وینس ولیمز ومبلڈن کے فائنل میں

وینس ویلیم تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images

امریکی کی ٹینس سٹار وینس ولیمز نے ومبلڈن اوپن کے سیمی فائنل میں برطانیہ کی جوہانا کونٹا کو سٹریٹ سیٹس میں شکست دے کر فائنل کے لیے کوالیفائی کر لیا ہے۔

اس شکست کے ساتھ ہی جوہانا کونٹا کا ومبلڈن کا پہلا فائنل کھیلنے کا خواب ٹوٹ گیا۔

37 سالہ وینس ولیم نے شاندار کھیل پیش کرتے ہوئے جوہانا کونٹا کو 6-4 اور 6-2 کے واضح فرق سے شکست دی۔

٭ دفاعی چیمپیئن اینڈی مرے ومبلڈن اوپن سے باہر ہو گئے

٭ سپین کے رافیل ندال ومبلڈن اوپن سے باہر ہو گئے

٭ 39 سال بعد برطانوی خاتون ومبلڈن کے سیمی فائنل میں

اس جیت کے ساتھ ہی وینس ولیمز نے سنہ 1994 کے بعد ومبلڈن فائنل کھیلنے والی سب سے عمر رسیدہ کھلاڑی کا اعزاز حاصل کر لیا۔

اس سے پہلے مارٹینا نیوراٹیلووا نے سنہ 1994 میں یہ اعزاز اپنے نام کیا تھا جب وہ فائنل میں رنر اپ رہی تھیں۔

میچ ہارنے کے بعد جوہانا کا کہنا تھا: 'میرے پاس چند مواقع آئے تاہم وینس نے انھیں مجھ سے دور کر دیا جس کا تمام کریڈٹ انھیں جاتا ہے۔‘

خیال رہے کہ برطانیہ کی جوہانا کونٹا نے بدھ کو رومانیہ کی سیمونا ہیلپ کو شکست دے کر 1978 کے بعد ومبلڈن اوپن کے سیمی فائنل میں پہنچنے والی پہلی برطانوی خاتون کھلاڑی کا اعزاز حاصل کیا تھا۔

برطانیہ کی ورجینیا ویڈ نے 40 برس پہلے سنہ 1977 میں ومبلڈن کے فائنل میں کامیابی حاصل کی تھی۔

امریکی ٹینس سٹار کا ومبلڈن کے مقابلوں میں یہ نوواں فائنل ہے۔ انھوں نے اپنا پہلا ومبلڈن ٹائٹل سنہ 2000 میں جیتا تھا۔

انھوں نے بی بی سی سپورٹس کو بتایا: 'میں نے یہاں بہت سے فائنلز کھیلے ہیں، ایک اور فائنل جیتنا زبردست ہو گا۔'

متعلقہ عنوانات

اسی بارے میں