200 سے زائد آسٹریلوی کرکٹرز ’بے روزگار‘ ہوگئے

کرکٹ تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images
Image caption آسٹریلین کرکٹر ایسوسی ایشن نے تنخواہوں کے حوالے سے نئی تجویز کو بھی مسترد کر دیا ہے

کرکٹ آسٹریلیا اور ملک کے کرکٹ کھلاڑیوں کے درمیان نئے معاہدے کو تسلیم کیے جانے کی ڈیڈلائن گزر جانے کے بعد دو سو سے زائد سینیئر کرکٹرز عملی طور پر بے روزگار ہوگئے ہیں۔

کرکٹ آسٹریلیا اور ملک کے بڑے کھلاڑیوں کے درمیان حالیہ معاہدہ 30 جون کو ختم گیا جبکہ کوئی نیا معاہدہ طے نہیں پاسکا۔

گورننگ باڈی کی جانب سے اس حوالے سے رکھی گئی رقوم کو نچلی سطح پر دوبارہ منتقل کیا جائے گا۔

کھلاڑیوں کی یونین اتوار کو اجلاس منعقد کرے گی جس میں 'اے' کے دورہ جنوبی افریقہ کے ممکنہ بائیکاٹ پر بات چیت کی جائے گی۔

اس دورے کا آغاز 12 جولائی سے ہوگا جس میں دو چار روزہ میچ کھیلے جائیں گے۔

کھلاڑیوں اور کرکٹ آسٹریلیا کے درمیان اس تنازعے سے 200 سے زائد کرکٹرز متاثر ہوں گے، مارچ میں کرکٹ آسٹریلیا نے تبدیل شدہ یاداشت کے تحت مرد اور خواتین کرکٹرز کی تنخواہوں میں اضافے کی تجویز تو دی تھی لیکن اس کا مطلب یہ تھا کہ تنظیم کی آمدن میں سے کھلاڑیوں کو حصہ نہیں ملے گا۔

مارچ میں کرکٹ آسٹریلیا نے تبدیل شدہ یاداشت کے تحت مرد اور خواتین کرکٹرز کی تنخواہوں میں اضافے کی تجویز تو دی تھی لیکن اس کا مطلب یہ تھا کہ تنظیم کی آمدن میں سے کھلاڑیوں کو حصہ نہیں ملے گا۔

تاہم آسٹریلین کرکٹر ایسوسی ایشن نے اسے اور تنخواہوں کے حوالے سے نئی تجویز کو بھی مسترد کر دیا۔

اگر کوئی معاہدہ طے نہیں پایا تو آئندہ موسم سرما میں انگلینڈ کے خلاف ایشز سیریز بھی خطرے میں پر سکتی ہے اور اگست میں بنگلہ دیش میں دو ٹیسٹ میچوں کی سیریز بھی کھیلنی ہے۔

اسی بارے میں