پاکستان کو انڈیا کے ہاتھوں 95 رنز سے شکست

پاکستان ویمن ٹیم تصویر کے کاپی رائٹ Reuters
Image caption پاکستان کی وکٹیں لگاتار گرتی رہیں

انگلینڈ میں جاری آئی سی سی ویمن کرکٹ ورلڈ کپ کے میچ میں انڈیا نے پاکستان کو 95 رنز سے شکست دے دی ہے۔

انڈیا نے ٹاس جیت کر پہلے بیٹنگ کرتے ہوئے پاکستان کو جیت کے لیے 170 رنز کا ہدف دیا تھا۔ پاکستان کی ٹیم اننگز کے آغاز سے دباؤ میں آ گئی اور اوپر تلے وکٹیں گرنا شروع ہو گئیں۔

تفصیلی سکور کارڈ کے لیے کلک کریں

اننگز کے دوسرے ہی اوور میں عائشہ ظفر صرف 1 رن بنا کر ایل بی ڈبلیو ہوگئیں۔ اکستان کی اگلی وکٹ بھی 1 رنز کے مجموعی سکور پر گر جاتی اگر ناہیدہ خان کے گلی میں مشکل کیچ ڈراپ نہ ہوجاتا۔ مگر ناہیدہ خان تو بچ گئیں مگر جویریا خان پانچویں اوور میں گوسوامی کا نشانہ بنیں جب سکور صرف 8 رنز تھا۔

نئی بلے باز سدرا نواز زیادہ دیر نہ ٹک سکیں اور اگلے ہی اوور میں اکتا بشت کا دوسرا نشانہ بنیں اور ایل ڈبلیو ہو کر پویلین واپس لوٹ گئیں۔ اکتا بشت کو اپنی اگلی وکٹ لینے کے لیے زیادہ انتطار نہیں کرنا پڑا۔ آٹھویں اوور کی پہلی ہی گیند پر پاکستانی بلے باز ارم جاوید اکتا کا اگلا شکار بنیں۔ یہ اکتا بشت کی تیسری وکٹ تھی اور تینوں بار اُنہوں نے پاکستانی بلے بازوں کو ایل بی ڈبلیو کر کے آؤٹ کیا۔ دس اوور مکمل ہونے پر پاکستان کی ٹیم صرف بیس رنز بنا سکی اور اس کے چار کھلاڑی آؤٹ ہو چکے تھے۔

چودھویں اوور میں پہلے نین عابدی ڈی بی شرما کی بولنگ پر آؤٹ ہوئیں اور پھر اگلے ہی اوور میں نئی بلے باز اسماویہ اقبال ایم جوشی کی بولنگ پر وکٹ کیپر ایس ورما کے ہاتھوں کیچ آؤٹ ہوئیں۔ پچھلے پانچ اووروں میں پاکستان کی ٹیم صرف 5 رنم بنا سکی جبکہ اس کے دو کھلاڑی آؤٹ ہوئے۔ کریز پر کپتان ثنا میر ناہیدہ خان کے ہمراہ بیٹنگ کر رہی تھیں اور ان ہی سے پاکستان کی امیدیں بندھیں تھیں۔ پہلے 10 اووروں میں 20 رنز بنے جبکہ اگلے دس اووروں میں صرف 16 رنز ہی بن پائے۔

انڈیا کی ٹیم مسلسل دباؤ ڈال رہی تھی اور آخرکار انہیں کامیابی حاصل ہوئی۔ چوبیسویں اوور میں ہرمن پریت کور نے ناہیدہ خان کو آؤٹ کیا اور پاکستان کو 44 رنز پر ساتویں وکٹ کا نقصان اُٹھانا پڑا۔ نشرا سندھو بھی زیادہ دیر انڈین بولنگ کا مقابلہ نہ کرسکیں اور اکتا بشت کی بولنگ پر ایم جوشی کے ہاتھوں کیچ آؤٹ ہوئیں۔

اگلی ہی گیند پر ڈیانا بیگ بولڈ ہوگئیں۔ انتیسویں اوور کے اختتام پر پاکستان نے 9 وکٹوں کے نقصان پر 51 رنز بنائے۔ ثنا میر بیٹنگ کا آخری ستون تھیں مگر وہ بھی میم کا سکور 74 تک لے جا سکیں اور جوشی کی گیند پر بولڈ ہوگئیں۔

