بنگلہ دیش: کلب کرکٹ میں چار گیندوں پر 92 رنز اور میچ ختم

تصویر کے کاپی رائٹ FACEBOOK.COM/LALMATIACRICKETCLUB
Image caption 21 میں سے تین گیندیں نوبال جبکہ 13 وائڈ تھیں جو سب کی سب باؤنڈری تک پہنچیں اور اس طرح 80 رنز کا سکور یونہی ہوگيا

بنگلہ دیش میں ایک مقامی کرکٹ کلب کی ٹیم نے امپائر کے غلط فیصلوں پر بطور احتجاج دانستہ طور پر چار گیندوں پر 92 رنز دیے اور جان بوجھ کر میچ ہار گئی۔

منگل کے روز ہونے والے میچ میں پہلے بلے بازی کرتے ہوئے لال مٹیا کلب کی ٹیم محض 14 اوورز میں 88 رنز بنا کر آؤٹ ہوگئی تھی۔

اس کے بعد لال مٹیا کلب کی جانب سے بولر سوجان محمد نے اپنے پہلے اوور میں 21 گیندیں پھینکیں جن میں سے صرف چار گیندیں ہی درست تھیں باقی سب وائیڈ اور نو بالز تھیں۔

21 میں سے تین گیندیں نوبال جبکہ 13 وائیڈ تھیں جو سب کی سب باؤنڈری تک پہنچیں اور اس طرح 80 رنز کا سکور یونہی ہوگيا۔

باقی کی جو درست چار گیندیں تھیں اس پر مخالف ٹیم 'ایکزیوم' کے اوپنر مستفیض الرحمان نے 12 رنز بنائے اور اس طرح سے صفر اعشاریہ چار گیندوں پر 92 رنز سکور کرکے میچ دس وکٹوں سے جیت لیا۔

تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images

کلب کے سکریٹری عدنان رحمان کا کہنا تھا کہ یہ بولنگ ڈھاکہ کی سیکنڈ ڈویژن لیگ میں غلط امپائرنگ کے خلاف احتجاج کا حصہ تھی۔ ان کا کہنا تھا کہ اس کی ابتدا ٹاس سے ہی شروع ہوگئی تھی جب امپائر نے ان کے کپتان کو سکّہ دیکھنے تک نہیں دیا۔

بنگلہ دیش کرکٹ بورڈ، جو ایسے کلب کرکٹ میچوں کا اہتمام کرواتا ہے، نے خبر رساں ادارے اے ایف پی کو بتایا کہ اس معاملے کی باقاعدہ تفتیش کا آغاز کرنے سے قبل حکام سے رپورٹ طلب کی گئی ہے۔

متعلقہ عنوانات

اسی بارے میں