’پاکستان کے جیت کے قریب پہنچنے پر حیرت نہیں‘

تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images

جنوبی افریقہ کی کپتان ڈینی وین نائیکرک کا کہنا ہے کہ پاکستان ٹیم کے جیت کے اتنے قریب آنے پر انھیں حیرت نہیں ہے کیونکہ ان کا جذبہ ہمیشہ بلند ہوتا ہے۔

میچ کے بعد بی بی سی سے خصوصی بات چیت میں ان کا کہنا تھا کہ 'پاکستانی ٹیم ہمیشہ لڑنے کے جذبے سے سرشار میدان میں اترتی ہے کیونکہ پاکستانیوں کو ہمیشہ خود پر یقین ہوتا ہے اور ہونا بھی چاہیے۔'

’ویلکم بیک پاکستان کرکٹ‘

100 وکٹیں، چھٹی بہترین آل راؤنّڈر

انھوں نے کہا کہ 'مجھے بالکل حیرت نہیں ہوئی جب میچ کے دوران ایک وقت ایسا آیا جب ہم ہارنے والے تھے لیکن پاکستانی ٹیم کو کریڈیٹ جاتا ہے کیونکہ انھوں نے بہت اچھی بولنگ کی۔'

لیسٹر میں ہونے والے خواتین کے ورلڈ کپ کے اپنے پہلے میچ کے دوران پاکستانی ٹیم کو تین وکٹوں سے شکست تو ہوئی مگر جنوبی افریقہ کا 46 رنز پر چھ وکٹوں کے نقصان کے بعد پاکستان کے جیتنے کی امید ہو چلی تھی۔

جنوبی افریقہ کی تین کھلاڑیوں کے رن آوٹ ہونے کے بعد میچ دیکھنے آئے جنوبی افریقہ کے حمایتی مایوس ہو چکے تھے لیکن پاکستان کی جانب سے کرائے جانے والے آخری اوور میں جنوبی افریقہ نے فتح اپنے نام کر لی۔

جنوبی افریقہ کی رن آوٹ ہونے والی تین کھلاڑیوں میں ٹیم کی کپتان بھی شامل تھیں۔

تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images

اس سلسلے میں جبونی افریقہ کی کپتان کا کہنا تھا کہ 'اتنی کھلاڑیوں کا رن آؤٹ ہونے کا کوئی جواز نہیں بنتا لیکن کرکٹ میں ایسا ہوتا ہے۔ یہی ایک پہلو ہے جس پر ہمیں کام کرنا ہوگا تاکہ آئندە کے میچز میں یہی غلطی دہرائی نہ جائے۔'

انھوں نے مزید کہا کہ 'یہ صحیح ہے کہ پاکستان نے اتنا بڑا ٹارگٹ نہیں دیا اور شاید ہم نے ضرورت سے زیادە دباؤ لیا لیکن خیر پاکستانی ٹیم کو اچھا کھیلنے کا کریڈٹ جاتا ہے۔'

ثنا میر نے آخری اوور خود کیوں نہیں کروایا؟ اس کا جواب دیتے ہوئے ثنا میر نے بی بی سی کو بتایا 'میرا ایک ہی اوور رہتا تھا اور وە میں نے 50ویں اوور کے لیے بچا کر رکھا تھا کیونکہ دس سے زیادە اوور تو میں نہیں کرا سکتی تھی۔‘

ان کا کہنا تھا کہ ’اسماویہ اور کائنات پر کام کر رہے ہیں تاکہ آئندہ کے میچز میں بہتر کارگردگی دکھائی جا سکے۔'

پاکستانی ٹیم کی سعدیہ یوسف نے سب سے زیادە وکٹیں لیں۔

انھوں نے 30 رنز دے کے دو وکٹیں حاصل کیں جبکہ ثنا میر اور بسمہ معروف نے ایک ایک وکٹ حاصل کی۔ ناہیدہ خان نے پاکستان کے لیے 101 بالز پر 79 بنائے جو کہ ون ڈے ورلڈ کپ میں پاکستان کے لیے کسی بھی کھلاڑی کی جانب سے سب سے زیادە بنائے جانے والے رنز ہیں۔

تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images

ثنا میر کا کہنا ہے کہ 'ہم نے اچھی کارگردگی کے ساتھ ٹورنامنٹ کا آغاز کیا ہے۔ جنوبی افریقہ ایک منجھی ہوئی ٹیم ہے اور ہم نے ان کے لیے جیت کو مشکل بنایا تو امید ہے کہ اگلے میچز میں ہم بہتر کارگردگی دکھانے کی کوشش کریں گے چاہے وە فیلڈنگ، بولنگ یا بیٹنگ ہو۔'

انھوں نے کہا کہ اگر جنوبی افریقہ کو 200 رنز سے زیادہ کا ٹارگٹ دیا جاتا تو ان کی فتح مشکل ہو سکتی تھی۔

پاکستان اپنا اگلا میچ 27 جون کو انگلینڈ کے خلاف لیسٹر میں کھیلے گا جبکہ جنوبی افریقہ کی ٹیم 28 جون کو نیوزی لینڈ کے مدمقابل ہو گی۔

اسی بارے میں