انڈیا نے ٹاس جیت کر پہلے بیٹنگ کرتے ہوئے مقررہ پچاس ا ووروں میں 9 وکٹوں کے نقصان پر 169 رنز بنائے۔ پاکستان کی جانب سے نشرا سندھو نے عمدہ بولنگ کرتے ہوئے چار وکٹیں حاصل کیں۔

انڈیا نے ٹاس جیت کر پہلے بیٹنگ کا فیصلہ کیا اور اسے ابتدائی اووروں میں پہلا نقصان اٹھانا پڑا۔ انڈیا کی پہلی وکٹ سات کے مجموعی سکور پر گر گئی جب ڈیانا بیگ نے اوپنر منداھنہ کو دو کے انفرادی سکور پر ایل بی ڈبلیو آؤٹ کر دیا۔

تصویر کے کاپی رائٹ Reuters

پہلی وکٹ کے گر جانے کے بعد انڈیا نے محتاط انداز میں بیٹنگ شروع کی۔ انڈیا کی دوسرے وکٹ مجموعی سکور 74 کے سکور پر گری جب نشرا سندھو نے ہونم روت کو اپنی ہی گیند پر کیچ آؤٹ کر دیا۔ ہونم روت نے ٹیم کی طرف سے سب سے زیادہ سکور کیا اور 47 رنم بنائے۔ اس کے بعد وقفے وقفے سے انڈیا کی وکٹیں گرتی رہیں۔

نشرا سندھو نے اس کے بعد ایم راج کو ستائیسویں اوور کی پہلی ہی گیند پر ایل بی ڈبلیو کیا۔ گو کہ امپائر نے اپیل پر فیصلہ انڈیا کے حق میں دیا مگر رویو پر راج کو آؤٹ قرار دیا گیا۔ نئی بلے باز حرمن پریت کور تھیں جنہوں نے اگلی گیند پر ایک رن بنایا اور سٹرائیک ڈی بی شرما کو ملی جو 28 کے سکور پر کھیل رہی تھیں۔ ڈی بی شرما نشرا سندھو کا اگلا شکار بنیں۔ انہیں وکٹ کیپر نے کیچ کیا اور ایک بار پھر فیصلہ رویو کے ذریعے ہوا۔ اس اوور کے اختتام پر نشرا تین وکٹیں حاصل کر چکی تھیں۔

انڈیا کی ٹیم پریشر میں نظر آئی اور رنز بنانا مشکل ہوگئے۔ نئی بلے باز ہرمن پریت کور کا سکور ابھی 10 رنز ہی تھا کہ پینتیسویں اوور میں وہ سعدیہ یوسف کی گیند پر ثنا میر کے ہاتھوں ایک زبردست کیچ کے ذریعے آؤٹ ہوئیں۔ سعدیہ یوسف کو ایک اور وکٹ لینے میں کچھ زیادہ دیر نہ لگی اور اُنہوں نے اپنے اگلی ہی اوور کی آخری گیند پر ایم آر میشرم کو بولڈ کر دیا۔

پاکستان کی ٹیم کو اگلے وکٹ کے لیے تھوڑا انتطار کرنا پڑا۔ سینتالیسویں اوور میں جب بولنگ ایک بار پھر نشرا سندھو کو ملی تو انہوں نے جے گوسوامی کو بولڈ کردیا۔

اگلے ہی اوور میں اسماویہ اقبال کی بولنگ پر ایس ورما ڈیانا بیگ کے ہاتھوں کیچ آؤٹ ہوئیں اور انڈیا کی آٹھویں وکٹ گری۔ انتالیسویں اوور میں نئی بلے باز ای بشت ایک ہی رن بنا کر رن آؤٹ ہوگئیں۔ پاکستان کی بولنگ عمدہ رہی لیکن انڈیا کی ٹیم نے آخری اوورروں میں تیزی سے رنز بنا کر مقررہ 50 اووروں میں 169 رنز سکور کیے۔

’پاکستان کے جیت کے قریب پہنچنے پر حیرت نہیں‘

تصویر کے کاپی رائٹ Reuters

متعلقہ عنوانات

اسی بارے میں