آسٹریلوی کرکٹ ٹیم کے ہیڈ کوچ مستعفی

تصویر کے کاپی رائٹ BBC World Service
Image caption ٹم نیلسن سنہ دو ہزار سات کے کرکٹ کے عالمی کپ کے بعد آسٹریلیا کے کوچ بنے تھے

آسٹریلیا کی کرکٹ ٹیم کے ہیڈ کوچ ٹم نیلسن نے چار سال بعد اپنے عہدے سے استعفیٰ دے دیا ہے۔

تینتالیس سالہ نیلسن نے کرکٹ آسٹریلیا کو بتایا کہ وہ کسی اور جگہ کرکٹ کی نئی ذمہ داریاں سنھبالنا چاہتے ہیں۔

نیلسن کے اس فیصلے کے بعد آسٹریلوی کرکٹ بورڈ اگلے ماہ جنوبی افریقہ کے خلاف ہونے والی سیریز کے لیے ایک عبوری کوچ تعینات کرے گا۔

ٹم نیلسن نے اپنے استعفیٰ میں کہا ’میں آنے والے نئے چیلنجوں کے لیے تیار ہوں۔ اس بات میں کوئی شک نہیں کہ میں نے آسٹریلیا کی کرکٹ ٹیم کے ہیڈ کوچ کی حیثیت سے بہت تجربہ حاصل کیا جو مجھے مستقبل کی ذمہ داریوں سے عہدہ برآ ہونے میں مدد دے گا۔‘

آسٹریلین کرکٹ بورڈ کے چیف ایگزیٹو آفیسر جیمز سدر لینڈ نے نیلسن کی خدمات کو خراجِ تحسین پیش کرتے ہوئے کہا کہ انہوں نے آسٹریلیا کی قومی ٹیم کے لیے چیلنجنگ رول ادا کیا۔

سدر لینڈ کا کہنا تھا ’ٹم نیلسن آسٹریلیا کے اس وقت کوچ رہے جب آسٹریلیا کے بہترین کھلاڑیوں نے کرکٹ کو خیر آباد کہہ دیا اور اس دوران ٹیم میں آنے والے نئے کھلاڑیوں کی ٹم نیلسن نے بہت حوصلہ افزائی کی۔‘

واضح رہے کہ ٹم نیلسن سنہ دو ہزار سات کے کرکٹ کے عالمی کپ کے بعد جان بکانن کی جگہ آسٹریلیا کے کوچ بنے تھے۔

ٹم نیلسن کے دور میں آسٹریلیا کی ٹیم نے پندرہ ٹیسٹ میچ سیریز کھلیں جس میں سے انہوں نے نو میں کامیابی حاصل کی۔

آسٹریلیا کے سابق کوچ کے دور میں آسٹریلیا کو انگلینڈ کے خلاف دو ایشز سیریز میں شکست کے علاوہ رواں برس منعقد ہونے والے کرکٹ کے عالمی کپ سے بھی ہاتھ دھونا پڑے۔

سری لنکا کے خلاف تین ٹسیٹ میچوں پر مشتمل سیریز ایک صفر سے جیتنے سے پہلے آسٹریلیا کی ٹیم مارچ سنہ دو ہزار دس کے بعد سے کوئی ٹیسٹ سیریز نہیں جیت سکی لیکن اس کے باوجود ایک روزہ میچوں کی درجہ بندی میں وہ اب بھی پہلے نمبر پر ہے۔

اسی بارے میں