چیمپیئنز ٹرافی میں پاکستان کا مایوس کن ریکارڈ

تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images
Image caption چیمپیئنز ٹرافی مارچ میں پاکستان لائی گئی تھی

پاکستان کرکٹ ٹیم کا آئی سی سی چیمپیئنز ٹرافی کے میچوں میں ریکارڈ انتہائی مایوس کن رہا ہے اور یہ بین الاقوامی کرکٹ کے واحد مقابلے ہیں جن میں پاکستان کی ٹیم فائنل تک پہنچنے میں بھی کبھی کامیاب نہیں ہو سکی ہے۔

آئی سی سی ناک آؤٹ ٹورنامنٹ کے نام سے سنہ 1998 میں شروع ہونے والے مقابلوں کے اب تک سات ٹورنامنٹ ہو چکے ہیں جن میں صرف تین مرتبہ پاکستان کی ٹیم سیمی فائنل تک پہنچنے میں کامیاب رہی ہے۔

حال ہی میں کرکٹ سے ریٹائرمنٹ کا اعلان کرنے والے پاکستان ٹیم کے سابق کپتان اور ٹیسٹ کرکٹ میں 10 ہزار رنز بنانے کا اعزاز حاصل کرنے والے پہلے پاکستانی بلے باز یونس خان کے بقول اس سال پاکستان کی ٹیم سیمی فائنل تک پہنچنے کی صلاحیت رکھتی ہے لیکن اس کے بعد اگر قسمت نے ساتھ دیا تو پاکستان یہ ٹورنامنٹ جیت بھی سکتا ہے۔

آئی سی سی ناک آؤٹ ٹورنامنٹ کو سنہ 2002 میں چیمپیئنز ٹرافی کا نام دے دیا گیا اور اب اس میں دنیائے کرکٹ کی آٹھ بہترین ٹیم حصہ لیتی ہیں۔

کرکٹ کھیلنے والے آٹھ بڑے ملکوں کی ٹیمیں جون کی یکم تاریخ سے انگلینڈ اینڈ ویلز میں کھیلنے جانے والے چیمپیئنز ٹرافی 2017 کے مقابلوں میں پنجہ آزمائی کریں گی۔

تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images
Image caption پاکستان کی ٹیم سیمی فائنل تک پہنچنے کی صلاحیت رکھتی ہے: یونس خان

پاکستان کی ٹیم اپنا پہلا ہی میچ روایتی حریف اور دفاعی چیمپیئن انڈیا سے جون کی چار تاریخ کو برمنگھم کے ایجبیسٹن کے میدان پر کھیلے گی۔

اس ٹورنامنٹ میں پاکستان کی ٹیم نے اب تک کل اٹھارہ میچ کھیلے ہیں جن میں سے یہ صرف سات میچ جیتنے میں کامیاب ہو سکی اور گیارہ مرتبہ اس کو شکست کا سامنا کرنا پڑا۔ اس طرح پاکستان کے میچ جیتنے کی شرح 39 فیصد سے ذرا کم رہی۔

دوسری طرف پاکستان کے روایتی حریف انڈیا کا ریکارڈ اس ٹورنامنٹ، جس میں دنیائے کرکٹ کی بہتریں ٹیمیں حصہ لیتی ہیں، تمام ٹیموں سے بہتر ہے اور اس ٹورنامنٹ کی حد تک وہ آسٹریلیا کی ٹیم سے بھی کہیں آگے ہے۔

انڈیا کی ٹیم دو مرتبہ چیمپیئنز ٹرافی اٹھا چکی ہے۔ انڈیا نے اب تک اس ٹورنامنٹ میں کل 23 میچ کھیلے ہیں جن میں پندرہ میچوں میں وہ کامیاب اور چھ میں ناکام رہا۔ جبکہ دو میچ بلا نتیجہ ختم ہو گئے۔ یوں انڈیا کی جیت کی شرح 71 فیصد سے ذرا زیادہ ہے۔

اعداد و شمار کے مطابق اس ٹورنامنٹ کی دوسری سب سے کامیاب ٹیم آسٹریلیا ہے جس کی جیت کی شرح اس ٹورنامنٹ میں 63 فیصد ہے۔

اعداد و شمار کو اگر مزید کھنگالیں تو باقی تمام ٹیموں کے مقابلے میں پاکستان کی مایوس کن کارکردگی کا اندازہ اس بات سے لگایا جا سکتا ہے کہ کرکٹ کھیلنے والے دنیا کے باقی سات بڑِے ملکوں کی جیت کی شرح اس ٹورنامنٹ میں پچاس سے زیادہ ہے جبکہ پاکستان کی کامیابی کی شرح 39 فیصد سے بھی کم ہے۔

اس مرتبہ بھی ٹورنامنٹ کھیلنے والی آٹھ ٹیموں کی درجہ بندی میں پاکستان آخری نمبر پر ہے اور آسٹریلیا اس فہرست میں اول نمبر پر ہے۔

آئی سی سی چیمپیئنز ٹرافی 2017 میں ویسٹ انڈیز کی ٹیم شامل ہونے میں ناکام رہی ہے باوجود اس کے کہ ویسٹ انڈیز سنہ 2004 میں یہ ٹرافی جیت چکی ہے۔

اسی بارے میں