ جمعرات کے روز پاکستان کرکٹ بورڈ کے چیرمین شہریارخان نے مکی آرتھر، انضمام الحق اور مصباح الحق سے ملاقات کی جس میں پاکستانی کرکٹ کے مستقبل کے تناظر میں اہم بات چیت ہوئی ہے۔

متعلقہ عنوانات

اسی بارے میں