پی ایس ایل: سٹیڈیمز میں اس سال شائقین کی تعداد دگنی

تصویر کے کاپی رائٹ PSB
Image caption پشاور ظلمی اور کوئٹہ گلیڈیئٹرز کے درمیان ہونے والے پہلے ناک آؤٹ میچ کے لیے بھی شارجہ کا اسٹیڈیم فل رہا

تقریباّ ایک ماہ تک جاری رہنے والے پاکستان سپر لیگ کا دوسرا ایڈیشن اختتام پذیر ہونے کو ہے۔ سپر لیگ کے فائنل میچ کا انعقاد پانچ مارچ کو لاہور میں ہو گا۔ پاکستان سے باہر دبئی اور شارجہ میں منعقد ہونے والی پاکسان سپر لیگ کے اس دوسرے ایڈیشن میں پچھلے سال کے مقابلے میں اس سال شائقین کی سٹیڈیمز میں حاضری دگنی رہی۔

پاکستان سپر لیگ کے دونوں سیزنز کے ٹکٹ فروخت کرنے والی کمپنی کیو ٹکٹس ڈاٹ کام کے مطابق اس سال تقریباّ دو لاکھ سے زائد شائقینِ کرکٹ نے 20 سے زائد میچوں کو سٹیڈیمز میں آ کر دیکھا۔

* لاہوریوں کو پی ایس ایل فائنل کے ٹکٹوں کی تلاش

* پی ایس ایل فائنل لاہور میں، ٹکٹوں کی فروخت آج سے

کیو ٹکٹس ڈاٹ کام کے مالک تجندر سنگھ نے بی بی سی سے بات کرتے ہوئے بتایا کہ ٹکٹ خرید کر میچ دیکھنے والے لوگوں کی یہ تعداد گذشتہ سال شروع ہونے والے سپر لیگ کے ابتدائی ایڈیشن کے مقابلے میں دگنا زیادہ ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ AP
Image caption کیو ٹکٹس ڈاٹ کام پر آن لائن تقریباً 40 فیصد ٹکٹیں رکھی گئیں تھیں جو کہ تمام فروخت ہو چکی ہیں

ان کا کہنا تھا کہ سپر لیگ میں ہونے والے اب تک کے ہر مقابلے میں اوسطً دس سے بارہ ہزار تماشائی سٹیڈیم میں موجود رہے۔ تجندر سنگھ کے مطابق دبئی کے کم از کم 22 ہزار سے زیادہ گنجائش کے سٹیڈیم میں پشاور زلمی اور اسلام آباد یونائیٹڈ کے مابین ہونے والے مقابلے اور اس سے قبل منعقد ہونے والی پاکستان سپر لیگ کی افتتاحی تقریب کے دوران ہاؤس فل رہا۔

ان کے مطابق ویک اینڈ یعنی چھٹی کے دن ہونے والے تمام مقابلوں کے دوران شائقین کی سٹیڈیمز میں حاضری اوسطً 80 سے 90 فیصد تک رہی جبکہ پشاور زلمی اور کوئٹہ گلیڈی ایٹرز کے درمیان ہونے والے پہلے ناک آؤٹ میچ کے لیے بھی شارجہ کا سٹیڈیم فل رہا۔

کراچی کنگز اور اسلام آباد یونائیٹڈ کے مابین کھیلے جانے والے دوسرے پلے آف میچ میں تماشائیوں کی حاضری بھی تقریباً پاکستان سے باہر دبئی اور شارجہ میں منعقد ہونے والی سپر لیگ کے دوسرے ایڈیشن میں پچھلے سال کے مقابلے میں اس سال شائقین کی سٹیڈیمز میں حاضری 80 فیصد سے زیادہ رہی۔

پاکستان سپر لیگ کے اتوار کو لاہور میں ہونے والے فائنل میچ کی ٹکٹوں کی فروخت کے حوالے سے بات کرتے ہوئے تجندر سنگھ نے بتایا کہ فائنل کے لیے کیو ٹکٹس ڈاٹ کام پر آن لائن تقریباً 40 فیصد ٹکٹیں رکھی گئیں تھیں جو کہ تمام فروخت ہو چکی ہیں۔

تاہم کچھ آف لائن ٹکٹیں لاہور میں بینک آف پنجاب کی شاخوں پر دستیاب ہیں۔ سپر لیگ کے میچ دیکھنے کی لیے آنے والے تماشائیوں کے حوالے سے ان کا کہنا تھا کہ ان میں سے تقریباً 95 فیصد متحدہ عرب امارات میں مقیم سمندر پار پاکستانی تھے تاہم سپر لیگ میں بین الاقوامی کھلاڑیوں کی بڑی تعداد میں شمولیت کی وجہ سے دوسری قوموں کے لوگ بھی میچ دیکھنے کے لیے آتے رہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images
Image caption فائنل کے لیے قذافی سٹیڈیم میں 25 ہزار کے قریب افراد کی گنجائش ہے

ان کا کہنا تھا کہ سپر لیگ کے دوسرے ایڈیشن میں ٹی ٹونٹی کرکٹ کے بین الاقوامی ستاروں کی بڑھتی ہوئی شمولیت شائقین کے لیے کشش کا باعث بنی۔ وقت گزرنے کے ساتھ سپر لیگ میں کھیلے جانے والی کرکٹ کے معیار میں بھی بہتری آئی ہے اور یہی وجہ ہے کہ گراؤنڈز میں اس سال حاضری زیادہ دیکھنے کو ملی۔

کوئٹہ گلیڈی ایٹرز کی ٹیم اتوار کو لاہور میں کھیلے جانے والے فائنل میں حصہ لینے کے لیے لاہور پہنچ چکی ہے۔ تاہم فائنل کھیلنے والی دوسری ٹیم کا فیصلہ پشاور زلمی اور کراچی کنگز کے مابین جمعے کو دبئ میں کھیلے جانے والے پلے آف میچ کے بعد ہو گا۔

خیال رہے کہ کوئٹہ گلیڈی ایٹرز کی ٹیم کے تمام بین الاقوامی کھلاڑی لاہور آنے سے انکار چکے ہیں جبکہ پشاور زلمی اور کراچی کنگز میں سے جو بھی فائنل تک رسائی حاصل کرتا ہے کے بین الاقوامی کھلاڑیوں کے لاہور آمد کے بارے میں حتمی فیصلے تا حال سامنے نہیں آیا ہے۔

اسی بارے میں