وراٹ کوہلی سچن تندولکر کا ایک اور ریکارڈ توڑنے میں کامیاب

کوہلی تصویر کے کاپی رائٹ AFP

جمیکا کے سبائنا پارک سٹیڈیم میں وراٹ کوہلی نے ایک بار پھر یہ ثابت کیا کہ انھیں کیوں موجودہ دور کا عظیم بلے باز سمجھا جاتا ہے۔

ویسٹ انڈیز کی ٹیم نے انڈیا کو 206 رنز کا ہدف دیا تھا جس کے تعاقب میں انڈیا کی پہلا وکٹ محض پانچ رن پر گر گئی تھی۔ شکھر دھون کے پویلین لوٹنے کے بعد وراٹ کوہلی کریز پر اترے۔

اس موقع پر اگر کوہلی بھی آؤٹ ہو جاتے تو ٹیم انڈیا دباؤ میں آ جاتی۔ انٹيگا ون ڈے میں انڈيا کی ٹیم 190 رنز کا ہدف بھی حاصل نہیں کر پائی تھی۔ کوہلی کو اس کا اندازہ تھا کہ یہ سیریز کا فیصلہ کن ون ڈے بھی ہے۔

کوہلی نے 115 گیندوں پر 12 چوکے اور دو چھکوں کی مدد سے ناقابل شکست 111 رنز بنا کر میچ کے ساتھ ساتھ انڈیا کو سیریز میں بھی کامیابی دلوا دی۔

تقریباً چھ ماہ اور 11 ون ڈے میچوں کی اننگز کے بعد کوہلی کی یہ سنچری ان کے کیریئر کی 28 ویں سنچری تھی۔

ون ڈے میں سنچری بنانے کے لحاظ سے وہ مجموعی طور پر تیسرے نمبر پر ہیں۔ سچن تندولکر کی 49 اور رکی پونٹنگ کی 30 سنچریوں کے بعد ان کا نمبر آتا ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images

کوہلی نے اپنی 28 سنچریوں کے لیے 181 اننگز کھیلی ہیں جبکہ سنتھ جے سوریا کو اتنی ہی سنچریوں کے لیے 433 اننگز کھیلنی پڑی تھیں۔

وراٹ کوہلی کی نظر یقیناً سچن تندولکر کی ون ڈے سنچریوں کے ریکارڈ پر ہے جسے عالمی کرکٹ میں ان کے علاوہ چیلنج کرتا کوئی دوسرا بلے باز ابھی نظر نہیں آ رہا ہے۔

اپنی 28ویں سنچری کی بدولت کوہلی نے سچن تندولکر کے ایک اور ریکارڈ کو ضرور پیچھے چھوڑ دیا ہے۔

یہ کسی ون ڈے میچ میں ہدف کا تعاقب کرتے ہوئے کوہلی کی 18 ویں سنچری تھی اور وہ اس لحاظ سے سب سے زیادہ سنچریاں بنانے والے بلے باز بن گئے ہیں۔ ان سے پہلے ہدف کے تعاقب میں سب سے زیادہ سنچریاں سکور کرنے کا ریکارڈ سچن تندولکر کے نام تھا، جنھوں نے 17 بار یہ کارنامہ انجام دیا تھا۔

اہم بات یہ بھی ہے کہ وراٹ کوہلی نے ہدف کا تعاقب کرتے ہوئے جو 18 سنچریاں بنائی ہیں، ان میں سے 16 میچوں میں انڈیا کی ٹیم جیت حاصل کرنے میں کامیاب رہی ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images

کوہلی کے اس نئے ریکارڈ کے باوجود دوسری اننگز میں ہدف کا تعاقب کرتے ہوئے سب سے زیادہ رنز بنانے کے معاملے میں تندولکر اب بھی پہلے نمبر پر ہیں۔ ون ڈے میچوں میں دوسری اننگز میں بیٹنگ کرتے ہوئے تندولکر کے نام 232 اننگز میں 8720 رنز ہیں۔

اس زمرے میں وراٹ کوہلی محض 102 اننگز میں 5169 رنز کے ساتھ فی الحال ساتویں نمبر پر ہیں۔

اس فہرست میں سنتھ جے سوریا 210 اننگز میں 5742 رنز کے ساتھ دوسرے نمبر پر ہیں لیکن وراٹ کوہلی اس سے اب بہت دور نہیں ہیں۔

وراٹ کوہلی اگر اسی رفتار سے سنچری بناتے رہے تو آنے والے دنوں میں وہ ون ڈے کرکٹ میں سنچریوں کے تمام ریکارڈ اپنے نام کر سکتے ہیں۔

متعلقہ عنوانات

اسی بارے میں