’کارڈف میں پاکستانی جیت کے لیے پرامید‘

تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images
Image caption کارڈف میں میچ دیکھنے کے لیے شائقین کی تعداد نسبتاً کم ہے

لندن سے تین گھنٹے کی مسافت پر واقع ویلز کا دارالحکومت کارڈف پیر کی صبح انگڑائی لے کر بیدار ہو ہی رہا تھا جب برطانیہ کے مختلف شہروں سے آنے والے پاکستانی شائقین کرکٹ شہر میں وارد ہونا شروع ہوئے۔

جنید خان نے پاکستان کو پہلی کامیابی دلوا دی

لندن سے کارڈف کے سفر کے دوران ایک سروس پر کافی پینے کے لیے رکے تو پاکستانی جھنڈے اٹھائے اور سبز ٹی شرٹس پہنے کئی شائقین نظر آئے۔

سب یہی امید لیے کارڈف کی طرف رواں دواں تھے کہ پاکستان کی نوجوان ٹیم یہ مرحلہ عبور کر کے سیمی فائنل تک پہنچ جائے گی اور اگر بالفرض پاکستان اگلے مرحلے کے لیے کوالیفائی کر لے تو سیمی فائنل میں اسے ایک پہاڑ عبور کرنا ہو گا اور اس ٹورنامنٹ میں سب سے اچھی کارکردگی دکھانے والی آئین مورگن کی ٹیم کو ہرانا ہو گا۔

اور اگر ایسا بھی ہو گیا تو یہ بھی عین ممکن ہے کہ فائنل میں ایک مرتبہ پھر برصغیر کے روایتی حریف آمنے سامنے ہوں۔

کارڈف کے میدان میں شائقین کی تعداد توقعات سے کافی کم تھی۔ برمنگھم کے مقابلے پاکستانی شائقین اتنے نہ تھے اور سری لنکا کے شائقین تو آٹے میں نمک کے برابر تھے۔

لیکن جتنے بھی پاکستان شائقین وہاں موجود تھے، ان میں سب سے نمایاں پاکستانی ٹیم کی اب تک چھ سو میچوں میں حوصلہ افزائی کرنے والے چاچا کرکٹ تھے۔ طویل قامت چاچا کرکٹ سبز رنگ کا لمبا سا کرتا پہنے دور سے نظر آ گئے۔

چاچا کرکٹ کو باقی تمام پاکستانی شائقین کی طرح پوری امید تھی کہ پاکستان اس میچ میں کامیابی حاصل کرے گا۔

میچ شروع ہوا تو مطلع ابر آلود تھا اور کالے بادلوں نے میدان کو گھیرا ہوا تھا۔ میدان میں بہت سی کرسیاں خالی نظر آ رہی تھیں۔

Image caption سری لنکا کے شائقین کی تعداد آٹے میں نمک کے برابر تھی

اس میچ میں فہیم اشرف بھی گیارہ کھلاڑیوں میں شامل ہیں اور اپنا پہلا میچ کھیل رہے ہیں۔ فہیم اشرف نے بنگلہ دیش کے خلاف وارم اپ میچ میں پاکستان کی جیت میں کلیدی کردار ادا کیا تھا اور 64 رنز سکور کر کے پاکستان کو کامیابی سے ہمکنار کیا تھا۔

یاد رہے کہ آئی سی سی چیمپیئنز ٹرافی میں گروپ مقابلوں کا یہ آخری میچ ہے جس کا فاتح سیمی فائنل میں انگلینڈ کی ٹیم کا سامنا کرے گا۔

ایک روزہ میچوں اور اب تک ہونے والی چیمپئنز ٹرافی کے میچوں پر نظر ڈالیں تو پاکستان کا سری لنکا پر پلڑا بھاری نظر آتا ہے۔ پاکستان اور سری لنکا 174 میچ کھیل چکے ہیں جس میں 84 پاکستان نے اور اٹھاون سری لنکا نے جیتے ہیں جبکہ ایک میچ کسی نتیجے کے بغیر ختم ہو گیا تھا۔

متعلقہ عنوانات

اسی بارے میں