باسکٹ بال کے عالمی مقابلوں میں حجاب کی اجازت

قطری ٹیم تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images
Image caption سنہ 2014 میں قطری خواتین کی باسکٹ بال ٹیم نے حجاب پہن کر کھیلنے کی اجازت نہ ملنے پر ایشیائی کھیلوں میں شرکت سے انکار کیا تھا

باسکٹ بال کے کھیل کے قوانین میں تبدیلی کے بعد اب کھلاڑیوں کو عالمی مقابلوں کے دوران بھی حجاب پہننے کی اجازت دے دی گئی ہے۔

حجاب کو فیشن بنانے پر خواتین ناخوش

سابقہ قوانین کے تحت خاتون کھلاڑی سر پر حجاب نہیں پہن سکتی تھیں کیونکہ اسے کھیل کے دوران کھلاڑیوں کے لیے خطرناک قرار دیا گیا تھا۔

جمعرات کو باسکٹ بال کی عالمی فیڈریشن (فیبا) نے جن نئے قوانین کی توثیق کی ہے وہ یکم اکتوبر سے نافذ العمل ہوں گے۔

سنہ 2014 میں قطری خواتین کی باسکٹ بال ٹیم نے حجاب پہن کر کھیلنے کی اجازت نہ ملنے پر ایشیائی کھیلوں میں شرکت سے انکار کیا تھا۔

ستمبر 2014 میں فیبا نے حجاب کے حوالے سے اپنے قانون پر نظرِ ثانی کا عمل شروع کیا تھا اور پھر دو برس کے تجرباتی مرحلے کے دوران قومی سطح کے مقابلوں میں باحجاب کھلاڑیوں کو حصہ لینے کی اجازت ملی تھی۔

خیال رہے کہ رواں برس کے آغاز میں فٹبال کی عالمی تنظیم فیفا نے بھی مذہبی بنیادوں پر میچوں کے دوران کھلاڑیوں کو حجاب پہننے کی اجازت دی تھی۔

متعلقہ عنوانات