آئی سی سی نے معلومات پاکستان کرکٹ بورڈ کو فراہم کیں

تصویر کے کاپی رائٹ Tom Shaw
Image caption فائل فوٹو

انٹرنیشنل کرکٹ کونسل کے اینٹی کرپشن یونٹ کے چیئرمین سر رونی فلینیگن نے کہا ہے کہ پاکستان سپر لیگ سکینڈل کے سلسلے میں اہم کارروائی پاکستان کرکٹ بورڈ نے کی۔ تاہم اسے اہم نوعیت کی معلومات آئی سی سی نے سپر لیگ کے آغاز سے قبل ہی فراہم کر دی تھیں۔

سر رونی فلینیگن جمعرات کے روز لاہور میں پاکستان کرکٹ بورڈ کے اینٹی کرپشن ٹرائبیونل کے سامنے گواہ کے طور پر پیش ہوئے۔

یہ پہلا موقع ہے کہ آئی سی سی کے اینٹی کرپشن یونٹ کا کوئی سربراہ کسی ملک میں ہونے والی اس طرح کی تحقیقات میں گواہ کےطور پر پیش ہوا ہو۔

سماعت کے بعد سر رونی فلینیگن کا کہنا تھا کہ پاکستان سپر لیگ سکینڈل کے سلسلے میں اہم کارروائی پاکستان کرکٹ بورڈ کی طرف سے سامنے آئی البتہ آئی سی سی کے اینٹی کرپشن یونٹ کو برطانوی نیشنل کرائم ایجنسی کی طرف سے جو معلومات ملی تھیں وہ اس نے پاکستان کرکٹ بورڈ کو فراہم کیں۔ یہ معلومات پہلے سے پاکستان کرکٹ بورڈ کے پاس بھی موجود تھیں۔

سر رونی فلینیگن نے کہا کہ آئی سی سی کے اینٹی کرپشن یونٹ نے برطانیہ، آسٹریلیا، جنوبی افریقہ اور نیوزی لینڈ کی پولیس کے ساتھ مفاہمت کی یادداشت پر دستخط کر رکھے ہیں، جس کے تحت اِن ملکوں کے ساتھ اہم معلومات کا تبادلہ رہتا ہے۔ آئی سی سی کا اینٹی کرپشن یونٹ کوشش کر رہا ہے کہ اسی طرح کے انتظامات پاکستان کی پولیس کے ساتھ بھی کیے جا سکیں۔

سر رونی فلینیگن نے ٹرائبیونل کی کارروائی پر تبصرہ کرنے سے معذرت کر لی تاہم ان کا کہنا تھا کہ پاکستان کرکٹ بورڈ اور اس کے اینٹی کرپشن یونٹ نے کھیل کو صاف کرنے کے لیے اس اہم معاملے میں انتہائی پیشہ ورانہ انداز میں کام کیا ہے۔

پاکستان کرکٹ بورڈ کے قانونی مشیر تفضل حیدر رضوی کا کہنا ہے کہ شرجیل خان کے خلاف پاکستان کرکٹ بورڈ کے گواہوں کے بیانات پر جرح مکمل ہو چکی ہے اور آئندہ ہفتے شرجیل خان کے وکیل اپنے گواہ پیش کریں گے۔

اسی بارے میں