پاکستان سپر لیگ سکینڈل، ناصر جمشید بھی معطل

ناصر جمشید تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images
Image caption ناصر جمشید پاکستان کی طرف سے دو ٹیسٹ، 48 ون ڈے اور 18 انٹرنیشنل کھیل چکے ہیں

پاکستان کرکٹ بورڈ نے سابق اوپنر ناصر جمشید کو انسدادِ بدعنوانی ضابطۂ اخلاق کی خلاف ورزی پر عارضی طور پر معطل کر کے تمام فارمیٹس کی کرکٹ میں حصہ لینے سے روک دیا ہے۔

یہ خبر پاکستان سپر لیگ کے چیئرمین نجم سیٹھی نے ایک ٹویٹ کے ذریعے دی، جو بعد میں پاکستان کرکٹ بورڈ نے پریس ریلیز کی صورت میں جاری کی ہے۔

عرفان سے تحقیقات جاری، شرجیل اور خالد کو نوٹس

اس پریس ریلیز میں ناصر جمشید کو معطل کرنے کی مزید کوئی وجہ نہیں بتائی گئی ہے لیکن یہ معطلی پاکستان سپر لیگ سکینڈل کا حصہ ہے۔

خالد لطیف اور شرجیل خان مبینہ طور پر کرپشن میں ملوث ہونے پر پاکستان سپر لیگ سے باہر کر دیے گئے ہیں اور انھیں اظہار وجوہ کے نوٹس بھی جاری کردیے گئے ہیں۔ دونوں کو معطل کر کے پہلے ہی وطن واپس بھیجا جا چکا ہے۔

ان دونوں کرکٹروں کی معطلی کے بعد ذرائع ابلاغ میں ناصر جمشید کا نام گردش کر رہا تھا کہ انھی نے مبینہ طور پر شرجیل خان اور خالد لطیف کو مشکوک شخص سے ملاقات کے لیے کہا تھا۔

ناصر جمشید پاکستان کی طرف سے دو ٹیسٹ، 48 ون ڈے اور 18 ٹی 20 انٹرنیشنل کھیل چکے ہیں۔ ون ڈے انٹرنیشنل میچوں میں انھوں نے تین سنچریاں بھی بنا رکھی ہیں۔

وہ آخری بار پاکستان کی طرف سے 2015 کا ورلڈ کپ کھیلے تھے لیکن اس عالمی مقابلے میں ان کی کارکردگی انتہائی مایوس کن رہی تھی۔

متعلقہ عنوانات

اسی بارے میں