’خالد لطیف کے خلاف اتنے ثبوت ہیں کہ بچنا مشکل ہے‘

خالد لطیف تصویر کے کاپی رائٹ AFP

پاکستان کرکٹ بورڈ کے قانونی مشیر تفضل رضوی کا کہنا ہے کہ سپاٹ فکسنگ میں ملوث ہونے کے الزام میں معطل کے گئے کرکٹرز کے موقف پر جواب ٹریبونل میں جمع کروا دیا ہے۔

بدھ کو لاہور میں صحافیوں سے بات کرتے ہوئے تفضل رضوی کا کہنا تھا کہ کرکٹر خالد لطیف کے خلاف اتنے ثبوت ہیں کہ ان کا بچنا مشکل ہے۔

خیال رہے کہ معطل کیے جانے والے ان کھلاڑیوں کے خلاف الزامات کی سماعت ایک خصوصی اینٹی کرپشن ٹربیونل کر رہا ہے۔

اینٹی کرپشن کوڈ کی ’خلاف ورزی‘ پر محمد نواز کو نوٹس جاری

سپاٹ فکسنگ: ’ملوث کرکٹرز پر تاحیات پابندی لگائیں‘

سپاٹ فکسنگ: ’فیصلہ آنے تک کھیلنے کی اجازت دی جائے‘

خالد لطیف کی ٹریبونل کی کارروائی روکنے کی درخواست مسترد

تفضل رضوی کا اس بارے میں کہنا تھا کہ ’تمام کھلاڑیوں کے بارے میں فیصلہ ٹریبونل ہی کرے گا۔‘

پاکستان کرکٹ بورڈ ان دنوں سپاٹ فکسنگ سکینڈل کی تحقیقات میں مصروف ہے جس میں فاسٹ بولر محمد عرفان کو چھ ماہ کے لیے معطل کیا جا چکا ہے جبکہ دیگر چار کرکٹرز ناصر جمشید۔، شرجیل خان، خالد لطیف اور شاہ زیب حسن کے خلاف تحقیقاتی عمل جاری ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption پی سی بی نے محمد نواز کی جانب سے اینٹی کرپشن کوڈ کی ممکنہ خلاف ورزی کی تفصیلات فراہم نہیں کی ہیں

جبکہ گذشتہ دنوں پی سی بی کے اینٹی کرپشن کوڈ کی ممکنہ خلاف ورزی پر نوجوان کرکٹر محمد نواز کو بھی نوٹس جاری کیا گیا تھا۔

پیر کی شام پاکستان کرکٹ بورڈ کی جانب سے جاری ہونے والے ایک بیان کے مطابق بورڈ کے سکیورٹی اور نگرانی کے شعبے نے محمد نواز کو پی سی بی کے اینٹی کرپشن کوڈ کی شق 4.3 کے تحت نوٹس آف ڈیمانڈ بھیجا۔

دوسری جانب ناصر جمشید کو برطانیہ کی نیشنل کرائم ایجنسی نے عالمی کرکٹ میں میچ اور سپاٹ فکسنگ کے معاملے میں جاری تحقیقات کے تناظر میں بھی حراست میں لیا تھا تاہم انھیں ضمانت پر رہا کر دیا گیا تھا۔

متعلقہ عنوانات

اسی بارے میں