محمد عامر کی جتنی تعریف کی جائے کم ہے: سرفراز احمد

تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images

پاکستان کی ایک روزہ کرکٹ ٹیم کے کپتان سرفراز احمد کا سری لنکا کے خلاف میچ میں مڈل آرڈر بیٹنگ کی ناکامی پر کہنا ہے کہ یہ ٹیم کے لیے باعث تشویش ہے اور انگلینڈ کے خلاف میچ سے قبل اس مشکل کو دور کرنے پر غور کیا جائے گا۔

سرفراز احمد نے یہ بات چیمیپئنز ٹرافی کے اہم اور فیصلہ کن میچ میں سری لنکا کے خلاف کامیابی حاصل کرنے کے بعد صحافیوں سے بات کرتے ہوئے کہی۔

آئی سی سی چیمپیئنز ٹرافی کے سیمی فائنل میں پہنچنے پر سرفراز احمد کا کہنا تھا کہ یہ کامیابی ان کی ٹیم اور ملک کے لیے بڑی اہم ہے کیونکہ اس ٹورنامنٹ سے قبل کوئی یہ نہیں کہہ سکتا تھا کہ پاکستان کی ٹیم اس مرحلے تک پہنچنے میں کامیاب ہو گی۔

سرفراد احمد جنھوں نے اپنی زندگی کی ایک یاد گار اننگز کھیلی نے محمد عامر کی بھی خوب تعریف کی۔ محمد عامر کے ساتھ آٹھویں وکٹ کی شراکت میں انھوں نے اہم 75 رنز سکور کیے جن کی وجہ سے ٹیم کو کامیابی نصیب ہوئی۔

اس ٹورنامنٹ کے ابتدائی میچ میں انڈیا کے ہاتھو ںشکست کے بعد تنقید کا سامنا کرنے والے سرفراز احمد سری لنکا کے خلاف میچ میں جیت کے بعد بہت مطمئن اور خوش نظر آ رہے تھے۔

ان کا کہنا تھا کہ محمد عامر کی جتنی تعریف کی جائے کم ہے۔ محمد عامر نے اس میچ میں پہلے کپتان میتھوز کی وکٹ ایک اہم مرحلے پر حاصل کی اور جب وہ بیٹنگ کرنے آئے تو کسی دباؤ میں نظر نہیں آئے اور ایک تجربہ کار بلے باز کی طرح سکور کرتے رہے۔

انگلینڈ کے خلاف بولنگ اٹیک کے بارے میں ایک سوال کا جواب دیتے ہوئے انھوں نے کہا کہ میچ سے قبل پچ کا معائنہ کرنے کے بعد ہی فیصلہ کیا جائے گا کہ آیا سپنر شاداب کو کھلایا جائے یا پھر فہیم اشرف کو ہی ٹیم میں برقرار رکھا جائے۔

سرفراز احمد سے پہلے سری لنکن ٹیم کے کپتان اینجلو میتھیوز نے پریس کانفرنس میں اپنی ٹیم کی ناکامی کی وجہ خراب فیلڈنگ اور کیچ چھوڑنے کو قرار دیا۔

لستھ ملنگا کے مستقبل کے بارے میں پوچھے گئے ایک سوال پر انھوں نے کہا کہ وہ ابھی کچھ نہیں کہہ سکتے کہ ملنگا آئندہ بین الاقوامی کرکٹ کھیلیں گے یا نہیں۔

انھوں نے پاکستان کے خلاف میچ میں ملنگا کی کارکردگی کو بہت سراہا اور کہا کہ انھوں نے پوری جان لگا کر بولنگ کی اور اگر کیچ نہ چھوڑے جاتے تو میچ کا نتیجہ مختلف ہوتا۔