پاکستان اور انگلینڈ 25 سال بعد ناک آؤٹ میچ میں مدِمقابل

کرکٹ تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images
Image caption 25 سال قبل پاکستان نے میلبرن کے میدان پر انگلینڈ کو ورلڈ کپ کے فائنل میں شکست دی تھی

انگلینڈ اور ویلز میں کھیلی جا رہی آئی سی سی چیمپیئنز ٹرافی کے پہلے سیمی فائنل میں بدھ کو میزبان انگلینڈ کا سامنا پاکستان سے ہوگا۔

اس مقابلے میں ایک طرف انگلینڈ کی ٹیم ہے جو چیمپیئنز ٹرافی میں اب تک ناقابل تسخیر رہی ہے، وہیں دوسری طرف پاکستان کی ٹیم ہے جس کے بارے میں کوئی پیش گوئی کرنا تقریباً ناممکن ہے۔

چیمپیئنز ٹرافی: ’سرفراز احمد میں کتنا حوصلہ باقی ہے؟‘

کیا پاکستانی بولنگ انگلینڈ کو روک سکے گی؟

انگلینڈ کو ٹورنامنٹ کے آغاز سے فیورٹ سمجھا جا رہا ہے اور ان کی ٹیم اپنے تینوں گروپ میچ جیت کر سیمی فائنل میں پہنچی ہے جہاں انھوں نے بنگلہ دیش اور نیوزی لینڈ کو مؤثر انداز میں شکست دینے کے بعد آسٹریلیا کو بھی باآسانی شکست دی۔

دوسری جانب پاکستان کی ٹیم انڈیا کے ہاتھوں ہارنے کے بعد سری لنکا کے خلاف بھی ایک وقت ہار کے دہانے پر نظر آ رہی تھی، لیکن پاکستانی کپتان سرفراز احمد نے بہترین اور ذمہ دارانہ اننگز کھیل کر ٹیم کو سیمی فائنل میں پہنچایا.

25 سال پہلے کا فائنل

اس میچ میں دونوں ٹیموں کے درمیان ایک زبردست مقابلے کی توقع کی جا رہی ہے اور خاص بات یہ ہے کہ پاکستان اور انگلینڈ کی ٹیمیں 25 سال بعد کسی ٹورنامنٹ کے ناک آؤٹ راؤنڈ میں ایک دوسرے کا سامنا کر رہی ہیں۔

اس سے پہلے آخری دفعہ 1992 کے ورلڈ کپ کے فائنل میں ان دونوں ٹیموں کی کسی ناک آؤٹ میچ میں ملاقات ہوئی تھی۔ 25 مارچ، 1992 کو میلبرن کے تاریخی میدان میں میں کھیلے گئے مقابلے میں پاکستان نے پہلے بیٹنگ کرتے ہوئے 50 اوور میں چھ وکٹوں کے نقصان پر 249 رنز بنائے تھے۔ کپتان عمران خان نے سب سے زیادہ 72 رنز بنائے تھے۔

اس کے جواب میں انگلینڈ کی ٹیم 50 ویں اوور میں 227 رنز پر سمٹ گئی تھی۔ نیل فیئر برادر نے 62 رن ضرور بنائے، لیکن وسیم اکرم کی تباہ کن بولنگ کے سامنے انگلینڈ کی ٹیم بے بس ہو گئی۔

تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images
Image caption اس فائنل میں وسیم اکرم کو مین آف دی میچ کا اعزاز ملا تھا

پاکستان نے 22 رنز کی فتح کے ساتھ ورلڈ کپ جیت کر اپنے کپتان عمران خان کو شاندار الوداعی تحفہ دیا۔

دلچسپ بات یہ ہے کہ اسی ٹورنامنٹ کےگروپ مقابلے میں انگلینڈ نے پاکستان کی اننگز صرف 74 رنز پر سمیٹ دی تھی لیکن بارش کی وجہ سے اس مقابلے کو منسوخ کرنا پڑا تھا۔ اگر وہ میچ مکمل ہو جاتا تو شاید پاکستان اس ٹورنامنٹ سے باہر ہوجاتا۔

کس کا دعویٰ کتنا مضبوط

جہاں جو روٹ، آئین مورگن اور ایلکس ہیلز جیسے بلے باز زوردار فارم میں نظر آ رہے ہیں وہیں بولنگ میں لیئم پلنکٹ اور عادل راشد کی کارکردگی شاندار رہی ہے۔ بین سٹوکس جیسے آل راؤنڈر بھی ٹیم میں موجود ہیں۔ خراب فارم کی بنا پر ٹیم مینجمنٹ سیمی فائنل مقابلے کے لیے اوپننگ بیٹسمین جیسن روئے کی جگہ جونی بیئرسٹو کو آزما سکتی ہے۔

انگلش ٹیم کو اپنے ہوم گراؤنڈ پر کھیلنے کا فائدہ بھی مل سکتا ہے۔ اس کے علاوہ گذشتہ 14 ون ڈے مقابلوں میں 12 بار انگلینڈ نے پاکستان کو شکست دی ہے لیکن آخری بار ان دونوں ٹیموں کا مقابلہ گذشتہ سال کارڈف کے میدان میں ہی ہوا تھا جہاں پاکستان نے انگلینڈ کو ہرا دیا تھا۔

تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images
Image caption ان دونوں ٹیموں نے آخری دفعہ پچھلے سال کارڈف کے میدان میں میچ کھیلا تھا جسے پاکستان نے جیت لیا تھا

باوجود ان سب کے انگلینڈ کی ٹیم پاکستان کے چیلنج کو نظرانداز نہیں کر سکتی۔

کپتان سرفراز احمد نے سری لنکا کے خلاف جس طرح ٹیم کو جیت دلائی، اس ٹیم کا حوصلہ بھی بڑھا ہوا ہے. ٹیم میں بابر اعظم، محمد عامر اور حسن علی جیسے نیچرل ٹیلنٹ والے کھلاڑی موجود ہیں۔

اس پس منظر میں سب سے بڑا سوال یہی ہے کہ کیا انگلینڈ 25 سال پہلے ملنے والی شکست کا بدلہ اپنے گھر کے میدان پر لے سکے گا؟

متعلقہ عنوانات

اسی بارے میں