ویسٹ انڈیز کی سیریز ٹیسٹ کریئر کی آخری سیریز ہوگی: مصباح الحق

مصباح الحق تصویر کے کاپی رائٹ AFP/Getty Images
Image caption مصباح الحق کو حال ہی میں وزڈن نے 2016 کے پانچ بہترین کرکٹرز کی فہرست میں شامل کیا ہے

پاکستان کی ٹیسٹ کرکٹ ٹیم کے کپتان مصباح الحق نے عالمی کرکٹ سے ریٹائرمنٹ کا اعلان کرتے ہوئے کہا ہے کہ پاکستان اور ویسٹ انڈیز کی سیریز ان کے کریئر کی آخری سیریز ہو گی۔

مصباح الحق نے یہ اعلان جمعرات کے روز قذافی اسٹیڈیم میں قومی کیمپ کے اختتام پر میڈیا کے سامنے کیا۔

واضح رہے کہ پاکستان کرکٹ بورڈ کے چیرمین شہریارخا ن نے بدھ کے روز میڈیا کو بتایا تھا کہ مصباح الحق ویسٹ انڈیز کے خلاف سیریز کے بعد ریٹائر ہو جائیں گے۔

نامہ نگار عبدالرشید شکور کے مطابق مصباح الحق نے کہا کہ وہ اپنی ریٹائرمنٹ کے بارے میں بالکل واضح تھے اور انھیں پتہ تھا کہ ویسٹ انڈیز کے خلاف سیریز ان کی آخری سیریز ہو گی۔

مصباح نے کہا کہ پاکستانی ٹیم ویسٹ انڈیز میں کبھی ٹیسٹ سیریز نہیں جیتی اور وہ چاہتے ہیں کہ پاکستانی ٹیم کی حالیہ ناکامیوں کا ازالہ کرتے ہوئے ویسٹ انڈیز میں اچھی کارکردگی کے ساتھ بین الاقوامی کرکٹ کو خیرباد کہیں اور اسی لیے انھوں نے سیریز کی تیاری کے طور پر قائداعظم ٹرافی گریڈ ٹو بھی کھیلی۔

مصباح الحق نے واضح کردیا کہ کرکٹ بورڈ سے ان کی کوئی ڈیل نہیں ہوئی اور نہ ہی ان پر کسی قسم کا کوئی دباؤ رہا کہ وہ ریٹائرمنٹ لے لیں۔

پاکستانی کپتان نے کہا کہ وہ کچھ عرصہ ڈومیسٹک کرکٹ کھیلتے رہیں گے۔

انھوں نے پاکستان کرکٹ بورڈ کی طرف سے ڈائریکٹر کرکٹ بنائے جانے کی پیشکش کے بارے میں کہا کہ یہ قبل ازوقت ہے فی الحال ان کی توجہ کرکٹ پر ہے۔

مصباح کا کہنا تھا کہ وہ پاکستانی کرکٹ کے بارے میں ہمیشہ اچھا سوچتے ہیں لیکن ان کا ابھی ایسا کوئی ارادہ نہیں ہے اور نہ ہی انھوں نے اس بارے میں کوئی فیصلہ کیا ہے۔

ا نہوں نے کہا کہ وہ دوسال پہلے ہی ریٹائر ہوجاتے لیکن بورڈ کے کہنے پر کھیلتے رہے کہ پاکستان کو ان کی ضرورت ہے۔

مصباح الحق نے کہا کہ کرکٹ کا ان کا سفر بہت اچھا رہا جس میں مشکلات بھی رہیں لیکن کچھ ایسی کارکردگیاں بھی تھیں جن پر انہیں بجا طور پر خوشی ہے۔

انھوں نے کہا کہ پاکستان کا ٹیسٹ کرکٹ کی عالمی رینکنگ میں نمبر ایک بننا ان کے کریئر کا سب سے یادگار لمحہ تھا۔

مصباح الحق نے کہا کہ دو ہزار پندرہ کا عالمی کپ جیتنا ان کا خواب تھا جو پورا نہ ہوسکا۔ اسی طرح انھیں پاکستان کی سرزمین پر ٹیسٹ میں کپتانی نہ کرنے کا بھی افسوس ہے لیکن ’آپ جو کچھ بھی سوچتے ہیں ضروری نہیں وہ سب پورا ہو جائے۔‘

مصباح الحق نے 72 ٹیسٹ میچوں میں پاکستان کی نمائندگی کرتے ہوئے 10 سنچریوں اور 36 نصف سنچریوں کی مدد سے 4951 رنز بنائے ہیں۔

انھوں نے پاکستان کیطرف سے سب سے زیادہ 53 ٹیسٹ میچوں میں کپتانی کی ہے جن میں سے 24 جیتے، 18 ہارے اور 11 برابر رہے۔

وہ فتوحات کے اعتبار سے پاکستان کے سب سے کامیاب کپتان ہیں۔

اسی بارے میں