’عمر کی بات کرو گے تو تم جانتے ہی ہو ۔۔۔‘

وسیم اکرم کی ٹویٹ کا عکس تصویر کے کاپی رائٹ Twitter
Image caption ٹوئٹر پر وقار یونس کو پیغام دینے کے کچھ دیر بعد وسیم اکرم نے اپنی ٹویٹ حذف کر دی

پاکستانی کرکٹ ٹیم کے سابق کپتان اور فاسٹ بولر وسیم اکرم نے اپنے ساتھی بولر وقار یونس کے طنز کا جواب دینے کے لیے مائیکروبلاگنگ ویب سائٹ ٹوئٹر کا ہی سہارا لیا ہے۔

وقار یونس کی جانب سے بدھ کو ایک ٹویٹ میں وسیم اکرم کو بڑھتی عمر اور یادداشت کی خرابی کی طعنہ دیا گیا تھا۔

اس کے جواب میں وسیم اکرم نے ٹویٹ کی کہ ’دوست اپنے حقائق درست کرو اور اگر ہم ’عمر‘ کی بات کرنے لگیں گے تو تم جانتے ہو کہ اس کھیل میں تمہیں ہر بار ہرا سکتا ہوں۔‘

تاہم دلچسپ بات یہ ہے کہ ٹوئٹر پر یہ پیغام دینے کے کچھ دیر بعد وسیم اکرم نے یہ ٹویٹ حذف کر دی۔

وقار یونس نے بدھ کو 18 برس قبل انڈین سپنر انیل کمبلے کے نئی دہلی میں قبل ایک ٹیسٹ اننگز میں 10 وکٹوں کے حصول کے حوالے سے وسیم اکرم کے ایک انٹرویو کے تناظر میں ان کے موقف کو غلط قرار دیا تھا۔

اس انٹرویو میں وسیم نے بتایا تھا کہ کس طرح وقار یونس نے رن آؤٹ ہو کر انیل کمبلے کو 1999 میں نئی دہلی ٹیسٹ کی دوسری اننگز میں دس وکٹوں سے محروم رکھنے کی تجویز دی تھی۔

تصویر کے کاپی رائٹ Stu Forster

انیل کمبلے کے اس کارنامے کے 18 سال کی تکمیل پر انڈین بلے باز وریندر سہواگ نے اپنی ٹویٹ میں وسیم اکرم کے ایک انٹرویو کی کاپی شائع کی جس میں سابق پاکستانی کپتان نے کہا کہ: 'جب انیل کمبلے نو وکٹیں لے چکے تھے تو وقار یونس میرے ساتھ وکٹ پر موجود تھے اور انھوں نے کہا کہ رن آؤٹ ہونے کے بارے میں کیا خیال ہے تاکہ کمبلے کو دس وکٹیں نہ مل سکیں۔‘

وسیم کے مطابق اس پر انھوں نے کہا کہ ’کسی کے نصیب میں اگر لکھا ہوا ہے تو کوئی کچھ نہیں کر سکتا لیکن میں وعدہ کرتا ہوں کہ میں کمبلے کی آخری وکٹ نہیں بنوں گا۔ لیکن اس کے بعد میں ہی تھا جس نے کمبلے کو اپنی وکٹ تحفے میں دے دی۔'

اس ٹویٹ کے جواب میں وقار یونس نے اپنے ساتھی بولر کو مخاطب کرتے ہوئے ٹویٹ کی کہ: 'ایسا کچھ نہیں ہوا تھا۔ وسیم بھائی شاید آپ کی عمر بڑھ گئی ہے۔'

یاد رہے کہ فروری 1999 میں فیروز شاہ کوٹلہ گراؤنڈ میں کھیلے جانے والے ٹیسٹ میچ میں پاکستان کی ٹیم 420 رنز کی تعاقب میں 207 رنز بنا کر آؤٹ ہو گئی تھی۔ انیل کمبلے نے دوسری اننگز میں پاکستان کے تمام دس کھلاڑیوں کو آؤٹ کیا تھا اور وہ انگلینڈ کے سپنر جِم لیکر کے بعد دوسرے بولر بن گئے تھے جنھوں نے یہ کارنامہ سر انجام دیا تھا۔

تصویر کے کاپی رائٹ Twitter

اسی بارے میں